fbpx

جتوئی : تحصیل میں3 گروپ سراقتدار ، ترقیاتی کام زیرو، عوام بھی آئندہ انتخابات میں اپنی پاوردکھانے کو تیار

باغی ٹی وی ،جتوئی( نذیر شجراء کی رپورٹ)تحصیل جتوئی میں تین گروپ سراقتدار ترقیاتی کام زیرو عوام بھی اپنے فیصلے خود کرنے پر تیار
تفصیلات کے مطابق تحصیل جتوئی دو دریاؤں کے درمیان ایک زرعی علاقہ ہے جہاں کئی قومیں بستی ہیں ان میں جتوئی قوم کا ایک جانا پہچانا نام ہے اس نام سے تحصیل جتوئی منسلک ہے جتوئی بزرگ سردار کوڑا خان ایک ایسے انسان تھے جنہوں نے اپنی ساری جائیداد زرعی رقبہ چراسی ہزار کنال اراضی گورنمنٹ اوقاف کو وقف کر دی ، جہاں مظفر گڑھ کے تمام سرکاری دفاتر اسکول کالج سردارکوڑے خان کی وقف کردہ اراضی میں واقع ہیں لیکن جتوئی سیکڑوں لاٹیں ہیں جن کی ہر تین چار سال بعد ٹھیکہ پر دی جاتی ہیں اس رقبہ کی آمدنی کروڑوں روپے ڈی سی ، اے سی اور دوسرے افسروں کے پیٹ کے دوزخ میں جاتی ہے لیکن تحصیل جتوئی پھر بھی اس رقم سے محروم ہو کر رہ جاتی ہے نہ تو کوئی ٹرسٹ ہے ،اگر بات کی جائے زرعی اراضی کی تو ہر سال دریائے سندھ اور دریائے چناب کی نذر ہو جاتی ہے جس سے تحصیل جتوئی ایک پسماندہ علاقوں میں شمار ہوگیا ہے جس کی اصل وجہ دریائے سندھ اور دریائے چناب پر سپر بند نہ ہونا سپر بند نہ ہونے کی وجہ مقامی ایم پی اے، ایم این اے ہیں – آج پوری تحصیل جتوئی کے سیاسی وڈیرے اقتدار کے مزے لوٹ رہے ہیں اگر لغاری سرداروں کی طرف دیکھیں تو ایم پی اے خرم لغاری حلقہ پی پی 275 نے کئ بار سپر بند کا افتتاح کیا لیکن سپر بند نہ بن سکا وہ خود نئی شادی کے بندھن میں بندھ گیا ، تین بار افتتاحی تقریب سے خطاب کیا، تین بار سپر بند نہ بنا، تین بندھن بن گئے، 2018 کے الیکشن میں حلقہ پی پی 272 سے باسط سلطان بخاری ایم پی اے اور این اے 185کی دونوں نشستوں سے کامیاب ہوئے اسے ایک نشست چھوڑنا پڑ گئی حلقہ پی پی پی 275میں اپنی والدہ کو الیکشن لڑنے پر امادہ کیا توآمادہ ایسا کیا کہ ماں کو اپنے چھوٹے بیٹے ہارون بخاری کے مدمقابل الیکشن میں میدان مار لیا، باسط بخاری نے حلقہ کی عوام کی جانب رخ نہ موڑا عمران خان کی حکومت ختم ہونے پر ان کو خاص طور پر لوٹوں میں شمار میں اہم کردار رہا الیکشن کمیشن کی جانب سے لوٹوں کا کردار ادا کرنے پر انکی والدہ زہرابتول کو ڈی سیٹ کر کے دوبارہ الیکشن کروایا تو باسط بخاری اپنی بیگم کو الیکشن لڑنے کیلئے دھکیل دیا تو انکے مدمقابل باسط کابھائی ہارون بخاری اگیا ساتھ جتوئی خاندان کےسابق ایم این اے معظم جتوئی بھی آگئے بخاری خاندان میں نفرتیں مزید بژھ گیں باسط بخاری کو انکی والدہ نے منت سماجت کی کہ اب اپ اپنے چھوٹے بھائی ہارون کو ضمنی الیکشن لڑنے دیں لیکن اقتدار کے مزے لینے والے عوام کی بات کال نہ سننے والے فرعونیت کے مالک کو الیکشن میں شکست کھانی پڑی ، پھر بھی عوام کو چھوڑ کر چلے گئے ،معظم جتوئی الیکشن جیت گئے اب جتوئی تحصیل میں لغاری ایم پی اے. ،جتوئی. ایم پی اے. ،بخاری ایم این اے تین گروپ برسر اقتدار، کام زیرو ،نہ ہسپتالوں کا نظام بہتر ، نہ تھانوں کا نظام صحیح ،نہ پرائس کنٹرول کا عملہ صحیح ،تھانوں میں ٹاؤٹوں کا راج ہے اسسٹنٹ کمشنر جتوئی کی سیٹ خالی ہے اگر کوئی تعینات ہو بھی گیا تو صرف سیاسی لٹیروں کی خدمت گذاری کے لیے ہو گا.