fbpx

کپتان کی حکومت کوگرانا ہی جہاد اکبرہے،PDM شروع دن سےیہ جہاد کررہی ہے:مولانافضل الرحمن کافتویٰ‌

کوئٹہ:عمران خان کی حکومت کوگرانا ہی جہاد اکبرہے،پی ڈی ایم شروع دن سے یہ جہاد کررہی ہےاطلاعات کے مطابق حکومت مخالف اتحاد کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ مشترکہ پارلیمنٹ کے اجلاس میں چھوٹی پارٹیوں کو مشترکہ اجلاس میں جانے کیلئے دباؤ ڈالا جا رہا ہے۔

پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے سربراہ نے کوئٹہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومت چل نہیں رہی، چلائی جا رہی ہے، ہم حکومت چلانے والوں اور چلنے والوں کو بھی جانتے ہیں۔ کہنے کو بہت کچھ ہے مگر ملکی حالات خراب نہیں کرنا چاہتے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کو اکثریت حاصل نہیں، اتحادی ساتھ دینے کو تیار نہیں، نا اہل حکمران اقتدار کو طول دینے کے لیے ناجائز طریقے اپنا رہے ہیں۔ حکومت جعلی پارلیمنٹ کو قانون سازی کے لیے تیار کر رہی ہے۔ مشترکہ اجلاس کو شکست کے خوف سے ملتوی کیا گیا ۔ لوگوں کو سیف ہاؤسز میں لےجایاگیا ہمیں رپورٹ ملی ہیں، حکومت کےپاس جبری اکثریت ہے۔ عدالت سےرجوع کیلئے قوانین کا جائزہ لیاجائےگا۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ 19 چھوٹی پارٹیوں کو مشترکہ اجلاس میں جانےکیلئےدباؤ ڈالا جارہا ہے۔ نومبر سے پہلے آخر جلدی کیوں ہے، یہ معاملے کو مشکوک بناتا ہے۔ سیاست میں ناجائز مداخلت ہو تو پھر شکایت ہمارا حق ہے۔

امیر جمعیت علمائے اسلام ف کا کہنا تھا کہ جب اس وزیراعظم کو منتخب کہا جاتا ہے تو دکھ ہوتا ہے۔ موجودہ حکومت کے ہوتے ہوئے کسی چیز کی توقع نہ رکھیں۔ ملک کو جبر سے چلایا جا رہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ناجائز حکمران کیخلاف ہم جہاد کررہےہیں۔ مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ یہی جہاد اکبر ہے اور پی ڈی ایم شروع دن سے یہ جہاد کررہی ہے ، ان کا کہنا تھا کہ لوگ خودکشیاں کررہےہیں بچوں کو بھوک ان سےدیکھی نہیں جارہی۔ مہنگائی کی وجہ سے لوگ اپنے بچوں کو فروخت کر رہے ہیں۔ عوام پر مہنگائی کے روز بم گرائے جا رہے ہیں۔ مہنگائی کی چکی میں پوری قوم پس رہی ہے۔ پی ڈی ایم عوام آدمی کی آواز ہے۔

سابق جج گلگت بلتستان رانا شمیم کے حوالے سے بات کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ بیان حلفی کی عدالتی تحقیقات ہونی چاہئیں۔ نوازشریف نے واپس آنے کا فیصلہ خود کرنا ہے۔وہ بہت ہوشیارآدمی ہے ، ان کا کہنا تھا کہ پنجاب حکومت گرانےسےپہلے یہ سوچنا ہوگا متبادل کیا ہے۔ متبادل اس سے بھی برا ہوا تو کیا کریں گے۔