fbpx

خواتین پر تشدد کروانے پر عوام میں شدید غصہ پایا جاتا ہے:عمران خان

پشاور:عمران خان نے کہا ہے کہ خواتین پر تشدد کروانے پر عوام میں شدید غصہ پایا جاتا،اطلاعات کے مطابق سابق وزیراعظم و چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے ایک پیغام میں کہا کہ چارسدہ میں حقیقی آزادی مارچ دوم کی تیاریوں کاآغاز ہو گیا۔

عمران خان نے کہا کہ ہمارے نوجوان پہلے سے بھی بڑھ کر پرجوش ہیں۔اپنے پیغام میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ پرامن مظاہرین خصوصاً خواتین پر پولیس سے بہیمانہ تشدد کروانے پر عوام میں قاتل راناثناءاللہ، بزدل کرائم منسٹر اور اسکے بدعنوان بیٹےکیخلاف شدید غصہ پایا جاتا ہے۔

واضح رہے اس سے قبل سابق وزیراعظم و چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا چارسدہ میں ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ آپ سب تیاری کریں میں بھی تیاری کر رہا ہوں، جو اب ہم نکلیں گے کوئی رکاوٹ اس کےسامنے نہیں کھڑی ہو گی۔

عمران خان نے کہا کہ میرے کارکنوں نے جبر اور ظلم کے باوجود خوف کے زنجیروں کو توڑ دیا، ہمارے کارکن آزادی کی جنگ لڑ تے ہوئے شہید ہوئے۔ان کا کہنا تھا کہ پولیس نے رات کے وقت گھروں میں جا کر عورتوں کو پکڑا، عورتوں اور بچوں پر شیل استعمال کئے گئے جبکہ یاسمین راشد کو گاڑی سے نکالا گیا اور پولیس کے ساتھ لیڈی پولیس موجود نہیں تھی

چیئرمین تحریک انصاف کا یہ بھی کہنا تھا کہ رانا ثناء اللہ، شہباز شریف اور حمزہ شہباز سن لو قوم تمہیں معاف نہیں کریگی،۔ہم عدالتوں میں بھی جائیں گے اور ان پر کیس کریں گے۔

عمران خان نے کہا کہ باپ، بیٹا اور رانا ثنااللہ تینوں کرپٹ ہیں، باپ بیٹے نےجوظلم کیا قوم ان معاف نہیں کرے گا جبکہ تم3بزدلوں کو انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کر کے جیلوں میں ڈلوائیں گے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ جب تک زندہ ہوں ان چوروں کیخلاف جدوجہد اور جہاد ختم نہیں کرونگا، سپریم کورٹ نے کہہ دیا تھا پرامن احتجاج ہمارا جمہوری حق تھا

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ امریکہ کی امپورٹڈ حکومت کسی صورت قبول نہیں کریں گے ، قوم کو حقیقی آزادی دلائیں گے قوم تیاری کریں۔انہوں نے کہا کہ پہلے ہم سپریم کورٹ جا رہے ہیں فیصلے کے مطابق پلان بنائیں گے، سپریم کورٹ ہمارا حق تسلیم کرے اور اگر ہمارا حق نہ دیا گیا تو ہم چین لیں گے۔

عمران خان نے یہ بھی کہا کہ ہماری حکومت روس سے 25 فیصد کم تیل لینا چاہتے تھے، حکومت ہندوستان سے کشمیر کا سودا کرنے والے ہیں جبکہ اسرائیلی حکومت کو بھی تسلیم کرنے والے ہیں۔

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہندوستان آزاد ہے اور ہم غلام جبکہ ہندوستان نے سستا تیل منگوا کر 25 روپے قیمت کم کی ، امریکی غلاموں نے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں بڑھائیں۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ آج معلوم ہوا ایک وفد اسرائیل گیا ہے کیونکہ یہ اسرائیل کو قبول کرنے جا رہے ہیں، یہ کشمیریوں کو بیچیں گے اور ہندوستان سے سمجھوتہ کریں گے جبکہ یہ ہر وہ کام کریں گے جو امریکا سے حکم آئے گا۔

سابق وزیراعظم و چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ جب ایک قوم اپنی آزادی کیلئے نکلتی ہے وہ جہاد ہے، ہمارے اوپر چوروں کی حکومت مسلط کی گئی لیکن ہم کسی صورت ان چوروں اور امریکی غلاموں کو قبول نہیں کریں گے۔