اردو اور سندھی کی معروف ادیبہ، شاعرہ،پروفیسر سیما عباسی صاحبہ

انہوں نے سیدہ نور الہدی شاہ سے متاثر ہو کر 1985 میں طالبعلمی کے دوران شاعری اور نثر لکھنے کی ابتدا کی
0
170
poet

سیما عباسي

پیدائش : 18 اپریل 1973
۔۔۔۔۔۔۔

تعارف و گفتگو : آغا نیاز مگسی

اردو اور سندھی کی معروف ادیبہ، شاعرہ ، افسانہ نویس و سفر نامہ نگار پروفیسر سیما عباسی صاحبہ 18 اپریل 1973 لاڑکانہ سندھ میں پیدا ہوئیں ان کا اصل نام سیما پروین والد صاحب کا نام لعل محمد عباسی والدہ محترمہ کا نام انورخاتون اور شوہر کا نام فدا حسین عباسی ہے۔ سیما عباسی کی مادری زبان سندھی ہے انہوں نے پرائمری اور میٹرک و ایف اے کی تعلیم لاڑکانہ میں حاصل کی جبکہ ایم اے 1995 میں شاہ عبدالطیف یونیورسٹی خیرپور سے کیا ۔ 2005 میں پبلک سروس کمیشن کا امتحان پاس کر کے گورنمنٹ گرلز ڈگری کالج لاڑکانہ میں لیکچرار مقرر ہوئیں ، انہوں نے سیدہ نور الہدی شاہ سے متاثر ہو کر 1985 میں طالبعلمی کے دوران شاعری اور نثر لکھنے کی ابتدا کی ۔ سیما صاحبہ اس وقت کراچی میں رہائش پذیر ہیں محترمہ بینظیر بھٹو گورنمٹ گرلز کالج اعظم بستی کراچی میں پروفیسر کی حیثیت سے اپنے فرائض سر انجام دے رہی ہیں ماشاء اللہ وہ 3 بچوں 2 بیٹوں اور ایک بیٹی کی ماں ہیں ، سیما صاحبہ کی شاعری اور تحریریں روزنامہ کاوش ، ہزار داستان ڈائجسٹ، اردو ڈائجسٹ سچی کہانیاں ، آداب عرض و دیگر اردو اور سندھی اخبارات اور رسائل میں شائع ہوتی رہتی ہیں وہ سندھی ادبی سنگت ، کراچی آرٹس کونسل و دیگر علمی و ادبی اداروں کی عہدیدار رہ چکی ہیں اور متعدد ادبی ایوارڈز حاصل کر چکی ہیں ۔

سيما عباسي جا ڇپيل ڪتاب

لفظن ڀوڳيو آ بنواس
لاش لڙڪن جا
ڏات جي ديوي
ڪلھي ڪانڌي ڪير ؟
تو سيما نان ء ٻڌو آ
سفر نامون
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنڌي غزل

ڪچا ڪيڏا سھارا ها ؟
سفر سڀ بي ڪنارا ها

جرح تنھنجي جبر واري
عذر منھنجا ويچارا ھا

اڃا احساس آسن جا
رهيا پنھنجا ڪنوارا ها

ڪئي تڪميل حڪمن جي
ن ٻيا مون وٽ ڪي چارا ها

لهو لفظن جو ڪاغذ تي
قلم جا ويس ڪارا ها

هنن هٿ جي لڪيرن ۾
مقدر جا مونجھارا ها

ندامت تن جي آئي پر
ڪٿي آيا پر ڪفارا ھا؟

ملي رشتن کي پيڙا پئي
پرک جا پنڌ سارا ها

مڃان ڪيئن عرض سي، تن جا؟
اگر ٻين کي اشارا ها

اسان جي ڀاڳ جا موسم
خزائن جا خسارا ها

نہ ڪن مون سان محبت پر
رهن ڪنھن جا تہ پيارا ها؟

ڀتا نڪتا جيڪي تعلق
گمانن ۾ سگھارا ها

مقدر جو مڪر چنئون يا ؟
ظرف ڪنھن جا ڪسارا ها

روحاني رمز جا ڪرڻا
ايمانن جا سيپارا ها

اسان جا عزم ارڏا هي
ٿي چمڪيا چنڊ تارا ها

وري ماتم ڪيو مقتل
مفادي دار سارا ها

ڇو ڏين الزام هن کي تون؟
جڏھن هو راز وارا ها

پڙاڏا منھنجي لفظن جا
وڳا ائين ڄڻ نغارا ها

صبر مون کان پڇيو سيما
سدا ڇو هو ويسارا ها
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب نے میرے کردار پر انگلی اٹھائی ہے
اب اپنے خد و خال کو کچھ تو بکھیرنا ہے
کچھ تو زوال کو تم بھی زہے نصیب ہو
تھکتے ہوئے کمال کو کچھ تو بکھیرنا ہے

دیار غیر میں ہم بھی صداؤں سے مچل جاتے
مگر تھے کون اپنے جن کے دعووں سے پگھل جاتے

ہمارے دل میں جو طوفاں دبائے ہم ہی بیٹھے ہیں
اگر ان کا پتا دیتے ہزاروں دل بہل جاتے

سیما عباسی

Leave a reply