fbpx

روپے کے مقابلے ڈالر کی بے قدری کا سلسلہ جاری

روپے کے مقابلے ڈالر کی بے قدری کا سلسلہ جاری

باغی ٹی وی : ملک بھر میں روپے کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قیمت ایک مرتبہ پھر تیزی سے گرنے لگی۔ ڈالر سستا ہونے سے بیرونی قرضوں 140 ارب روپے کمی ہوئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ملک بھر میں معاشی اعشاریے کے حوالے سے اچھی خبروں، مسلسل بڑھتے ہوئے ترسیلات زر اور آئی ایم ایف کی طرف سے پاکستان کے قرض پروگرام کی بحالی کے اثرات روپے پر پڑنے لگے، جس کے باعث روپیہ تگڑا ہو رہا ہے۔

سٹیٹ بینک آف پاکستان کی سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق رواں ہفتے کے چوتھے کاروباری روز کے دوران انٹر بینک میں روپے کے مقابلے میں امریکی ڈالر 33 پیسے سستا ہو گی، قیمت 159 روپے 26 پیسے سے گر کر 158 روپے 93 پیسے ہو گئی ہے۔

یکم فروی سے اب تک ڈالر ایک روپیہ 29 پیسے سستا ڈالر سستا ہونے سے بیرونی قرضوں کے بوجھ میں 140 ارب روپے کمی ہوئی ہے.دوسری طرف اوپن مارکیٹ میں ڈالر 25 پیسے سستا ہوااور نئی قیمت 159 روپے 20 پیسے ہو گئی ہے.

واضح ‌رہےکہ اپریل 2019 میں ڈالر نے بڑی چھلانگ لگائی تھی اور 141 روپے 50 پیسے پر آ گیا۔ مئی میں اس کی قیمت میں تاریخ کا ایک بڑا اضافہ دیکھا گیا اور یہ 151 روپے تک پہنچ گیا۔جون میں ڈالر نے تمام ریکارڈ توڑ دیے اور تاریخ کی بلند ترین سطح 164روپے پر پہنچ گیا۔جولائی 2019 میں ڈالر کی اڑان رک گئی اور ڈالر کمی کے بعد انٹربینک میں 160 روپے اور اوپن مارکیٹ میں 161 روپے کا ہوگیا۔

اکتوبر 2019 کے اختتام پر روپے کی قدر مزید بہتر ہوئی اور ڈالر کی قیمت 155.70 روپے رہ گئی۔ نومبر2019 کے اختتام پر ڈالرکی قیمت خرید 155.25 اور قیمت فروخت 155.65 تھی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.