ورلڈ ہیڈر ایڈ

قوم پرستی اب کشمیر کو نگلنے کے لیے بے تاب تحریر: عبدالرحمن

کشمیر میں چند قوم پرست میڈیا کی توجہ مبذول کرنے اور فری کشمیر کے مردہ ڈھانچے میں دوبارہ جان ڈالنے کے لیے اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر آئے ہیں اور اپنی سیاست کشمیریوں کے خون سے چمکانے کے لیے بے تاب ہیں اور نہتے لوگوں کو لائن آف کنٹرول کو کراس کرنے پر اکساکر ایک سفاک دشمن کے سامنے کھڑا کرنا چاہتے ہیں حالانکہ یہ وہی لوگ ہیں جو ماضی میں خونی لکیر روندنے والوں کے خلاف رہے ہیں اور انہیں کشمیر کا دشمن گردانتے آئے ہیں ان لوگوں کے نعروں اور باتوں سے ان کی پاکستان کے خلاف نفرت بالکل واضح ہے اور حسب سابق تمام ریاست مخالف عناصر ان کی حمایت میں سرفہرست نظر آرہے ہیں
یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آخر ایسی کیا وجہ ہے کہ کوئی نہ کوئی گروہ پاکستان میں اچانک سے اٹھ کھڑا ہوتا ہے اور وہ ریاست کو للکارنا شروع کر دیتا ہے اور لوگوں کو گمراہ کرکے اپنے ساتھ ملانے میں بھی بظاہر کافی حد تک کامیاب نظر آتا ہے باقی گروہوں سے صرف نظر کرتے ہوئے فی الوقت ہم کشمیری قوم پرستوں کو اگر دیکھیں تو ہمیں یہ بات واضح نظر آتی ہے کہ پروپیگنڈہ ہمیشہ کسی سچے یا جھوٹے واقعہ یا سانحہ کی بنیاد پر ہوتا ہے

کشمیر کے موجودہ حالات کسی سے ڈھکے چھپے نہیں اور ہر پاکستانی کشمیر کے معاملے پر انتہائی غمزدہ اور غصے میں ہے
اور تقریباً ہر پاکستانی ہی کشمیر پر موجودہ حکومتی اقدامات کو سابقہ سے تو کچھ بہتر مگر ناکافی ہی سمجھتا ہے اور وہ اس بات حق بجانب ہے کہ اب تک اگر ہم یہ کہیں کہ موجودہ حکومت دنیا کی توجہ کشمیر کی جانب کرانے میں کچھ کامیاب تو نظر آرہی ہے لیکن 5 ہفتوں سے کرفیو میں سسکتے زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا کشمیریوں کو رتی برابر بھی سہارا یا ریلیف دلانے میں ناکام رہی ہے
کیا ہماری شہ رگ کا صرف یہی تقاضا ہے کہ ہم اسے کچلتے ہوئے دیکھ کر صرف اور صرف اقوام عالم اور غیبی امداد کے منتظر نظر آئیں

ہم آخری حد تک جانے کی بات تو کرتے ہیں لیکن ہم نے اب تک ابتدا بھی کی ہے..؟ یقیناً آخری حد سے مراد جنگ ہی ہے لیکن کیا ہم نے بھوکے کشمیریوں کو راشن دلانے کے لیے کوئی شروعات کی ہے!؟
کیا ہم نے بیماروں کے لیے ادویات پہچانے کے لیے کوئی اقدامات کیے ہیں!؟
یہ تو بنیادی انسانی حقوق ہیں اور مجھے یقین ہے کہ ان سے پاکستان کا "سوفٹ امیج” بھی خراب نہ ہوگا اور اگر ہم یہ بھی نہیں کر پارہے تو ہمارےپاس اس کے نتائج بھگتنے اور ہاتھ مسلنے کے علاوہ کچھ نہیں رہے گا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.