fbpx

پنجاب بلدیاتی ایکٹ: کمیٹی نے4 سفارشات پیش کر دیں:ڈپٹی کمشنر کے اختیارات مسئلہ بن گئے

لاہور: پنجاب بلدیاتی ایکٹ: کمیٹی نے4 سفارشات پیش کر دیں:ڈپٹی کمشنر کے اختیارات مسئلہ بن گئے ،اطلاعات کے مطابق پنجاب میں نئے بلدیاتی ایکٹ 2021 پر پارلیمانی ترمیمی آرڈیننس کمیٹی نے اپنی سفارشات پیش کر دی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق اسٹینڈنگ کمیٹی کے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آ گئی، ذرائع نے کہا ہے کہ کمیٹی کو ابھی تک 4 اہم سفارشات پیش کی گئی ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ کمیٹی کی جانب سے چیئرمین اور ڈپٹی چئیرمین کے لیے ایف اے کی شرط ختم کرنے کی سفارش کی گئی ہے، ن لیگ اور مسلم لیگ ق کی ڈپٹی کمشنر کے اختیارات بھی ختم کرنے کی سفارش سامنے آئی ہے۔

ذرائع کے مطابق مسلم لیگ ن نے بلدیاتی انتخابات مرحلہ وار نہ کرانے کی تجویز پیش کی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ بلدیاتی انتخابات مرحلہ وار کی بجائے ایک ہی روز کرائے جائیں۔

راہ حق پارٹی کی پنجاب کونسل میں کم از کم ایک مستند عالم دین رکھنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔رکن پنجاب اسمبلی فاروق امان اللہ دریشک نے کہا کہ کمیٹی میں شامل ممبران کی سفارشات کے بعد اس سلسلے میں حتمی فیصلہ کریں گے۔

ذرائع کے مطابق تحریک انصاف نے پنجاب میں بلدیاتی انتخابات کی تیاریاں شروع کردی ہیں اور اس حوالے سے منصوبہ بندی بھی فائنل کرلی گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی زیر صدارت اعلیٰ سطح کاخصوصی اجلاس ہوا جس میں صداقت عباسی، راجہ بشارت اور حسان خاور سمیت دیگر نے شرکت کی، اور بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے بات چیت اور تجاویز پر غور کیا گیا۔

ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں فیصلہ ہوا کہ ہرماہ کے پہلے ہفتے ایوان وزیر اعلی میں پنجاب کی ایڈوائزری کو نسل کا اجلاس ہوگا، بلدیاتی انتخابات کی تیاریوں کی رپورٹ ہر ماہ وزیر اعظم بھجوائی جائے گی۔

ذرائع کے مطابق اجلاس میں بلدیاتی انتخابات سے پہلے تمام سرکاری محکموں میں خالی آسامیاں پر کر نے کا فیصلہ بھی کیا گیا ہے، اور ضلعی حکومتوں میں ڈیلی ویجز پر بھی بھر تیوں کیلئے اراکین اسمبلی کیلئے کوٹہ ہوگا۔ جب کہ اجلاس میں وزیر اعلی عثمان بزدار نے یقین دہانی کرائی کہ ترقیاتی فنڈذ کو 100 فیصد یقینی بنانا میری ذمہ داری ہے، جسے ذمہ داری کے ساتھ پورا کروں گا۔ وزیراعلیٰ نے بلدیاتی اداروں کے ایڈ منسٹرز کو اراکین اسمبلی کے ساتھ مل کر فنڈز استعمال کر نے کی بھی ہدایت کی۔

ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں اعجاز چوہدری کی سر براہی میں کام کر نے والی تنظیم پر شدید تنقید کی گئی، جب کہ اعجاز چوہدری کی جانب سے بھی اظہار ناراضی سامنے آیا۔ اجلاس میں یہ بھی فیصلہ ہوا کہ پارٹی کی تنظیم میں پہلے عہدو ں پر رہنے والوں کی بجائے نئے لوگوں کو سامنے لایا جائے گا۔ جب کہ گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور پنجاب بھر کے کارکنوں کے ساتھ گورنر ہاؤس میں ہفتہ وار میٹنگز کیا کریں گے

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!