fbpx

اسپیکر قومی اسمبلی کو پی ٹی آئی کے 8 ارکان کے استعفے منظور کرنے کی تجویز

عمران خان کے خلاف قومی اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد منظور ہونے اور موجودہ حکومت قائم ہونے کے بعد تحریک انصاف اور عوامی مسلم لیگ نے قومی اسمبلی سے استعفوں کا اعلان کردیا تھا۔
اس وقت کے ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری نے استعفے منظور کرلئے تھے تاہم موجودہ اسپیکر نے ان استعفوں پر قانون کے مطابق کارروائی کی رولنگ جاری کی ۔
سما ء ٹی وی کے مطابق: "راجہ پرویز اشرف نے تحریک انصاف کے ارکان کے استعفوں کی تصدیق کے لیے انہیں قانون کے مطابق طلب کیا لیکن کوئی رکن پیش نہ ہوا۔
اسپیکر راجہ پرویز اشرف نے تحریک انصاف کے ارکان کی جانب سے دیئے گئے استعفوں کی تصدیق کے لئے نہ آنے پر قومی اسمبلی سیکرٹریٹ سے قانونی رائے مانگی تھی۔
قومی اسمبلی سیکرٹریٹ نے اس معاملے پر اپنی ایڈوائس اسپیکر کو بھیج دی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ایوان میں اعلان کرنے والے ارکان کے استعفے قبول کئے جائیں۔
صحافی عثمان خان بتاتے ہیں کہ: تحریک انصاف کے جن رہنماؤں کے استعفے منظور کرنے کی ایڈوائس دی گئی ہے ان میں عمران خان، شاہ محمود قریشی، فواد چوہدری، اسد عمر، شیریں مزاری، مراد سعید، علی محمد خان اور فرخ حبیب شامل ہیں۔
اسپیکر نے قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کی ایڈوائس پر حکمران اتحاد سے مشاورت کا فیصلہ کیا ہے۔
دوسری جانب صورت حال یہ ہے کہ تحریک انصاف کے ارکان مستعفی بھی ہیں اور رکن قومی اسمبلی کی حیثیت سے تنخواہیں اور مراعات بھی وصول کررہے ہیں۔