ورلڈ ہیڈر ایڈ

مظلوم کشمیریوں کے حق میں بھارت میں بھی احتجاجی مظاہرہ

مقبوضہ کشمیر سے آرٹیکل 370 اور 35 اے منسوخ کیے ہوئے اڑھائی ماہ سے زیادہ کا عرصہ ہو گیا ہے لیکن وہاں کے معمولات زندگی آج بھی مفلوج ہیں۔

ٹورنٹو کے کوئین پارک میں بھارتی مظالم کے خلاف احتجاجی ریلی

بھارتی ریاست گجرات کے شہر احمدآباد میں مظلوم کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے احتجاج کیا گیا۔ بھارتی میڈیا کے مطابق پہلی مرتبہ احمدآباد میں کشمیریوں کے حق میں ایک بڑا احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ مظاہرہ کا اہتمام احمدآباد کے مشہور ادارے آئی آئی ایم کے باہر کیا گیا تھا۔ مظاہرہ میں ریاست سے مختلف تنظیموں اور مختلف شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والے لوگوں نے شرکت کی

مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اور موم بتی لے کر کشمیر کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا اور مظلوم کشمیریوں سے ہونے والی نا انصافی کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔

آرٹیکل 370نہیں تو کشمیر کے بھارت سے رشتے بھی ختم، بھارت نواز کشمیری کا بڑا اعلان

اس موقع پر مائناریٹی کوآرڈینیشن کمیٹی گجرات کے کنوینر مجاہد نفیس نے کہا کہ ‘تمام لوگوں کے دلوں میں کشمیریوں کے لئے درد ہے، دو ماہ سے زائدعرصہ ہونے کے باوجود وہاں کی عوام پریشان حال ہے۔ ان حالات میں گجرات کے تمام لوگ ان کے ساتھ ہیں اور جمہوریت کو بچانے کا مطالبہ کر رہے ہیں’۔

مقبوضہ کشمیر، کرفیو کے ڈھائی ماہ، مسجدوں کے منبرو محراب خاموش

اس موقع پر احمدآباد کی تمام انصاف پسند تنظیموں سے منسلک افراد نے حصہ لے کر کشمیریوں کے حق میں آواز بلند کی۔ گجرات ہائی کورٹ کے وکیل شمشاد خان پٹھان کے مطابق ‘حکومت کشمیر میں سب ٹھیک ہونے کا دعویٰ کررہی ہے، لیکن وہاں کچھ بھی ٹھیک نظر نہیں آ رہا’۔ ایسے میں حکومت کو چاہئے کہ کشمیر میں امن بحال کرے اور حالات معمول کے مطابق کرے۔

ویلفیئر پارٹی آف انڈیا گجرات کے صدر اکرام بیگ مرزا نے کشمیریوں پر ہورہے ظلم و ستم پر افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ ‘آرٹیکل 370 ہی کشمیر کو بھارت سے جوڑتی تھی، لیکن حکومت نے اسے ہی ختم کردیا، حکومت کشمیریوں کے حقوق کو تلف کرنے کی سازش کررہی ہے، جس کے خلاف آج احمدآباد کے لوگ سڑکوں پر ہیں’۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.