سٹیٹ بنک آف پاکستان نے بنک آف پنجاب کے صدر طالب رضوی کی تعیناتی مسترد کر دی

سٹیٹ بنک آف پاکستان نے بنک آف پنجاب کے صدر سید محمد طالب رضوی کی تعیناتی مسترد کر دی ہے،

باغی ٹی وی کی رپورٹ‌ کے مطابق بنک آف پنجاب نے سید محمد طالب رضوی کو صدر مقرر کیا تھا تاہم وہ سٹیٹ بینک کی فٹ اینڈ پراپر پالیسی کے تحت تعلیمی قابلیت، تجربہ اور شہرت کے معیار پر پورا نہیں اترسکے جس کی وجہ سے تین ماہ قبل تعیناتی کا نوٹیفکیشن جاری ہونے کے باوجود وہ اپنے عہدے کا چارج نہیں سنبھال سکے تھے تاہم اب سٹیٹ بنک آف پاکستان نے ان کی تعیناتی کو واضح طور پر مسترد کر دیا ہے،

رپورٹ کے مطابق صوبائی حکومت نے پنجاب بینک کا نیاصدر لگانے کیلئے باقاعدہ مشاورت شروع کردی ہے، بتایا گیا ہے کہ جس دن پنجاب حکومت نے سید محمد طالب رضوی کی تعیناتی کا حکم نامہ جاری کیا تو بینک کے سیکرٹری نے تمام ضروری کاغذات ، اسناد اور تجربے کے سرٹیفکیٹ تصدیق و کلیرنس کیلئے سٹیٹ بینک کو بھجوا دیئے تھے تاکہ انکی بروقت تصدیق ہوسکے اور نئے صدر اپنے عہدے کا چارج لے سکیں، سٹیٹ بینک فٹ اینڈ پراپر پالیسی کے تحت کسی بھی بینک کے نئے صدر کی تعلیمی قابلیت اور تجربہ کی تصدیق خود کرتا ہے،

میڈیا رپورٹس کے مطابق سٹیٹ بینک کے ایک افسرکا اس حوالہ سے کہنا ہے کہ نامزد صدر پر سابق ادارے میں بڑے قرضہ جات جاری کرنے کا الزام ہے جس کی ایک ادارہ تحقیقات کررہا ہے اور اس کیس میں کچھ بینک کے اہلکار زیر حراست بھی رہے، واضح رہے کہ سٹیٹ بنک کی طرف سے لیٹر جاری کرتے ہوئے بینک آف پنجاب کو بھی آگاہ کر دیا گیا ہے اور صوبائی حکومت نے پنجاب بینک کا نیاصدر لگانے کیلئے مشاورت کا آغاز کر دیا ہے،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.