شرم سے ڈوب مرنے کا مقام ہے

شرمین صاحبہ پاکستان کا منفی چہرہ دیکھانے کے لیے یہاں کی عورتوں پر ہونے والے ظلم پر ڈوکومنٹری بنا کر تو متعدد عالمی ایوارڈ لیتی رہی ہے

لیکن کشمیر میں 72 سال سے عورتوں کے ساتھ ریپ اور زیادتیاں ہو رہی ہیں وہاں کی عورتیں کیا عورت نہیں ہے؟ یا ان کو ڈر ہے کہ بھارت کے مخالف بولنے پر ان کو ایوارڈ نہیں ملے گا؟

مظلوم کشمیری عورتوں پر ان کی خاموشی بتاتی ہے کہ شرمین بھی اپنی ہم سوچ ملالہ کے ہمراہ نیپال کے دورے پر ہیں.

شرم سے ڈوب مرنے کا مقام ہے!!

یاد رہے کشمیر میں بھارتی جارحیت کا کشمیری ماں بہنیں کیسے سامنا کر رہی ہیں. مردوں کے ساتھ عورتیں بھی اپنی آزادی کے لیے احتجاج کر رہی ہیں.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.