وزیر اعظم عمران خان سال 2020 کے مسلم مین آف دی ایئرقرار

وزیر اعظم عمران خان سال 2020 کے مسلم مین آف دی ایئرقرار

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق اردن کے رائل اسلامک اسٹریٹجک اسٹڈیز سنٹر نے پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کو سال 2020 کا مسلم مین آف دی ایئر قرار دیا ہے۔جبکہ حریت رہنما میرواعظ عمر فاروق مسلسل چھٹی بار دنیا کے پانچ سو بااثر مسلم شخصیات کی فہرست میں شامل ہوئے ہیں۔

میرواعظ عمر فاروق مقبوضہ کشمیر کے بڑے عالم دین اور سیاسی رہنما ہیں۔ ساوتھ ایشین وائر کے مطابق سائنسدانوں ، فنکاروں اور بادشاہوں تک دنیا کے سب سے زیادہ بااثر500 مسلمانوں کی فہرست رواں ہفتے جاری کی گئی جس میں دنیا کے بااثر مسلمانوں کو 13کیٹیگریز میں رکھا گیا ہے ۔ فہرست میں وزیر اعظم پاکستان عمران خان کو "سال کی بہترین شخصیت ” قراردیا گیا ہے جبکہ امریکی کانگریس کی خاتون راشدہ طالب کو "سال کی بہترین خاتون ” قراردیاگیا ہے۔

حریت رہنما میر واعظ عمر فاروق اس وقت سرینگر میں اپنی رہائش گاہ میں نظر بند ہیں۔ساوتھ ایشین وائر کے مطابق پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر 10.5 ملین فالوورز کے ساتھ ٹویٹر پر دنیا کے چھٹے مقبول رہنما بن گئے ہیں۔

 

رائل اسلامی اسٹریٹجک اسٹڈیز سنٹر اردن میں رائل البیت انسٹی ٹیوٹ برائے اسلامی فکر کے ساتھ ایک خودمختار تحقیقی ادارہ ہے۔ قاہرہ میں امریکی یونیورسٹی میں صحافت کے پروفیسر پروفیسر ایس عبد اللہ شلیفر نے کہاکہ اگر ‘دی مسلم’ 500 ” 1992میں شائع ہوتی اورمیں اس وقت چیف ایڈیٹر ہوتا تو میں نے عمران خان کو کرکٹ میں عمدہ کارکردگی کی وجہ سے مین آف ائر نامزد کیا ہوتا ۔ آر آئی ایس ایس سی نے ایک امریکی کانگریس کی خاتون راشدہ طلاب کو بھی ، سال 2020 کی مسلم وومن قرار دیا ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ برس 2019 کی مسلم دنیاکی بااثر شخصیات کی درجہ بندی میں وزیراعظم عمران خان سمیت پاکستان کی 19 مسلم شخصیات شامل کی گئی تھیں، یہ درجہ بندی کے حوالے سے اردن کے شاہی تعلیمی مرکز کی جانب سے 500 با اثر مسلم شخصیات کی فہرست شائع کی گئی ہے جس میں مولاناتقی عثمانی، مولانا طارق جمیل اور جاوید احمد غامدی بھی شامل تھے،

اردن کے شاہی تعلیمی مرکز کی جانب سے 500 با اثر مسلم شخصیات کی فہرست کے مطابق مولانا تقی عثمانی چھٹے نمبر پر وزیراعظم عمران خان اس فہرست میں 29ویں اور مولانا طارق جمیل 40 ویں نمبر پر ہیں۔ ڈاکٹر قدیر خان، ڈاکٹر عرفان صدیقی اور ڈاکٹر عطا الرحمان کے نام بھی فہرست میں درج ہیں۔

اردن کے شاہی تعلیمی مرکز کی جانب سے 500 با اثر مسلم شخصیات کی فہرست میں‌وزیراعظم عمران خان کی ذاتی زندگی اور شوکت خانم ہسپتال کا بھی ذکر کیا گیا وزیراعظم کی 22 سالہ سیاسی جدوجہد، کرکٹ میں کامیابیوں، شوکت خانم اسپتال اور تعلیم کے لیے بنائی گئی یونیورسٹی کا کا ذکر بھی کیا گیا ہے۔عمران خان کے متعلق درج ہے کہ انہوں نے اقتدار میں آنے کے بعد بدعنوانی کے خلاف سخت اقدامات کیے اور حکومتی اخراجات میں کفایت شعاری اپنائی۔

اردن کے اس تحقیقی ادارے کی طرف سے جاری رپورٹ کے مطابق دیگر پاکستانیوں میں سابق وزیراعظم نوازشریف، جمیعت علمائے اسلام(ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان، ڈاکٹر فرحت ہاشمی، ڈاکٹرطاہر القادری، جماعت اسلامی کے سربراہ سراج الحق، جاوید غامدی، بلقیس ایدھی، منیبہ مزاری، شرمین عبید چنائی، ملالہ یوسفزئی، مولانا الیاس عطاری اورعابدہ پروین شامل ہیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.