fbpx

فوج اورعدلیہ کے خلاف مواد نشر کرنے پر قانونی کاروائی کی جائے گی،پیمرا کی الیکٹرانک میڈیا کو سخت وارننگ جاری

پیمرا نے ریاستی اداروں کے خلاف مواد نشر کرنے سے باز رہنے کی ہدایا ت جاری کردیں۔

باغی ٹی وی : پیمرا کی جانب سے جاری نوٹس میں کہا گیا ہے کہ یہ دیکھا گیا ہے کہ چند سیٹلائٹ ٹی وی چینلز ایسا مواد نشر کر رہے ہیں جو ریاستی اداروں یعنی مسلح افواج اور عدلیہ کے خلاف نفرت پھیلانے کے مترادف ہے ایسے مواد کو نشر کرنا پیمرا الیکٹرانک میڈیا (پروگرامز اینڈ ایڈورٹائزمنٹ) کی اتھارٹی کی دفعات کی جاری کردہ ہدایات کی خلاف ورزی ہے۔

سوزوکی نے رواں سال تیسری مرتبہ اپنی گاڑیوں کی قیمتیں بڑھا دیں


نوٹس میں کہا گیا کہ ضابطہ اخلاق 2015 اور سپریم کورٹ کی طرف سے وضع کردہ اصولوں کا یہاں ذکر کرنا ضروری ہے کہ اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین کے آرٹیکل 19 کے مطابق آزادی اظہار رائے ہر شہری کا بنیادی حق ہے تاہم یہ حق اسلام کی شان و شوکت یا پاکستان کی سالمیت کے تحفظ یا دفاع کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کی گئی معقول پابندیوں کے ساتھ مشروط ہے یا اس کے کسی حصے کے ساتھ غیر ملکی ریاستوں کے ساتھ دوستانہ تعلقات عامہ کے امن عامہ یا اخلاقیات یا توہین عدالت [کمیشن] کے سلسلے میں ایک جرم ہے-

مندرجہ بالا تمام سیٹلائٹ ٹی وی چینلز کے لائسنسوں کو یہاں سے ہدایت کی جاتی ہے کہ وہ بتائے گئے اصولوں پر عمل کریں ۔ معزز اسلام آباد ہائی کورٹ اسلام آباد کے کرمنل اوریجنل نمبر 270/2019 مورخہ 25-11-2019 میں سنائے گئے فیصلے پر عمل کریں اور سخت شکایت کو یقینی بنائیں۔ پیمرا قوانین کی مندرجہ ذیل متعلقہ دفعات جو یہاں ذیل میں تیار حوالہ کے لیے پیش کی گئی ہیں:

میر جعفر اور صادق وہ ہوتے ہیں جو قوموں میں تقسیم پیدا کریں ،طاہر اشرفی

پیمرا آرڈیننس 2002 کا سیکشن 20(ایف) جیسا کہ پیمرا (ترمیمی) ایکٹ 2007 میں ترمیم کی گئی ہے:

اس آرڈیننس کے تحت لائسنس جاری کرنے والا شخص اتھارٹی کے منظور کردہ پروگراموں اور اشتہارات کے ضابطوں کی تعمیل کرے گا اور کوڈ کی تعمیل کو یقینی بنانے کے لیے اتھارٹی کو مطلع کرتے ہوئے اندرون خانہ مانیٹرنگ کمیٹی کا تقرر کرے گا۔

پیمرا کے قواعد 15(1) پیمرا کے قوانین: نشریاتی میڈیا یا ڈسٹری بیوشن سروس آپریٹر کے ذریعے نشر یا تقسیم کیے جانے والے پروگراموں اور اشتہارات کا مواد آرڈیننس تھیسس کے سیکشن 20 کے ضابطوں کی تصدیق کرے گا جو ضابطہ لائسنس کی شرائط و ضوابط شیڈول اے کے سیکشن میں بیان کیا گیا ہے –

الیکٹرونک میڈیا کوڈ آف کنڈکٹ 2015: 3(1)(j) کے بنیادی اصول:- لائسنس اس بات کو یقینی بنائے گا کہ کوئی ایسا مواد نشر نہ کیا جائے جس میں عدلیہ یا افواج پاکستان کے خلاف اشتعال انگیزی ہو۔

مسجد وزیر خان کیس: صبا قمر اور بلال سعید الزامات سے بری

خبروں اور حالات حاضرہ کے پروگرام: لائسنس اس بات کو یقینی بنائے گا کہ:- ذیلی عدالتی معاملات پر پروگرام معلوماتی انداز میں نشر کیے جاسکتے ہیں اور انہیں عارضی طور پر ہینڈل کیا جائے گا بشرطیکہ کوئی ایسا مواد نشر نہ کیا جائے جو عدالتی ٹربیونل یا کسی دوسرے عدالتی یا نیم عدالتی فورم کے ذریعے فیصلہ کو متعصبانہ کرتا ہو۔

4: مزید برآں تمام سیٹلائٹ ٹی وی چینلز کو مزید ہدایت کی جاتی ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ وقت میں تاخیر کا ایک موثر طریقہ کار وضع کیا جائے اور الیکٹرانک میڈیا کوڈ آف کنڈکٹ 2015 کی شق 17 کے تحت ایک غیر جانبدار اور آزاد ادارتی بورڈ تشکیل دیا جائے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ ان کا پلیٹ فارم کسی کی طرف سے کسی بھی ریاستی اداروں کے خلاف کسی بھی طرح سے توہین آمیز تبصرے نپہیں کر رہا خلاف ورزی کی صورت میں پیمرا آرڈیننس 2002 کے سیکشن 27 ،29، 30 اور 33 کو ختم کرکے قانونی کارروائی کی جائے گی جیسا کہ پیمرا (ترمیمی) ایکٹ 2007 میں ترمیم کی گئی ہے۔

کہا گیا کہ یہ معاملہ چیئرمین پیمرا کی منظوری سے جاری کیا گیا ہے۔

عمران خان نے کل اداروں کے خلاف زہر اگلا ہے،وزیراعظم