غزہ پالیسی ، امریکہ اسرائیل سے علیحدگی اختیار کر رہا ؟

0
211
U.S parting ways with Israel on Gaza policy?

امریکہ اور یورپی یونین کے تعاون سے اسرائیل کے غزہ پر مسلسل اور تباہ کن حملوں کے آٹھ ماہ گزرنے کےبعد، امریکی وزیر خارجہ نے ایک بیان دیتے ہوئے اعلان کیا کہ اسرائیل نے "شمالی کواڈرینٹ میں اپنی خودمختاری کو مؤثر طریقے سے کھو دیا ہے۔” انتھونی بلنکن نے لبنان کے ساتھ اسرائیل کی شمالی سرحد کے قریب شہروں کا حوالہ دیا، جہاں حزب اللہ کے راکٹ حملوں کی وجہ سے تقریباً ایک لاکھ افراد نے نقل مکانی ہے

گزشتہ سات ماہ کے دوران امریکا نے اسرائیل پر مسلسل دباؤ بڑھایا ۔امریکہ نے نجی اور عوامی سطح پر اسرائیل کی مخالفت کی ، امریکہ نے خود کو اس قتل عام سے دور رکھا ہے جو عالمی غصے کو جنم دے رہا ہے۔ امریکہ نے اقوام متحدہ میں تنقیدی قراردادوں کو ویٹو کرنا بھی بند کر دیا ، اور مقبوضہ مغربی کنارے میں اسرائیلی آباد کاروں پر پابندیاں لگا دی ہیں،تاہم، اسرائیل کو ہتھیاروں اور گولہ بارود کا سب سے بڑا فراہم کنندہ ہونے کے ناطے، امریکہ خطے میں اسرائیل کے فوجی فائدے کو یقینی بنانے کے لیے سالانہ 3.8 بلین ڈالر کی فوجی امداد فراہم کرتا ہے۔ مئی 2024 میں، امریکی کانگریس نے 14 بلین ڈالر کی اضافی فوجی امداد دینے کا بل منظور کیا۔ تاہم، بائیڈن انتظامیہ نے پہلی بار اسرائیل کو گولہ بارود کی ترسیل میں تاخیر کی ہے، اسرائیل کو ہزاروں گولہ بارود اور بموں کی ترسیل روک دی گئی ہے

امریکہ اب اسرائیل پر اپنا سب سے زیادہ اثر و رسوخ کیوں استعمال کر رہا ہے؟
سب سے پہلے، امریکہ اور بہت سے مغربی ممالک کا خیال ہے کہ رفح میں حماس پر ایک مربوط حملے کے نتیجے میں بڑی شہری ہلاکتیں ہوں گی اور انسانی تباہی ہو گی۔
دوم، امریکا کا مقصد اسرائیل کی کابینہ پر حماس کے ساتھ جنگ ​​بندی کے معاہدے کی حمایت کے لیے دباؤ ڈالنا ہے۔ لیکن حماس کے ساتھ ہمہ جہت تصادم کا مطلب کسی بھی قسم کی معاہدے کی کوششوں کو پیچھے دھکیلنا یقینی بنانا ہے۔
آخر میں،امریکہ کی اندرونی سیاست ایک کردار ادا کرتی ہے۔ صدر بائیڈن کو ڈیموکریٹک حامیوں کی طرف سے اسرائیل کے لیے اپنی حمایت کو معتدل کرنے کے لیے کافی دباؤ کا سامنا ہے، وہ ووٹرز جو مہذب شہری ہونے کے ناطے فلسطینیوں پر اسرائیلی مظالم کی وجہ سے ناراض ہیں۔ بہر حال، بائیڈن امریکی ووٹروں کی خواہش کو مکمل طور پر نظر انداز کرنے کا متحمل نہیں ہو سکتا،

اگر امریکہ اسرائیل کو ہتھیاروں کی فروخت میں تاخیر کرتا ہے تو برطانیہ سمیت دیگر ممالک کو بھی ایسا کرنے کے لیے بڑھتے ہوئے دباؤ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ اگرچہ اس طرح کی پابندیاں عملی سے زیادہ علامتی ہوں گی، لیکن یہ اسرائیل کی سفارتی تنہائی میں حصہ ڈالیں گی۔
امریکہ سے علیحدگی کے بعد اسرائیل خود کو سفارتی طور پر الگ تھلگ پائے گا.

Leave a reply