fbpx

رقم کی غیر قانونی منتقلی پر بھارت کا چینی کمپنی پر 72 کروڑ کا جرمانہ

نئی دہلی: بھارت نے رقوم کی غیر قانونی بیرون ملک منتقلی پر چینی اسمارٹ فون کمپنی ژیاومی کے بینک اکاؤنٹس سے 72 کروڑ 50 لاکھ ڈالرز ضبط کرلئے۔

باغی ٹی وی : بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی حکام کا کہنا ہے کہ ایک تحقیقات میں پتہ چلا کہ چینی اسمارٹ فون کمپنی نے مالک کمپنی کو ادائیگی (royalty payments) کی آڑ میں غیر قانونی طور پر بیرون ملک رقم بھیجیں۔

بھارتی انتہا پسند ہندو مسلمانوں کے بعد اب سکھوں کےجانی دشمن، پُرتشدد جھڑپیں

رپورٹس کے مطابق بھارت کی مالیاتی جرائم کی تحقیقاتی ایجنسی نے فروری میں کمپنی کی تحقیقات شروع کیں اور کہا کہ اس نے فرم سے رقم اس وقت ضبط کی جب پتہ چلا کہ ژیاومی نے تین غیر ملکی اداروں رقوم غیر قانونی طور پر منتقل کیں۔

انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ نے اپنے بیان میں کہا کہ رائلٹی کے نام پر اتنی بڑی رقم ژیاومی کے چینی مرکزی گروپ کمپنیوں کی ہدایات پر بھیجی گئیں۔

دوسری جانب AFP کی درخواست پر ژیاومی نے مذکورہ بالا الزام پر فوری طور پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے اسی طرح ہواوے سمیت بھارت میں دیگر چینی اسمارٹ فون کمپنیوں پر بھی چھاپے مارے جاچکے ہیں۔

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم،برطانوی پارلیمنٹ میں احتجاج

واشنگٹن پوسٹ نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ ہندوستانی حکام نے ہفتے کے روز چینی سمارٹ فون کمپنی Xiaomi سے 725 ملین ڈالر ضبط کیے، اس پر غیر قانونی طور پر بیرون ملک ترسیلات زر کرکے ملکی زرمبادلہ کے قوانین کی خلاف ورزی کا الزام لگایا، حکام نے بتایا۔

ہندوستان کی مالیاتی تحقیقاتی ایجنسی، انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ نے ٹویٹ کیا کہ اس نے یہ رقم Xiaomi کے مقامی یونٹ سے ضبط کر لی ہے۔ مقامی میڈیا نے رپورٹ کیا کہ یہ اقدام فروری میں وفاقی ایجنسی کی جانب سے غیر قانونی ترسیلات زر کے خدشات کے حوالے سے شروع کی گئی تحقیقات کے بعد سامنے آیا ہے۔

بھارت نے سپر سونک براہموس بحری جہاز شکن کروز میزائل کا بھی تجربہ کر لیا

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے حوالے سے ایک بیان کے مطابق، ایجنسی نے کہا کہ اسمارٹ فون بنانے والی کمپنی نے رائلٹی کی ادائیگی کی آڑ میں 725 ملین ڈالر "تین غیر ملکی اداروں” کو منتقل کیے ہیں۔ اس مہینے کے شروع میں، ایجنسی نے جنوبی شہر بنگلورو میں کمپنی کے علاقائی دفتر میں Xiaomi کے عالمی نائب صدر منو کمار جین سے بھی پوچھ گچھ کی تھی۔

اسمارٹ فون کمپنی نے کہا کہ اس نے مقامی قوانین کی تعمیل کی اور مزید کہا کہ اس کی "رائلٹی کی ادائیگیاں اور بیانات” "جائز اور سچے” تھے۔ اس نے کہا کہ وہ کسی بھی غلط فہمی کو دور کرنے کے لیے حکومت کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے پرعزم ہے۔

بیان میں کہا گیا کہ یہ رائلٹی کی ادائیگیاں جوXiaomi انڈیا نےکی ہیں وہ ہمارے ہندوستانی ورژن کی مصنوعات میں استعمال ہونےوالی لائسنس یافتہ ٹیکنالوجیز اور IPs کےلیے تھیں Xiaomi انڈیا کے لیے اس طرح کی رائلٹی کی ادائیگی کرنا ایک جائز تجارتی انتظام ہے۔

بھارت: پٹیالہ میں خالصتان کے حق میں مظاہرے،ہندوانتہا پسندوں کے حملوں اورجھڑپوں کے…

دو سال پہلے، بھارت نے 100 سے زیادہ چینی ملکیتی ایپس پر پابندی لگا دی تھی کیونکہ سرحدی جھڑپوں پر ممالک کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی تھی۔ جون 2020 میں، ہندوستانی اور چینی فوجیوں نے اپنی سرحد کے ایک متنازعہ حصے پر کلبوں، پتھروں اور مٹھیوں کے ساتھ لڑائی کی، جس میں 20 ہندوستانی اور چار چینی فوجی مارے گئے۔

گزشتہ سال فروری سے، دونوں ممالک نے کچھ مقامات سے اپنی فوجیں ہٹا لی ہیں، لیکن وہ اب بھی اپنی موجودگی برقرار رکھے ہوئے ہیں۔ مارچ میں، چینی وزیر خارجہ وانگ یی نے نئی دہلی کا دورہ کیا تاکہ فوجیوں کی واپسی کو تیز کرنے اور صورت حال کو کم کرنے کے امکان پر تبادلہ خیال کیا جا سکے۔

جرمنی میں یوکرینی فوجیوں کی تربیت شروع:روس سخت ناراض