جوبائیڈن کے جیتنے کی صورت میں ٹرمپ کو سپریم کورٹ سے ریلیف ملنے کے امکانات بہت کم ،ٹرمپ پریشان

واشنگٹن :امریکہ اس وقت سخت مشکل ترین دور سے گزررہا ہے، امریکی قوم تقسیم ہوچکی ہے اوربائیڈن کے بارے میں پشین گوئیاں اب سچ ثابت ہورہی ہیں کہ ڈونلڈ ٹرمپ کو وائٹ ہاوس خالی کرنا پڑےگا، ادھر معاملہ حتمی نتائج کی طرف بڑھ رہا ہے اور پہلی مرتبہ کسی امریکی صدر نے کہا ہےکہ وہ ان نتائج کو نہیں مانتے اوروہ سپریم کورٹ جائیں گے

 

 

 

دوسری طرف امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ امریکی انتخاب جیت چکے ہیں حالانکہ ابھی لاکھوں ووٹوں کی گنتی ہونا باقی ہے، ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ وہ ووٹوں کی گنتی کے تنازع پر سپریم کورٹ جائیں گے۔

غیر ملکی خبر رساں اداروں کی رپورٹس کے مطابق امریکی صدر نے مختلف بیٹل گراؤنڈ ریاستوں جہاں ابھی ووٹوں کی گنتی جاری ہے، وہاں سے جتنے کا دعویٰ کرتے ہوئے کہا کہ ‘سچ کہوں تو ہم نے انتخاب جیت لیا’۔

خیال رہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا یہ بیان اپنے ڈیموکریٹک حریف جوبائیڈن کے اس بیان کے بعد سامنے آیا جس میں وہ مقابلہ جیتنے کے حوالے سے پراعتماد نظر آئے جبکہ یہ معاملہ اگلے کچھ گھنٹوں یا دنوں تک ووٹوں کی گنتی مکمل ہونے تک حل نہیں ہوگا۔،

اصل معاملہ یہ ہے یہ کیا ٹرمپ دھمکیاں دے رہے ہیں یا پھرواقعی سپریم کورٹ جائیں گے ،یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ ٹرمپ نے اپنے وکلا سے مشاورت شروع کردی ہے

دوسری طرف ماہرین کا کہنا ہے کہ بہت کم امکان ہے کہ سپریم کورٹ سے ٹرمپ کوریلیف ملے ، اگرسپریم کورٹ ان انتخابات کومتنازعہ قراردیتی ہے تو پھر امریکہ میں ایک نیا تنازعہ شروع ہوجائے گا
یہ بھی کہا جارہا ہے کہ ٹرمپ کی طرف سے دائر اگردائر کی جاتی ہے تو پھر جزوی طور پر سپریم کورٹ ریلیف دے سکتی ہے جس کا فائدہ ٹرمپ کو اس صورت میں مل سکتا ہے کہ ٹرمپ اوربائیڈن کی جیت میں بہت کم مارجن ہو

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.