سابق کیوی کپتان برینڈن میک کلم نے بھارتی سازش کو عیاں کر دیا

سابق کیوی کپتان برینڈن میک کلم نے بھارتی سازش کو عیاں کر دیا
باغی ٹی وی : بھارتی لیگ کی سازشیں اور خفیہ کاروائیاں آہستہ آہستہ منظر عام پر آنے لگ گئی ہیں. سابق کیوی کپتان برینڈن میک کلم نے ممکنہ بھارتی سازش کا پردہ چاک کرتے ہوئے واضح کردیا ہے کہ کورونا وائرس کی وجہ سے رواں برس شیڈول ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ آئندہ سال تک موخر کیا جا سکتا ہے جبکہ اکتوبر اور نومبر میں آئی پی ایل کو ممکن بنانے کی کوشش کی جائے گی۔

دوسری طرف میڈیا رپورٹ کے مطابق برینڈن میک کلم نے شرط لگاکر بھی پختہ دعویٰ کرتے ہوئے کہا ہے کہ تو انہیں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کا انعقاد خطرے سے دوچار دکھائی دے رہا ہے کیونکہ موجودہ حالات میں 16 ٹیموں اور ان کے سپورٹ اسٹاف کے علاوہ براڈ کاسٹرز کو مختلف مقامات پر لے جانا اتنا آسان نہیں ہوگا جبکہ انہیں اس بات کا بھی یقین نہیں کہ میگا ایونٹ بند دروازوں میں کھیلا جا سکتا ہے۔

آئی پی ایل کی فرنچائز کولکتا نائٹ رائیڈرز کے ہیڈ کوچ کا کہنا تھا کہ ان کے خیال میں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کیلئے دو ہزار اکیس میں کوئی ونڈو تلاش کی جا سکتی ہے جس کی بدولت آئی پی ایل کے رواں برس انعقاد کا دروازہ کھل جائے گا۔

خدشہ ظاہر کرتے ہوئے .سابق کیوی وکٹ کیپر بیٹسمین کا کہنا تھا کہ آئی پی ایل کا بند دروازوں میں انعقاد بھی خارج از امکان نہیں کیونکہ کرکٹ کے دیوانے ملک بھارت میں ٹی وی پر میچز دیکھنے والوں کی بھی کوئی کمی نہیں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ آئی سی سی اور عالمی کرکٹ کو میچوں کے انعقاد کیلئے شائقین کی ضرورت ہے لیکن بھارت کیلئے تجارتی اعتبار سے کوئی مشکل نہیں جہاں کرکٹ کو ٹی وی پر دیکھنے والے کافی ہیں لہٰذا آئی پی ایل کیلئے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ آئندہ برس منتقل ہو سکتا ہے
اس سے پہلے یہ کہا گیا تھا کہ دنیا بھر میں کورونا وائرس نے جہاں معاشی ، سماجی سرگرمیوں کو متاثر کیا وہاں کھیلوں کی تمام سرگرمیاں بھی منجمد ہو کر رہ گئی ہیں جب لوگ نہ ہوں تو دنیا کا کوئی کام نہں‌چل سکتا. اسی سلسلے سے ٹی 20 کرکٹ ورلڈکپ کے حوالے سے ایک تجویز سامنے آئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ میگا ایونٹ خالی سٹیڈیمز میں کرایا جائے۔

کورونا وائرس کی عالمی تباہی کی لپٹ میں ہر کوئی ہے۔ جن لوگوں کو یہ نہیں لگی وہ اس کے خوف میں رہ رہے ہیں اور خوف بالکل حقیقی ہے جس سے کوئی فرار نہیں۔ وبا دنیا کے مختلف ممالک میں تیزی سے ایک انسان سے دوسرے انسان تک پھیل رہی ہے

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.