fbpx

وزیراعظم شہباز شریف کا ہنگامی بنیادوں پر زرعی اصلاحات کے نفاذ کا فیصلہ

وزیراعظم شہبازشریف نے ہنگامی بنیادوں پرزرعی اصلاحات کےنفاذ کا فیصلہ کرلیا۔

وزیرِ اعظم شہباز شریف کی زیرِ صدارت ملک میں زرعی شعبے کی اصلاحات پر اعلی سطح کا اجلاس ہوا، جس میں وفاقی وزراء طارق بشیر چیمہ، احسن اقبال، مریم اورنگزیب، مفتاح اسماعیل، معاونینِ خصوصی احد چیمہ، محمد جہانزیب خان متعلقہ اعلی حکام نے شرکت کی۔ جب کہ تمام صوبوں کے سیکٹری زراعت نے وڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے۔
اجلاس میں وزیرِ اعظم کو گندم، کپاس، خوردنی تیل، کھاد، زرعی تحقیق، زراعت میں پانی کے استعمال، موسمیاتی تبدیلی اور زرعی مشینری کے حوالے سے قائم سب کمیٹیوں نے تفصیلی بریفنگ دی اور اپنی سفارشات پیش کیں۔

اجلاس میں آئندہ گندم، کپاس اور خودنی تیل کی پیداوار کیلئے اقدامات، کسانوں کو کم لاگت پر جدید مشینری، یوریا اور ڈی اے پی پر سبسڈی، متوقع پیداوار اور در آمد، معیاری بیج، پانی کے بہتر استعمال اور کسانوں کو بروقت قرضوں کی فراہمی کے حوالے سے سفارشات پیش کی گئیں۔
وزیراعظم کو زرعی اصلاحات کیلئے مختلف شعبوں کی 8 سب کمیٹیوں کی سفارشات پیش کی گئیں۔ جن میں قلیل، وسط اور طویل مدتی جامع منصوبہ بندی شامل ہیں۔

وزیراعظم شہبازشریف نے ملک میں ہنگامی بنیادوں پرزرعی اصلاحات کے نفاذ کا فیصلہ کرتے ہوئے تمام متعلقہ وزارتوں کو ان سفارشات میں سے آئندہ فصل کیلئے ہنگامی بنیادوں پر زرعی اصلاحاتی پلان مرتب کرنے کی ہدایت جاری کردی، اور دو دن میں اس پلان کو پیش کرنے کا حکم دے دیا۔
وزیرِ اعظم نے کہا کہ حکومت ترجیحی بنیادوں پر کسانوں کو ضروری سہولیات فراہم کرےگی، اور کسانوں کو کم لاگت پر بروقت معیاری بیج، کھاد کی فراہمی یقینی بنائےگی، جب کہ کسانوں کوغیرمعیاری بیج اورپیسٹی سائیڈ بیچنےوالی کمپنیزکا سد باب کیا جائے گا۔

شہبازشریف کا کہنا تھا کہ مقامی سطح پر معیاری بیج کی پیداوارکیلئے زرعی تحقیقی اداروں کو سہولیات فراہم کی جائیں گی، کسانوں کو جدید مشینری اور قرضوں میں سہولت کی فراہمی یقینی بنائیں گے۔
وزیرِ اعظم نے ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا کہ یقینی بنایا جائے کہ زرعی اِن پُٹس پر حکومت کی طرف سے سبسڈی کسانوں تک پہنچے، زرعی منصوبہ بندی کےدوران موسمیاتی تبدیلی اثرات کوبھی ملحوظِ خاطر رکھا جائے، اور کسانوں کو زراعت کےعالمی سطح پررائج جدید طریقہ کارسےروشناس کروانےکیلئےآگاہی مہم چلائی جائے۔

شہبازشریف نے مزید کہا کہ حکومت گندم و زرعی اجناس کو ذخیرہ کرنے کیلئے سائیلوز (silos) کی تعمیر پر کام کرے گی، گندم کی فصل کی بوائی سے پہلے پیداوار میں فی ایکڑ یقینی اضافے کے اقدامات اٹھائے جائیں۔