پبلک ٹی وی کے مالک توبڑی شئے نکلے:مالی ذمہ داریاں پوری کرنے میں ناکام:بدعنوانی کے سنگین انکشافات

0
113

لاہور:پبلک ٹی وی کے مالک توبڑی شئے نکلے:مالی ذمہ داریاں پوری کرنے میں ناکام:بدعنوانی کے سنگین انکشافات ،اطلاعات کے مطابق پبلک نیوز کے مالک عبدالجبار پرسنگین مالی بے ضابطگیوں کے الزامات ہیں اوروہ اس حوالے سے اپنی اوپرلگنے والے الزامات کے جوابات دینے میں ناکام ثآبت ہوئے ہیں‌،

ذرائع کے مطابق اسپورٹس اسٹار انٹرنیشنل ، اے پلس ٹی وی اور پبلک نیوز کے مالک چوہدری عبد الجبار نے اپنے وعدے پورے نہیں کیے جو ان کی مالی ذمہ داریوں کے ساتھ کئی بار کیے گئے تھے۔ یہ یو پی اے ممبروں کے لئے سخت تشویش کا باعث ہے کیونکہ پچھلے تین سالوں میں متعدد ملاقاتوں اور مستقل یاد دہانیوں سے کوئی فرق نہیں پڑا ہے۔

ذرائع کے مطابق عبدالجبارجو کہ پبلک نیوز کے مالک ہیں متعدد محصولات اسٹریمز جیسے "سیلز ، ری رن ، یوٹیوب ، او ٹی ٹی پلیٹ فارمز ، ڈرامہ ایکسپورٹس اور بقیہ آمدنی” سے سالانہ تقریبا 1.44 بلین روپے کماتے ہیں‌

معلوم ہوا ہے کہ پبلک نیوز کے مالک نے یو پی اے کے چیئرمین کو کچھ اثاثوں کی ادائیگی شروع کرنے کی یقین دہانی کرائی لیکن اس کے بعد سے ایک بھی ٹھوس اقدام دیکھنے میں نہیں آیا۔ اس کے نتیجے میں ، ایسوسی ایشن نے وزیر اعظم پاکستان ، عمران خان سے اپیل کی کہ وہ پروڈیوسروں کو مالی تباہی سے بچنے کے لئے فوری طور پر غور کریں۔

یو پی اے نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) سے بھی درخواست کی ہے کہ مذکورہ چینلز کی معطلی سمیت پیمرا قوانین کے مطابق لائسنس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ، بشرطیکہ مقررہ مدت میں تمام بقایا جات کو طے نہ کیا جائے۔

یاد رہے کہ متحدہ پروڈیوسر ایسوسی ایشن (یو پی اے) واحد نمائندہ ادارہ ہے جو پاکستان کے آزاد ٹیلی ویژن ، فلم ، ڈیجیٹل اور دیگر میڈیا پیشہ ور افراد کے تجارتی مفادات کی نمائندگی کرتا ہے۔

پورے ملک میں 160 سے زیادہ ممبران کے ساتھ اور 25،000 سے زائد عملہ اور 25+ سے زیادہ تجارت براہ راست یا بالواسطہ طور پر ہے ، یو پی اے ایک ایسی ایسوسی ایشن ہے جو اپنے ممبروں کو ان کے قانونی اور کاروباری امور میں مدد دیتی ہے اور خدمات اور مہم کے مختلف کاموں پر بھی کام کرتی ہے۔ پاکستان ٹیلی ویژن انڈسٹری کے لئے پاکستان کے پروڈیوسر ہمیشہ ریڑھ کی ہڈی اور مضبوط اعانت کا نظام رہا ہے۔

باغی ٹی وی کو معلوم ہوا ہے کہ فی الحال یوپی اے سے وابستہ پروڈیوسروں کو میڈیا ہاؤسز کی بقایاجات اور خاص طور پر ایک مخصوص میڈیا آؤٹ لیٹ کے مالک کے مکروہ رویہ کی وجہ سے خوفناک صورتحال کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ جس کا ازالہ کرنے کے لیے حکومت کوٹھوس اقدامات اٹھانے پڑیں گے

Leave a reply