fbpx

پنجاب کابینہ میں توسیع،ملک احمد خان وزیر قانون و پارلیمانی امورمقرر،نوٹیفیکیشن جاری

وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کی زیر صدارت اجلاس منعقد کیا گیا جس میں حمزہ شہباز شریف نے اپنی کابینہ کو توسیع دیتے ہوئے مسلم لیگ ن کے رکن پنجاب اسمبلی ملک احمد خان کو باضابطہ طور پر قانون و پارلیمانی امور کا قلمدان سونپ دیا گیا۔ وزیراعلی پنجاب کے حکم پر ملک احمد خان کو قانون اور پارلیمانی امورکی وزارت سونپے جانے کا نوتیفیکیشن جاری کر دیا گیا ہے تاہم اس سے قبل ملک احمد خان کو صرف ایوان اقبال میں جاری پنجاب اسمبلی اجلاس کی حد تک کے لئے قانون اور پارلیمانی امور کی وزارت کا قلمدان سونپا گیا گیا تھا.

وزیراعلی پنجاب حمزہ شہباز کی ہدایت پر چیف سیکریٹری پنجاب کامران علی افضل نے ملک احمد خان کی بطور محکمہ قانون اور پارلیمانی امورکی وزارت کا نوٹیفیکیشن جاری کیا. نوٹیفیکیشن پرآج کی تاریخ 27 جون 2022 درج ہے.

وزیر قانون و پارلیمانی امور ملک احمد خان 2002 سے 2007 تک رکن پنجاب اسمبلی رہے ہیں ، اس کے بعد ملک احمد خان 2013 سے رکن پنجاب اسمبلی ہین ،ملک احمد خان کا تعلق قصور پے،ملک احمد خان 29 نومبر 1971 میں پیدا ہوئے .آپ کے واکد ملک محمد علی خان 1972 سے 1977 تک رکن پنجاب اسمبلی رہے جس کے بعد 1985 سے 1994 تک سینیٹر رہے جبکہ 1986 سے 1988 تک ڈپٹی چیئرمین سینیٹ رہے ہیں.

ملک احمد خان 2002 کے عام انتخابات میں پی پی 179 سے مسلم لیگ ق کے پلیٹ فارم سے رکن پیجاب اسمبلی منتخب ہوئے تھے جبکہ جنوری 2012 میں ملک احمد خان نے مسلم لیگ ن میں شمولیت اختیار کی.اور 2013 کے انتخابات میں میں ملک احمد خان اپنے حلقے سے مسلم لیگ ن کے پلیت فاعم سے دوبارہ رکن پنجاب اسمبلی منتخب ہو گئے، ملک احمد خان پبلک اکاونٹس کی سپیشک کمیٹی نمبر 3 کے ممبر بھی رہے، ملک احمد خان مسلم لیگ ن کی لیڈر شب میں بھروسہ مند اورقابل اعتماد ساتھی سمجھے جاتے ہیں.