برطانیہ میں دہشت گردی کاخطرہ،سیکورٹی بڑھا دی گئی،ان حملوں کی نوعیت کیا ہوسکتی ہے،الرٹ جاری

لندن:برطانیہ میں دہشت گردی کاخطرہ،سیکورٹی بڑھا دی گئی،ان حملوں کی نوعیت کیا ہوسکتی ہے،الرٹ جاری .اطلاعات کے مطابق برطانیہ میں دہشت گردی کے خطرے کی سطح کو "کافی” سے بڑھا کر "شدید” کردیا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سیکیورٹی کے سربراہوں کا خیال ہے کہ حملے کا امکان بہت زیادہ ہے لیکن اس کے قریب کسی واقعے کی کوئی خاص معلومات موجود نہیں ہے۔

یہ اقدام ویانا میں پیر کی شب کی شوٹنگ کے بعد ہوا جس میں چار افراد ہلاک ہوگئے۔

گذشتہ ہفتے فرانس کے شہر نائس میں چاقو کے حملے میں تین دیگر افراد ہلاک ہوگئے تھے اور گذشتہ ماہ پیرس میں ایک استاد کا قتل کردیا گیا تھا۔

ہوم سکریٹری پریتی پٹیل نے کہا کہ برطانوی عوام کو "ہوشیار رہنا چاہئے لیکن خوف زدہ نہیں ہونا چاہئے”۔

"فرانس میں گذشتہ ہفتے اور آسٹریا میں کل رات کے خوفناک واقعات کے بعد یہ ایک احتیاطی اقدام ہے اور یہ کسی خاص خطرے پر مبنی نہیں ہے۔”انہوں نے مزید کہا کہ اختیارات میں ترمیم کرنے اور دہشت گردی کے خطرات سے نمٹنے کے لیے طریقہ کار کو مستحکم کرنے کے لئے پہلے ہی اہم اقدامات اٹھائے گئے ہیں۔

ہوم سکریٹری پریتی پٹیل نے کہا کہ”جیسا کہ میں نے پہلے بھی کہا ہے ، ہمیں برطانیہ میں دہشت گردی سے ایک حقیقی اور سنگین خطرہ درپیش ہے۔

انہوں نے کہا ، "میں عوام سے چوکنا رہنے اور پولیس کو کسی بھی قسم کی مشکوک سرگرمی کی اطلاع دینے کو کہوں گا۔”

خطرے کی سطح کا اندازہ مشترکہ دہشت گردی تجزیہ مرکز (جے ٹی اے سی) ، ایم آئی 5 کا حصہ ہے ، جو حکومت سے آزادانہ طور پر اس کی سفارشات کرتا ہے۔

برطانوی سیکورٹی اہلکاروں نے خطرات کی شدت اور امکان کے حوالے سے نئے اصول طے کیا ہیں جو کہ یہ ہیں:

کم – حملہ انتہائی امکان نہیں ہے
اعتدال پسند – حملہ ممکن ہے لیکن امکان نہیں ہے
کافی – حملے کا امکان ہے
شدید – کسی حملے کا بہت زیادہ امکان ہے
تنقیدی – قریب قریب مستقبل میں ایک حملہ کا بہت زیادہ امکان ہے

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.