fbpx

سید علی گیلانی یک عہد ساز شخصیت تحریر: محمد عبداللہ گِل

کچھ شخصیات  دنیا میں آتے ہیں ان کا مقصد ان کے کارناموں میں صاف واضح ہوتا ھے۔ان کی محنت،مقصد کے حصول کے جدوجہد دنیا کے سامنے عیاں ہوتی ہیں۔یہ وہی لوگ ہوتے ہیں جو قائد کہلاتے ہیں۔
انھی قائدین میں آزادی کی جدوجہد کرنے والے قائدین حریت میں سے موجودہ صدی کا عظیم ترین قائد اور حریت کے لیے جدوجہد کرنے والی عظیم ہستی کا نام سید علی گیلانی ھے۔
یہ کیسی عظیم شخصیت کا مالک شخص تھا کہ بچپن سے لے کر اب تک ایک ہی نعرہ بلند کر رہا تھا
"ہم پاکستانی ہیں
پاکستان ہمارا ھے”
یہ وہی شخص تھا جس نے ہندو بنیے کو کشمیر جنت نظیر وادی پر قابض ہوتے دیکھا تھا۔جس نے پھر اس قوم کشمیر کے لیے قائد اعظم محمد علی جناح کا یہ فرمان سنا پڑھا تھا
"کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے”
سید علی گیلانی وہی شخص تھا کہ جس نے ہمیشہ دن رات گرمی سردی،بہار،خزاں میں کشمیری قوم کو پاکستان سے محبت کا درس اور سبق گھول کر پلا دیا تھا۔یہ وہی شخص تھا کہ جس کا نام کشمیر کے بچے بچے کی زبان پر ھے۔ہر وہ شخص جو تحریک آزادی کشمیر کے نام سے آشنا ہے وہ سید علی گیلانی کے نام سے واقف ہو گا۔
یہ وہی شخصیت تھی کہ 91 سال عمر پائی ان 91 سال میں ایک بار بھی ہندو بنیا اور اس کی فوج،پھر فوج کا تارچر کرنا،کبھی عقوبت خانوں میں بند ہونا،کبھی نظر بندیوں کی مشکلات سے گزرنا ان کی زبان سے یہ نہ ہٹا سکا کہ
"ہم پاکستانی ہیں
پاکستان ہمارا ھے”
میں نے اس عظیم شخصیت کے بارے میں اس وقت سننا شروع کیا جب سے میں نے ہوش سنبھالا کبھی ٹیلی ویژن پر کبھی ریڈیو پر کہ سید علی گیلانی نے ہڑتال کی کال دی ھے۔
کبھی یہ سنا کہ سید علی گیلانی نے انڈین الیکشن کا بائیکاٹ کیا ھے۔جب ان ہڑتالوں،ان جلوسوں،ان جلسوں،ان بائیکاٹ کی اصل وجہ ایک ہی تھی
"جیے گے بھی پاکستان کے ساتھ
مرے گے بھی پاکستان کے ساتھ”
معزز قارئین! سید علی گیلانی وہی شخصیت تھی کہ جب دنیا پاک فوج کو گالیاں دے رہی پاک فوج کے خلاف پروپیگنڈہ عروج پر تھا تب سید علی گیلانی نے
"پاک فوج زندہ باد
پاکستان زندہ باد ”
کا نعرہ لگایا تھا بلکہ نہ صرف خود لگایا بلکہ ہر زبان زدعام کروایا۔اس شخصیت کہ محنت اور روعب و دبدبے کی تو کیا بات ھے۔کہ سید علی گیلانی جب زندہ تھے تو ان کو نظربند کر دیا جاتا تھا کیوں کہ انڈین میڈیا کو بھی پتہ تھا کہ سید علی گیلانی کی ایک کال پر کشمیریوں نے سر تسلیم خم کر دینا ھے۔لیکن غور کرنے کی بات یہ گے کہ جب سید علی گیلانی کا آج انتقال ہوا ھے ان کے انتقال کے فورا بعد کشمیر میں کرفیو نافذ کر دیا گیا ھے کیوں کر دیا گیا ھے کیونکہ دشمن انڈیا کو بھی پتہ ھے کہ یہ اکیلا ایک علی گیلانی نہیں ھے اس عظیم قائد نے پوری کشمیری قوم کو سید علی گیلانی بنا دیا ھے۔
سید علی گیلانی رحمہ اللہ کی زندگی پوری کی پوری آزادی کشمیر کی جدوجہد میں گزری۔اس جدوجہد کے دوران تحریک آزادی کشمیر میں عروج و زوال بھی آیا لیکن اس شخصیت نے اپنی قوم کو درس تھا
"اللہ کی رحمت سے مایوس نہیں”
بلکہ کرنے کا کام ایک ہی ھے "لھم یوقنون” اسی ذات باری تعالی پر یقین رکھنا ھے۔
سید علی گیلانی رحمہ اللہ کی جدوجہد کے ثمرات دشمنان  نے برہان مظفر وانی شہید رحمتہ اللہ کی صورت میں دیکھ لیے ہیں۔سید علی گیلانی نے پوری قوم کو ہی برہان وانی کا جانشین بنا دیا تھا۔اسی وجہ سے ان کی جدوجہد سے گھبرا کو ان کو سینکڑوں بار قید و بند کی صعوبتوں سے گزارا گیا
لیکن مجھے یہاں حسرت موہانی کا ایک شعر یاد آ رہا ھے
ہے مشق سخن بھی جاری اور چکی کی مشقت بھی
ایک طرفہ تماشا ھے حسرت کی طبیعت بھی
لیکن سید علی گیلانی رحمہ اللہ نے ان صعوبتوں کو آڑے نہیں آنے دیا بلکہ نوجوانوں کو تیار کیا امت کی ماؤں بہنوں کو کشمیر کے لیے کھڑا کر دیا۔اسی کیفیت کو اگر میں شاعر کے الفاظ میں قلم بند کروں تو
ہر چند ہے دل شیدا حریت کامل کا
منظور دعا لیکن ہے قید محبت بھی
سید علی گیلانی رحمہ اللہ نے 91 برس کی عمر میں یہ ثابت کر دیا کہ مسلمان رب تعالی پر یقین رکھنے والی قوم ھے۔دیٹھ سیل میں رکھے جانے کے باوجود اور خراب طبیعت میں مناسب طبی سہولیات بھی نہ دی گئی جو کہ عالمی قوانین کی بھی خلاف ورزی تھی لیکن سید علی گیلانی رحمہ اللہ نے کبھی بھی اپنے لیے کال نہیں دی بلکہ کشمیریوں کے اور پاکستانیوں کے لیے جدوجہد کی
"جو چاہو سزا دے لو تم اور بھی کھل کھیلو
پر ہم سے قسم لے لو کی ہو جو شکایت بھی”
آج امت مسلمہ کو کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کے پشت پناہی کی ضرورت ھے جیسا کہ اقبال کا شعر ھے 
کافر ھے تو شمشیر پر کرتا ھے بھروسہ
مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ھے سپاہی
سید علی گیلانی نے بے تیغ ہو کر اپنی سیاسی فکر کے ذریعے کشمیر جدوجہد آزادی کی حمایت کی بلکہ بچوں کی زبان پر بھی یہ جاری کروا دیا
پاکستان ہمارا ھے
پاکستان زندہ باد
ان شاءاللہ ایک وقت آئے گا جب کشمیر کو آزادی نصیب ہو گی جب سید علی گیلانی کی محنت رنگ لائے گی۔وہ وقت آنے والا ھے جب کاروان حریت کو کامیابی ملے گی۔میرے نزدیک قائد حریت سید علی گیلانی رحمہ اللہ نے پورے کفر کا مقابلہ کیا ھے۔سید علی۔گیلانی نے اپنی جدوجہد کے ذریعے بچوں سے لے کر ڈگری ہولڈر تک کو بھارت کے خلاف کھڑا کر دیا تھا۔اسی وجہ سے دشمن کو ان کے نام سے خوف تھا۔اس عظیم شخصیت کو تا قیامت آزادی کے متوالوں میں یاد رکھا جائے۔اللہ تبارک و تعالی ان کی مغفرت فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!