fbpx

سابق امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ سروے انتخابات میں اپنے حریفوں کوشکست دے گئے

واشنگٹن:سابق امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ سروے انتخابات میں اپنے حریفوں کوشکست دے گئے،امریکی ذرائع ابلاغ نے دعویٰ کیا ہے کہ امریکہ میں 2024 میں ہونے والے صدارتی انتخابات کے سلسلے میں پری پول سروے شروع ہوچکے ہیں ،جن کے مطابق سابق امریکی صدراپنے دیگرحریفوں جوبائیڈن اور برنی سینڈرز کو بہت پیچھے چھوڑ رہے ہیں‌جو اس بات کی علامت ہے کہ سابق صدر ایک قابل عمل سیاسی قوت ثابت ہوں گے اگر وہ وائٹ ہاؤس کے لیے ایک اور انتخاب لڑیں گے۔

ایمرسن کالج کے ایک نئے سروے میں ٹرمپ کو صدر جو بائیڈن سے 3 فیصد پوائنٹس آگے چلتے ہوئے پایا گیا، 46 فیصد نے سابق صدر کو اور 43 فیصد نے موجودہ صدر کو منتخب کیا۔ دی ہل نے رپورٹ کیا کہ ایک اور متوقع امیدوار، سین برنی سینڈرز کے خلاف ایک فرضی میچ اپ میں، ٹرمپ 45 فیصد سے 40 فیصد تک آگے ہیں۔

ٹرمپ نے ابھی تک یہ نہیں کہا ہے کہ آیا وہ 2024 کا صدارتی انتخاب لڑیں گےیا نہیں ، لیکن ان کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ اس سال کے اوائل میں ہی ایک اعلان پر غور کر رہے ہیں۔

اس دوران بائیڈن نے کہا ہے کہ وہ وائٹ ہاؤس میں دوسری مدت کے لیے انتخاب لڑنے کا ارادہ رکھتے ہیں، اس کے باوجود حالیہ پولنگ سے ظاہر ہوتا ہے کہ زیادہ تر ڈیموکریٹس نہیں چاہتے کہ وہ دوبارہ انتخاب لڑیں۔

سینڈرز، جنہوں نے 2016 اور 2020 میں ڈیموکریٹک نامزدگی کی ناکام کوشش کی تھی، کو 2024 کے ممکنہ دعویدار کے طور پر بھی دیکھا جاتا ہے، حالانکہ انہوں نے کہا ہے کہ اگر صدر نے دوسری مدت کے لیے انتخاب لڑنے کا فیصلہ کیا تو وہ بائیڈن کو نامزدگی کے لیے چیلنج نہیں کریں گے۔

بائیڈن کے لئے رکاوٹوں میں سے ایک ان کی منظوری میں امریکیوں کی بڑی تعداد کا مسترد کرنا بھی شامل ہے۔ جمعہ کو جاری ہونے والے ایمرسن کالج کے سروے میں پتا چلا ہے کہ صرف 40 فیصد ووٹرز نے اس کی ملازمت کی کارکردگی کو منظور کیا، جب کہ 53 فیصد نے اسے ناپسند کیا۔

یہ بھی کہا جارہا ہے کہ اگر ٹرمپ بالآخر دوبارہ وائٹ ہاؤس کے لیے انتخاب لڑنے کا فیصلہ کرتے ہیں، تو انھیں ریپبلکن نامزدگی کے لیے ایک چیلنج کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ جب کہ اسے فی الحال 2024 کےصدارتی انتخاب کے لیے پسندیدہ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے،