fbpx

حکومت اورمظاہرین کےدرمیان مذاکرات کی پریس کانفرنس کیوں ملتوی ہوئی ؟اب کب ہوگی وقت بھی بتادیا گیا

اسلام آباد :حکومت اور مظاہرین کے درمیان مذاکرات کی پریس کانفرنس کیوں ملتوی ہوئی ؟ اہم وجہ سامنے آگئی ،اطلاعات کے مطابق حکومت اور مظاہرین کے درمیان مذاکرات کی پریس کانفرنس اچانک ملتوی کردی گئی ہے اور یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ اس کےپیچھے کچھ اہم عوامل کارفرما ہیں

ذرائع کے مطابق اس وقت کچھ ایسی اطلاعات ہیں‌کہ 12 رکنی وفد اور مفتی منیب الرحمان میں فقہی امور پر اختلافات ہیں،یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ بریلوی مکتبہ فکر کے کچھ علما کو مفتی منیب الرحمان کی شخصیت پر بھی اعتراض ہے،

ادھر ذرائع کے مطابق اس حوالے سے اب سپیکر آفس میں ہونے والے مشاورتی اجلاس میں صاحبزادہ حامد رضا سمیت 12 رکنی کمیٹی سے بھی مشاورت ہوگی،

یہ بھی بتایا جارہا ہے کہ امکان ہے کہ اس حوالے سے مزید دو سے تین گھنٹے تک مشاورت کی جائے گی، ذرائع کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ صاحبزادہ حامد رضا کو علما و مشائخ کے اتفاق رائے کے بعد کمیٹی کا سربراہ بنایا گیا،

اس حوالے سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ اس حوالے سے عین وقت پر صاحبزاد حامد رضا اور دیگر علما و مشائخ کو پریس بریفنگ کا بتایا گیا، عین وقت پر کمیٹی کا بریفنگ میں پہنچنا ممکن نہیں تھا،

دوسری طرف ذرائع مصالحتی کمیٹی سے معلوم ہوا ہے کہ مظاہرین کی جانب سے صاحبزادہ حامد رضا اور جید علماء و پیران پر مظاہرین کو زیادہ اعتماد ہے،

ذرائع مصالحتی کمیٹی ادھر ذرائع نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ مفتی منیب الرحمان جب چیئرمین روئت ہلال کمیٹی تھے تو انہوں نے اپنے مکتب کو یکسر نظر انداز کیا،

ذرائع مصالحتی کمیٹی کا یہ بھی کہنا ہے کہ سپیکر قومی اسمبلی کی رہائش گاہ پر ہونے والی میٹنگ پر ہم سے مشاورت کی جارہی ہے،

اس موقع پر یہ بھی کہا گیا کہ مفتی منیب الرحمان بڑے ہیں مگر فیصلے تمام علماء مشائخ کو اعتماد میں لے کر ہونگے تو قابل عمل ہونگے،کسی بھی قسم کے یکطرفہ فیصلے کو عوام قبول کریں گے نہ وہ دیرپا ہونگے،

ادھر ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ شاہ محمود قریشی اوراسد قیصرنے اعلان کیا ہے کہ اب پریس کانفرنس 3بجکر 15منٹ پر ہوگی