fbpx

یو اے ای کا غیر ملکیوں کیلئے نئے گرین ویزوں کا اجرا

دبئی: متحدہ عرب امارات نے نئے ویزوں کے اجرا کا اعلان کیا ہے جس کے تحت غیر ملکیوں کو بنا کسی آجر کے اسپانسر کیے کام کرنے کی اجازت دی گئی ہے-

باغی ٹی وی : غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق جاری کردہ نئے ویزے کے تحت رہائش کے قواعد و ضوابط کو بھی نرم کیا گیا ہےملک میں کم عمر افراد کو بھی پہلی مرتبہ پارٹم ٹائم (جزوقتی) کام کرنے کی اجازت دی گئی ہے اس کا بنیادی مقصد ملک کی معاشی ترقی کو فروغ دینا ہے۔

متحدہ عرب امارات میں غیر ملکیوں کو عام طور پر صرف محدود ویزے دیے جاتے ہیں جو کہ ان کے روزگار سے منسلک ہوتے ہیں یو اے ای کے پرانے قوانین کے تحت وہاں غیر ملکیوں کے لیے طویل عرصے تک رہائش اختیار کرنا ازحد مشکل ہوتا ہے۔

غیر ملکی میڈیا نے حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ نیا گرین ویزہ رکھنے والے افراد کمپنی کی اسپانسرشپ کے بنا نہ صرف کام کرنے کے مجاز ہوں گے بلکہ اپنے والدین اور 25 سال تک کی عمر کے بچوں کو بھی اسپانسر کرسکیں گے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے خارجہ تجارت ثانی بن احمد الزیودی نے نئی اسکیم کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ یہ انتہائی ہنر مند افراد، سرمایہ کاروں، کاروباری افراد، انٹرپرنیورز کے ساتھ ساتھ غیر معمولی صلاحیتوں کے حامل طلبہ اور پوسٹ گریجویٹس کے لیے ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق گرین ویزہ رکھنے والوں پر رہائشی مدت کی پابندی عائد نہیں ہو گی اس سلسلے میں کہا گیا ہے کہ اعلان کردہ نئے قانون کے تحت 15 سال سے زائد عمر کے افراد کو پہلی بار کام کرنے کی بھی اجازت ہوگی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق 15 سال سے زائد عمر کے افراد کو عارضی طور پر ورک پرمٹ فراہم کیا جائے گا اور وہ اپنی پڑھائی چھوڑے بنا جزوقتی کام کرنے کے مجاز ہوں گے متحدہ عرب امارات میں رہنے والے نو عمرافراد پارٹ ٹائم نوکری کے لیے درخواست دینے کے مجاز ہوں گے۔

واضح رہے کہ متحدہ عرب امارات نے 2019 میں 10 سالہ گولڈن ویزہ کا اجرا کیا تھا اس کا مقصد امیر افراد اور انتہائی ہنر مند کارکنان کو یو اے ای کی جانب راغب کرنا تھا یہ اپنی نوعیت کی خلیج میں پہلی اسکیم تھی اس وقت دیگر خلیجی ممالک بھی غیر ملکیوں کو اپنی جانب متوجہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں جیسے کہ قطر نے اپنی پراپرٹی مارکیٹ میں غیر ملکیوں کو شامل کرنے کا آغاز کیا ہے۔

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!