fbpx

لڑکے نے لڑکی کی محبت میں برقع بھی پہن لیا:لیکن پھربھی جان بخشی نہ ہوئی

لاہور:لڑکے نے لڑکی کی محبت میں برقع بھی پہن لیا:لیکن پھربھی جان بخشی نہ ہوئی ،اطلاعات کے مطابق لڑکے نے لڑکی کی محبت میں برقع پہن لیا، برقع پہن کر ہی عدالت پہنچ گیا.لیکن اس کے باوجود پولیس اورلڑکی کے ورثا کے عذاب سے نہ بچ سکا

؛۔تفصیلات کے مطابق پولیس اور مخالفین سے بچنے کے لیے برقع پہن کر عدالت آنے والا نوجوان پکڑا گیا ،فراز نامی نوجوان نے پسند کی شادی کر رکھی تھی اورعبوری ضمانت کرانے عدالت آیا تھا۔

ترجمان لاہور پولیس کے مطابق لڑکی کے والدین نے فراز نامی ملزم پر اغوا ء کا مقدمہ درج کروا رکھا تھا اورفراز اپنی عبوری ضمانت کروانے کے لیے برقع پہن کر عدالت پہنچا ،پولیس نے مشکوک جان کر برقع پوش کو روکا تو وہ لڑکا نکلا ۔

ملزم نے موقف اپنایا کہ پولیس کی گرفتاری اور لڑکی کے ورثا ء سے بچنے کے لیے برقع استعمال کیا ۔پولیس نے فراز کو گرفتار کر کے کاروائی کا آغاز کر دیا ہے۔

ایڈیشنل سیشن جج محمد سیعد نے اغوا کیس میں سماعت کی۔عدالت نے ملزم فراز علی کے خلاف اغوا کیس میں 16 جون تک عبوری ضمانت منظور کر لی۔لڑکے نے عدالت میں بیان دیا کہ پسند کی شادی کی ہے۔سسرال والوں کے ڈر سے برقع پہن کر عدالت آئے۔

فراز علی نے دعا ہما سے پسند کی شادی کی تھی جس پر لڑکی کے والدین نے تھانہ مصری شاہ میں اغوا کا مقدمہ درج کرا رکھا ہے۔