روسی صدر کا 2030 تک حکمرانی کا ہدف

0
243

روسی صدر ولادی میر پوتن نے جمعہ کو جاری کردہ ایک بیان میں آئندہ 2024 کے صدارتی انتخابات لڑنے کا بھی اعلان کیا، یہ ایک ایسا فیصلہ ہے جس سے وہ کم از کم 2030 تک اقتدار میں رہیں گے۔ یہ انتخابات 15 سے 17 مارچ 2024تک ہوں گے، اور ان الیکشن میں تقریباً 110 ملین ووٹرز اپنی رائے دیں گے، تاہم، تاریخی رجحانات کم ٹرن آؤٹ دکھاتے ہیں، 2018 کے انتخابات میں 67.5 فیصد ووٹرز کی شرح ریکارڈ کی گئی۔

پوتن نے 1999 میں بورس یلسن کی جگہ صدارت سنبھالی تھی اور اس کے بعد وہ جوزف اسٹالن کے بعد روس کے سب سے طویل عرصے تک صدر رہنے والے رہنما بن گئے ہیں۔ مارک گیلیوٹی کی کتاب، "Putin’s Wars” میں 2000 کی دہائی سے اب تک کی روس کی فوجی مصروفیات کا ایک جامع جائزہ پیش کیا گیا ہے۔ روسی سیاسی اور سلامتی کے امور کے معروف اسکالر Galeotti نے دو چیچن جنگوں، شامی تنازعے میں روسی مداخلت، جارجیا پر حملہ، کریمیا کا الحاق، اور یوکرین میں وسیع تنازعات کی تفصیلات بیان کی ہیں۔
Galeotti کا کام حالیہ تنازعات سے آگے بڑھتا ہے، جو روس کی اعلیٰ ترین اور فرسودہ مسلح افواج کو دوبارہ منظم کرنے میں کامیاب وزراء دفاع کو درپیش چیلنجوں کا جائزہ لے رہے ہیں، پوتن کے پہلے وزیر دفاع، سرگئی ایوانوف (2001–2007) نے فوجی جرنیلوں کی مزاحمت کا سامنا کرتے ہوئے بڑے پیمانے پر بھرتی کرنے پر ایک کنٹریکٹ آرمی کی وکالت کی۔

میں قارئین کی توجہ ایک نقطے کی طرف مبذول کرانا چاہوں گی، غزہ میں نسل کشی کی وجہ سے،ارد گردجانے کے لیے بہت کچھ ہے۔ یوکرین کے مغربی اتحادیوں کی طرف سے امداد بند ہو رہی ہے۔ حماس نے ایرانی مالی معاونت سے یہ حملہ شروع کیا جو آگ کی طرح پھیل گیا، غزہ کو قبضے میں لے لیا گیا، بالکل اسی وقت جب سعودی عرب اور اسرائیل کے درمیان معاہدہ ہونے والا تھا جس سے فلسطینیوں کو زیادہ فائدہ اور یقیناً ایران کو نقصان ہوگا، اس حملے کے بعد آگ پھیل گئی، اسرائیل کی طرف سے ردعمل کو شاید اچھی طرح سمجھا گیا تھا، اس تباہی کے گرد گھومنے کے لئے ابھی بہت کچھ باقی ہے جس نے دنیا کو ٹکرایا، یوکرین کو ذیلی متن میں لے گیا اور آخر کار اسے روس سے لڑنے کے لیے کمزور بنا دیا۔
آخر سیاست ایک گندا کھیل ہے

Leave a reply