fbpx

ٹرانس جینڈرزبل:کیا مسلمان قومِ لوط کا انجام بھول گئے؟ رابی پیرزادہ بھی میدان میں آگئیں

لاہور:سابقہ گلوکارہ رابی پیرزادہ نے والدین کو بچوں کی تربیت کے حوالے سے ایک مشورہ دیا ہے۔ٹوئٹر پر جاری پیغام میں رابی پیر زادہ کا کہنا تھا کہ ہم خود اپنا مستقبل اپنی نسلیں تباہ کر رہے ہیں، جو اصل خواجہ سرا ہیں وہ عزت دار اور شرم والے لوگ ہوتے ہیں لیکن اکثر لوگ مشہور ہونے کے لیے خود خواجہ سرا بن رہے ہیں۔

رابی پیرزادہ نے والدین سے درخواست کی کہ اللہ کا واسطہ اپنی اولاد کو اس فتنے سے محفوظ رکھیں، یہ ہماری قوم کو تباہ کرنے کی سازش ہے، اپنے بچوں کو کہیں ٹرانس جینڈرز کی عزت کریں لیکن انہیں فولو نہ کریں۔

حکومت کی طرف سے اس بل کی منظوری کے بعد جو صورت حال مستقبل میں دکھائی دے رہی ہے اس کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ انھوں نے مزید لکھا کہ ہمارے معاشرے میں ایک ٹرینڈ بن گیا ہے کہ ٹرانس جینڈرز (خواجہ سراؤں)کو پروموٹ کرنا ہے وہ بھی تعلیم اور نوکری پر نہیں بلکہ الٹی سیدھی حرکتوں اور باتوں پر، نئی نسلُ بھی ان کی طرف راغب ہو رہی ہے۔

سابقہ گلوکارہ نے اپنے پیغام میں مزید لکھا کہ اسکول کے بچے بھی ان کو فولو کرتے ہیں، سوشل میڈیا پیجز ان کو پروموٹ کرتے ہیں، قومِ لوط بھول گئے؟

یاد رہے کہ ٹرانس جینڈر افراد کے حقوق کے تحفظ کیلئے قومی اسمبلی سے ٹرانس جینڈر ایکٹ 2018 منظور کیا گیا جس کےبارے میں ماہرین قانون اورعلمائے کرام کا کہنا ہے کہ اتحادی جماعتوں پر مشتمل حکومت نے ہم جنس پرستی کی حمایت کرنے والا بل منظور کیا ہے۔

یہ بل ن لیگ نے جمیعت علمائے اسلام (ف)، پیپلز پارٹی، ایم کیو ایم، اے این پی، بی این پی مینگل، بی اے پی، جمہوری وطن پارٹی اور دیگر تمام اتحادیوں کے ہمرا ہم جنس پرستی کا بل منظور کر لیا۔ ہم جنس پرستی والا ٹرانس جینڈر ایکٹ مئی 2018 میں جمعیت العلما کے اتحادی شاہد خاقان عباسی کے دور میں پاس ہوا

صحافیوں کے خلاف مقدمات، شیریں مزاری میدان میں آ گئیں، بڑا اعلان کر دیا

سرکاری زمین پر ذاتی سڑکیں، کلب اور سوئمنگ پول بن رہا ہے،ملک کو امراء لوٹ کر کھا گئے،عدالت برہم

جتنی ناانصافی اسلام آباد میں ہے اتنی شاید ہی کسی اور جگہ ہو،عدالت

اسلام آباد میں ریاست کا کہیں وجود ہی نہیں،ایلیٹ پر قانون نافذ نہیں ہوتا ،عدالت کے ریمارکس