fbpx

قاضی فائز عیسیٰ تین سوالات کے جواب دیں توتنازع حل ہو سکتا ہے،سرکاری وکیل

قاضی فائز عیسیٰ تین سوالات کے جواب دیں توتنازع حل ہو سکتا ہے،سرکاری وکیل

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ میں جسٹس قاضی فائز عیسٰی نظر ثانی کیس کی سماعت ہوئی

جسٹس قاضی فائز عیسی تین سوالوں کے جواب میں رکاوٹ بن گئے، جسٹس قاضی فائز عیسی نے بینچ کے سربراہ پر سوال اٹھا دیا،اور کہا کہ حکومتی وکیل رحمان میرے چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ یا ٹیکس کنسلٹنٹ نہیں جو ہمارے فیملی معاملات پر سوالات کا جواب دیں۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل عامر رحمان نے عدالت میں دلائل دیئے ،وکیل وفاقی حکومت نے عدالت میں کہا کہ جسٹس منصور علی شاہ نے حق دعویٰ نہ ہونے کا سوال اٹھایا تھا،وفاقی حکومت کیس میں با ضابطہ فریق ہے، وکیل نے کہا کہ عدالت نے وفاقی حکومت کو نوٹس جاری کرکے جواب مانگا تھا، وفاقی حکومت نے ریفرنس کالعدم ہونے پر نظرثانی نہیں کی،عدالت نے کہا تھا سرینا عیسٰی کو وضاحت کا موقع دیئے بغیر ریفرنس دائر کیا گیا، عدالت کیس ایف بی آر کو نہ بھجواتی تو وفاقی حکومت نظرثانی اپیل دائر کرتی،حکومت کیس ایف بی آر کو بھجوانے کا دفاع کرنے میں حق بجانب ہے،جسٹس قاضی فائز عیسٰی کیس میں عدالتی فیصلے پر عملدرآمد ہو چکا ہے، عملدرآمد کے بعد فیصلہ واپس نہیں لیا جا سکتا، سپریم جوڈیشل کونسل کوسی بھی مواد کا جائزہ لینے سے نہیں روکا جا سکتا،آرٹیکل 211کے تحت جوڈیشل کونسل کی کاروائی پرسوال نہیں اٹھایاجاسکتا، سپریم کورٹ جوڈیشل کونسل کے کام میں مداخلت نہیں کر سکتی، جسٹس یحییٰ آفریدی نے کہا کہ پہلے آپکا موقف تھا کہ جوڈیشل کونسل کو ہدایات دی جا سکتی ہیں، کیا آپکا موقف نظر ثانی درخواستوں کے حق میں نہیں جاتا؟،

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ عامر رحمان میرے ٹیکس یا فنانشل ایڈوائزر نہیں ہیں حکومتی وکیل سے ایسا سوال نہیں پوچھنا چاہیے تھا جان بوجھ کر نیا مواد عدالتی کاروائی کا حصہ بنایا جا رہا ہے کیا جسٹس عمر عطا بندیال آپ شکایت کنندہ ہیں؟ ایسے سوالات سے آپ کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی کر رہے ہیں جسٹس عمر عطا بندیال اپنے حلف کی خلاف ورزی کر رہے ہیں، ایف بی آر کی رپورٹ نظر ثانی درخواستوں کے بعد آئی ہے، جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ جسٹس قاضی فائز عیسٰی کی نظر میں انکی اہلیہ کی دستاویزات کا جائزہ لینا غلط ہے

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے جسٹس عمر عطا بندیال سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ جسٹس بندیال حکومتی وکیل کے منہ میں الفاظ ڈال رہے ہیں،آپ جو بھی کریں مگر اپنی آئینی ذمہ داریوں کو ٹھیک طور پر ادا کریں,بعد ازاں جسٹس عمر عطا بندیال نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کو جواب دیا اور کہا کہ عدالت کو شاید ایک فریق کو سن کر اٹھ جانا چاہیے، جسٹس مقبول باقر نے کہا کہ ایف بی آر رپورٹ پر اگر ہم ابزرویشن دیں تو کیا جوڈیشل کونسل پر اثر انداز نہیں ہو گا؟ سرکاری وکیل نے کہا کہ جسٹس فائز عیسٰی ایف بی آر کارروائی کو بدنیتی قرار دیکر نظر ثانی کی بنیاد بنارہے ہیں،جو دستاویزات نظر ثانی کی بنیاد ہے اس پر دلائل دینا میرا حق ہے، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ ایف بی آر نے عدالتی حکم پر ہی تحقیقات کی تھیں، شاید پھر سے کوشش ہو رہی کہ وقت ضائع کیا جائے، سرکاری وکیل نے کہا کہ جوابات دے رہا ہوں اور کہا جارہا ہے کہ وقت ضائع کر رہا ہوں، رولز کے مطابق سپریم کورٹ کو سوالات پوچھنے کا اختیار ہے،سپریم کورٹ بعض حقائق کی پڑتال کے لیے بیان حلفی بھی مانگ سکتی ہے،

حکومتی وکیل نے سپریم کورٹ میں دلائل دیتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ کے تین سوالات ہی سارے کیس کی بنیاد ہیں۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ جواب دیں تو تنازع حل ہو سکتا ہے , جس پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ کیا مجھے ٹیکس کمشنر نے طلب کر رکھا ہے جس پر گفتگو ہورہی ہے,کیا عدالت انکم ٹیکس آفیسر ہے؟ایف بی آر رپورٹ پر گفتگو کر کے وقت ضائع کیا جارہا ہے، کوڈ آف کنڈیکٹ کے تحت کیسز کو جلد نمٹانا ججز کی ذمہ داری ہے،

مجھے بار بار رگڑا لگایا جا رہا ہے،جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

میرا سرشرم سے جھک گیا،جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے دلائل

2019 سے مشکل میں،وکیل کی فیس ادا نہیں کر سکتا، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے نظر ثانی کیس میں خود دیئے دلائل

مجھے پتہ چلے حلقہ میں یہ کام ہو رہا ہے تو میں ووٹ ڈالنے نہیں جاؤنگا۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

آئین میں کہاں لکھا ہے الیکشن کمیشن چیئرمین سینیٹ انتخاب نہیں کرائے گا؟ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

3 سال گزرگئے،یہ کام نہیں ہوا،حکومت کی نااہلی ظاہر ہوتی ہے، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

صدارتی ریفرنس کیس، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ سپریم کورٹ پیش ہو گئے،اہلیہ کے بیان بارے عدالت کو بتا دیا

منافق نہیں، سچ کہتا ہوں، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ،آپ نے کورٹ کی کارروائی میں مداخلت کی،جسٹس عمر عطا بندیال

سپریم کورٹ فیصلے کے بعد صدر اور وزیر اعظم کو فورا مستعفی ہوجانا چاہئے، احسن اقبال

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ بیوی اور بیٹی کے ہمراہ اچانک کہاں پہنچ گئے؟

قاضی فائز عیسیٰ کیس،کیس کی کارروائی براہ راست دکھانے کی درخواست پر حکومت نے کیا دیا جواب؟

ہمیں کمنٹری سننے پر مجبور نہ کریں،عدالت ،سچ بولتا رہوں گا چاہے کسی کو برا ہی کیوں نہ لگے، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

قاضی فائز عیسیٰ کو وزیر اعظم کیخلاف مقدمات سننے سے روکنا غیر آئینی ہے،درخواست دائر

ضیا الحق، پرویز مشرف قوم کے نوکر تھے،نام لیتے ہوئے ہم کانپنا شروع ہوجاتے ہیں.جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

آئین شکنی غداری ،دین میں کوئی زبردستی نہیں تو قانون میں زبردستی کیسے ہوسکتی ہے ؟جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی درخواست سپریم کورٹ نے کی مسترد

عمران خان کا مداح، آٹو گراف بھی لیا،وزیرکو مستعفیٰ ہونا چاہئے، قاضی فائز عیسیٰ کے سپریم کورٹ میں دلائل

ملک کو باہر سے نہیں اندر سے خطرہ ،مجھے پاگل شخص قرار دیا گیا، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

شہزاد اکبرکو جیل میں ہونا چاہیے ،قاضی فائز عیسیٰ،آپ تحمل کا مظاہرہ کریں، جسٹس مقبول باقر

فروغ نسیم نے طنز کیا تھا کہ سلائی مشین سے لاکھوں پاونڈز بنائے،جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

عدالت میں جو جھوٹ بولے گئے وہ سامنے لانا چاہتا ہوں،جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

گزشتہ دو برس کے دوران ہزاروں بار مرچکی ہوں ،فواد چودھری، شہزاد اکبر نے کیا کام کیا؟ سرینا عیسیٰ پھٹ پڑیں

آپ بات سمجھے بغیر ہی مداخلت کر دیتے ہیں،جسٹس عمر عطا بندیال کا جسٹس قاضی فائز عیسٰی سے مکالمہ

سرینا عیسیٰ عدالت میں آبدیدہ،کل آپ کی بیویاں بھی یہاں کھڑی ہوسکتی ہیں،قاضی فائز عیسیٰ

اللہ مجھےغرق کرے اگرمیں…جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے سپریم کورٹ میں دلائل

میں بوڑھا ہوں،بال سفید ہو گئے، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ،کچھ خدا کا خوف کریں،جسٹس منظور ملک

قاضی فائز عیسٰی کی بات غیر مناسب،آپ اچھے انسان ہیں بات ختم کریں،سپریم کورٹ

قاضی فائز عیسیٰ نظر ثانی کیس،سرکاری وکیل کے دلائل پر قاضی فائز خاموش نہ رہ سکے

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے بینچ سربراہ جسٹس عمر عطا بندیال پر سوال اٹھا دیا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.