fbpx

سیاست وہ کھیل ہے جہاں صدیوں میں کوئی "قائد اعظم "پیدا ہوتا ہے . تحریر : حنظلہ ملک

آج کل ایک پیغام پورے ارد گرد منتقل ہو رہا ہے، جس میں محمد علی جناح (قائداعظم) اورعمران خان کے درمیان ایک مقابلے ہے. جیسا کہ محمد علی جناح اعلی تعلیم کے لئے انگلینڈ گئے اوراس کے بعد وہ مل کربھارت واپس چلے گئے اور وہاں اپنی پسندیدہ وکالت حاصل کی. اسی طرح عمران خان کے ساتھ معاملہ تھا وہ اپنی اعلی تعلیم کے لئے بھی انگلینڈ گئے اوراس کی تکمیل کے بعد، انہوں نے پاکستان کو ترجیح دی. وہ واپس آیا اورایک کرکٹر کے طورپراپنا کیریئرشروع کردیا. اس کے بعد محمد علی جناح مسلم کو ایک غیرمسلم لڑکی کوتبدیل کر دیا اوراس سے شادی کی. لیکن بدقسمتی سے شادی طویل عرصہ تک نہیں ہوسکی تھی.عمران خان کو بھی اسی حالت کا سامنا کرنا پڑا تھا. جب ایم علی جناح نے اپنی پیشہ ورانہ کیریئر یا شاید ان کی عملی زندگی شروع کی تو اس نے اپنی راہ میں بہت سے مشکلات کا سامنا کرنا پڑا. اسی طرح عمران خان کو بھی بہت مشکلات اور تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا. ایک وقت آیا جب محمد علی جناح اتنے سنجیدہ ہوگئے کہ وہ متحدہ بھارت چھوڑ کربرطانیہ چلے گئے لیکن علامہ اقبال نے مجبور کیا کہ وہ اپنے ملک واپس آ جائیں. اسی طرح عمران خان نے اسی طرح کے تخفیف کو محسوس کیا اوراپنے ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا لیکن ضیاالحق کی وجہ سے ٹیم واپس آ کر ملک کو ورلڈ کپ سے نوازا.

جب محمد علی جناح نے یہ محسوس کیا کہ ہندوؤں اور برادریوں کے ذیلی براعظم کے مسلمانوں کے ساتھ ایک تبعیض علاج تھا اور وہ وہاں مناسب انصاف حاصل نہیں کرسکتے تھے، اس نے تمام بھارتی نیشنل کانگریس کواچھی طرح سے بیدارکیا اوراس سے منسلک کیا مسلم لیگ اس کے بعد انہوں نے علیحدگی کے تمام مسلمانوں کوعلیحدہ ریاست کے حصول کے لئے متحد کیا، ایک ریاست جہاں جہاں تمام مسلمانوں اوردیگراقلیتیں آزادانہ طور پر ان کی زندگی رہ سکتی تھیں. ذات، رنگ، تخلیق یا حیثیت کے امتیازی سلوک کے باوجود، زیادہ تر مسلمانوں نے پاکستان کی کامیابی کے لئے محمد علی جناح کی مدد کی.

اس وقت کوئی سندھی، پنجابی یا بلوچی نہیں تھا، ہر ایک کا واحد مقصد تھا اور یہ ایک آزاد ریاست تھا جہاں تمام مذہب سے تعلق رکھنے والے تمام افراد ان کی خاص اصولوں کے مطابق کسی بھی مداخلت کے بغیرزندہ رہ سکتے تھے. لہذا مسلمانوں کو ایک علیحدہ ریاست حاصل کرنے میں کامیابی ملی تھی اوربرطانیہ باقی مطالبات کی منظوری کے لۓ دوسرے ممالک کے ساتھ چھوڑ گئے تھے. لیکن بدقسمتی سے، محمد علی جناح کے بعد، کوئی دوسرے رہنما نہیں ہے جو کسی خاص مقصد یا خاص مقصد کے تحت مسلمانوں کو متحد کرسکتے ہیں. اگر ایسا رہنما تھا تو، مشرقی بنگال کبھی کبھی بنگلہ دیش نہ بنیں گے، وہاں بلوچستان میں جانے والی کوئی الگ ریاست تحریک نہیں ہوگی، شیعوں اور سنن کے درمیان کوئی تنازع نہیں ہوگا، اور وہاں نہیں لسانی بنیاد پر مسائل ہیں. ظاہر ہے سب لوگ اس ملک کو اپنا پاکستان یا سامراجی ریاست بنانا چاہتے ہیں، جو یہ نہیں ہے اور یہ نہیں ہوسکتا. محمد علی جناح نے اس اسلامی جمہوریہ ریاست کی بنیاد رکھی ہے. آج، ہمیں دوبارہ اس ریاست کو مضبوط کرنا ہوگا.

جب عمران خان نے انتخابی مہموں کے دوران ایک تاریخی عوامی اجلاس کی صدارت کی تو انہوں نے پاکستان کو ایک اسلامی ریاست دوبارہ بنانے کا نعرہ اٹھایا. پاکستان کو اسی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے جسے اب 1947 میں سامنا ہوا تھا. ہم اب بھی غلامی کی زنجیروں میں پابند ہیں، چاہے امریکہ یہ ہے کہ ہم اس سے پہلے یا سامراجی نظام کو روکتے ہیں. عمران خان دراصل الیکٹرانکس کو منتخب کرنے میں یقین رکھتے ہیں اور پارلیمنٹ میں ہونے والے خلافت کے نظام کے بارے میں لاتے ہیں. اگر عمران خان تمام مسلمانوں اور اقلیتوں کو ایک ایسی قوم کے طور پر اسلامی ریاست کی ایک چھت کے تحت جمع کرے، جہاں ذات، تخلیق، حیثیت اور فخر کی کوئی تبعیض نہیں ہوگی، جہاں کوئی بھی سندھی یا بلوچی نہیں ہے، نہ ہی کوئی سیکولر. ہر ایک کا وہی مقصد ہوگا جسے پاکستان کی خوشحالی اور ترقی ہے. اگر ایسا ہوتا ہے تو، عمران خان اگلے رہیں گے

@Hanzi87