fbpx

پنجاب میں صنعتی انقلاب کے لئے اٹھائے گئے اقدامات تحریر: شعیب قدیر ملک

آبادی کے لحاظ سے پنجاب پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے۔ بدقسمتی سے ، مناسب قیادت کا فقدان اور معاشی منصوبہ بندی کا فقدان ، صوبہ برسوں سے معاشی جمود کا شکار ہے۔ 2018 میں عوام نے تبدیلی کے حق میں ووٹ دیا اور پی ٹی آئی کی حکومت اقتدار میں آگئی۔

وزیر اعظم عمران خان نے جنوبی پنجاب کے محروم حصے سے تعلق رکھنے والے عثمان بزدار کو پاکستان کے اس سب سے بڑے صوبے کی قیادت دینے کا فیصلہ کیا۔ جو اپنی نوکری کو اپنا فرض سمجھتا تھا۔ ہر طرف سے بزدار پر تنقید پھیل گئی ، لیکن اس نے نظر انداز کیا اور صوبے کی تقدیر بدلنے کے لئے دن رات کام کیا۔

آج ، وزیر اعلی عثمان بزدار کی سربراہی میں ، صوبے میں ترقی کا ایک نیا دور شروع ہوگیا ہے۔ در حقیقت ، صوبہ پنجاب وزیر اعظم عمران خان کے نئے پاکستان کے وژن کی بنیاد بن گیا ہے۔ پی ٹی آئی کی حکومت نے نہ صرف صوبے کی معاشی حالت کو ٹھیک کرنے کی کوشش کی بلکہ لوگوں کو روزگار کے بہتر مواقع فراہم کیے۔

آئیے حکومت کے اٹھائے گئے کچھ اہم اقدامات پر ایک نظر ڈالتے ہیں۔

تحریک انصاف کی حکومت سے پہلے پنجاب میں کوئی جامع صنعتی پالیسی نہیں تھی۔ پہلے وزیر اعلی عثمان بزدار نے پہلی بار پنجاب میں مربوط اور جامع صنعتی پالیسی لانے کے لئے اقدامات اٹھائے اور پہلی صنعتی پالیسی پنجاب کو دی۔ اگرچہ ایک نیا دور شروع ہوا۔

اگر ہم روزگار کے مواقع پیدا کرنے کے لئے صنعتوں کے قیام پر نظر ڈالیں تو ، حکومت پنجاب نے اب تک 8 نئے خصوصی اقتصادی زون تشکیل دیئے ہیں ، جبکہ 4 پرانے صنعتی اسٹیٹس کو اپ گریڈ کرکے صنعتی زون کا درجہ دیا گیا ہے۔
فیصل آباد میں قائم کیا جانے والا عالم اقبال انڈسٹریل سٹی 3217 ایکڑ پر قائم کیا گیا ہے جو 4 لاکھ ہزار افراد کو براہ راست روزگار فراہم کرے گا جبکہ مجموعی طور پر 10 لاکھ افراد کے لئے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔
شیخوپورہ میں موٹر وے کے قریب 1536 ایکڑ رقبے پر محیط پاکستان کے پہلے سمارٹ اقتصادی زون قائداعظم بزنس پارک کا منصوبہ بھی شروع ہوچکا ہے۔ اس منصوبے پر کام زوروں سے جاری ہے۔ اس منصوبے سے 25 لاکھ ملازمتیں پیدا ہوں گی۔
پی ٹی آئی حکومت نے بھلوال ، رحیم یار خان اور وہاڑی کے صنعتی اسٹیٹس کو خصوصی معاشی زون کا درجہ دے دیا ہے۔ اس سے بالترتیب 6،000 ، 5،500 اور 4،000 ملازمتیں پیدا ہوں گی۔
سرمایہ کاروں کی سہولت کے لئے قائداعظم انڈسٹریل اسٹیٹ لاہور اور فیڈمک میں ون ونڈو سروس سینٹرز بھی قائم کیے گئے ہیں۔

جہاں حکومت پنجاب صوبے میں صنعتی انقلاب لانے کے لئے بڑے پیمانے پر اقدامات کررہی ہے ، وہیں ان صنعتوں کو ہنر مند افرادی قوت کی فراہمی کے لئے بھی ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کیے جارہے ہیں۔
صنعتوں کو ہنر مند افرادی قوت کی فراہمی کے لئے صوبے میں ٹیکنیکل یونیورسٹیاں قائم کی جارہی ہیں ، ان میں تیآنجن ٹیکنیکل یونیورسٹی لاہور میں ایک کروڑ روپئے کی لاگت سے۔ 3 ارب ، رند یونیورسٹی آف ٹکنالوجی ڈی جی خان نے ایک ارب روپے کی لاگت سے۔ 2 ارب اور ڈی جی خان نے 5 ارب روپے کی لاگت سے۔ 2.16 بلین۔ پنجاب یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی رسول منڈی بہاؤالدین کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جبکہ آئندہ مالی سال میں راولپنڈی میں ایک ٹیکنیکل یونیورسٹی قائم کی جائے گی۔ اس کے علاوہ ، تکنیکی نصاب پیش کرنے والے اداروں کی تعداد اور ان میں طلباء کی تعداد میں بھی نمایاں اضافہ ہوا۔
اس ضمن میں ڈیڑھ ارب روپے کی لاگت سے ایک ہنر مند نوجوان پروگرام شروع کیا جارہا ہے۔ ٹویوٹا کمپنیوں کی گنجائش 90،000 سالانہ سے بڑھا کر 233،000 کردی گئی ہے۔ ہنر مند یوتھ پروگرام کے تحت ، صنعت کے تقاضوں کے مطابق 5 6 نئے جدید کورسز کا انعقاد کیا جارہا ہے۔ ٹویوٹا ، پی وی ٹی سی اور پی ایس ڈی ایف ٹیکنیکل ایجوکیشن انسٹی ٹیوٹ کو ایک چھتری میں لانے کے لئے پنجاب اسکل ڈویلپمنٹ اتھارٹی قائم کی گئی ہے

سرکاری اور نجی پیشہ ورانہ تعلیمی اداروں کی اتھارٹی میں آن لائن رجسٹریشن جاری ہے۔ ٹیکنیکل ایجوکیشن بورڈ کی رجسٹریشن اور امتحانات فیس کو کورونا کے دوران ایک سال کے لئے ختم کردیا گیا تھا۔ نجی تعلیمی اداروں میں اس سے 17،000 بچوں کو بھی فائدہ ہوا۔
حکومت پنجاب نے صوبے میں نئے سرمایہ کاروں کو لانے اور کاروبار میں آسانی کے ل valuable قیمتی اقدامات بھی کیے ہیں۔ پنجاب بزنس رجسٹریشن پورٹل قائم کیا گیا ہے جس نے کاروباری اندراج کے عمل کو 24 گھنٹوں تک پہنچا دیا ہے۔ انویسٹر ہیلپ لائن کو پنجاب بورڈ آف انویسٹمنٹ میں قائم کیا گیا ہے۔ اس سے کاروباری برادری کو کاروبار کے اندراج ، شکایت کے ازالے ، مسئلہ حل کرنے اور کاروبار کے بارے میں معلومات فراہم ہوں گی۔

حکومت پنجاب نے 90 متعلقہ محکموں کو 90 دن کے اندر این او سی جاری کرنے کی ضرورت کے ذریعے نیا سیمنٹ پلانٹ لگا کر ایک بڑا قدم اٹھایا ہے۔ رواں مالی سال کے دوران ، سیمنٹ کے نئے پلانٹ لگانے کے لئے 5 این او سی جاری کردیئے گئے ہیں جبکہ کابینہ نے مزید 5 این او سی جاری کرنے کی منظوری دے دی ہے۔ یاد رہے کہ نئے سیمنٹ پلانٹ کی تعمیر پر 300-250 ملین ڈالر لاگت آئے گی ، جس کی متوقع سرمایہ کاری آئندہ پانچ سالوں میں 4.5 بلین ڈالر ہوگی۔
وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے پنجاب میں صنعتی انقلاب لانے کے لئے اٹھائے گئے کچھ اہم اقدامات یہ ہیں۔

@ShoaibQadeer1