ا مید ہےپاکستان کی نئی حکومت چین کیساتھ دوستی کو یقینی بنائے گی،چین پاکستان تعلقات اور بھی بہتر ہونگے،چین

0
37

بیجنگ: چین نے امید ظاہر کی ہے کہ اسلام آباد میں اتنی بڑی سیاسی ہلچل چین اور پاکستان کے درمیان ٹھوس دوستی کو متاثر نہیں کرے گی۔

باغی ٹی وی : "گلوبل ٹائمز نیوز” کے مطابق چین کا کہنا ہے کہ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کو اتوار کو ملکی پارلیمان میں عدم اعتماد کے ووٹ میں عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا، لیکن امید ہے کہ اسلام آباد میں اتنی بڑی سیاسی ہلچل چین اور پاکستان کے درمیان ٹھوس دوستی کو متاثر نہیں کرے گی۔


چین اور پاکستان دونوں کے ماہرین چین پاکستان تعلقات کے مستقبل پر پراعتماد ہیں کیونکہ ان کا خیال ہے کہ نئی حکومت چین کے ساتھ دوستی کو یقینی بنانے کے لیے ملک کی دیرینہ روایت کو برقرار رکھے گی اور چین پاکستان تعاون کے تمام منصوبوں کو آگے بڑھایا جائے گا۔

چینی اور پاکستانی تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ چین پاکستان کے ٹھوس تعلقات پاکستان میں داخلی سیاسی تبدیلی سے متاثر نہیں ہوں گے کیونکہ دوطرفہ تعلقات کی حفاظت اور ترقی پاکستان کی تمام جماعتوں اور تمام گروہوں کا مشترکہ اتفاق ہے عمران خان کی جگہ نیا وزیر عظم شریف خاندان سے ہے جو ایک طویل عرصے سے چین پاکستان تعلقات کو فروغ دے رہا ہے اور دونوں ممالک کے درمیان تعاون خان کے دور سے بھی بہتر ہو سکتا ہے۔


ماہرین کے مطابق اگرچہ امریکہ نے ہمیشہ چین پاکستان تعلقات کو بھڑکانے یا مشکلات پیدا کرنے کی کوشش کی ہے، خاص طور پر چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک ) منصوبے اور چین کے مجوزہ بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو (BRI) کو نشانہ بناتے ہوئے، چین کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ہے-

پاکستان میں موجودہ داخلی سیاسی کشمکش بنیادی طور پر کوویڈ 19 وبائی امراض کی وجہ سے پیدا ہونے والے معاشی مسائل کی وجہ سے پیدا ہوئی، جب کہ سی پیک اور بی آر آئی کے ساتھ ساتھ انسداد دہشت گردی اور کورونا وائرس کے خلاف جنگ سمیت دیگر شعبوں میں چین پاکستان تعاون، پاکستان کے لیےموجودہ چیلنجز پر قابو پانے کے لیے اہم ہیں۔ . تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس کا مطلب یہ ہے کہ چین ملک کے لیے سب سے قابل اعتماد، قابل اعتماد، طاقتور اور ناقابل تبدیلی شراکت دار ہے۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان ژاؤ لیجیان نے بدھ کو معمول کی پریس کانفرنس میں پاکستان کی موجودہ سیاسی صورتحال کے بارے میں پوچھے جانے پر کہا تھا کہ "چین دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کے اصول پر عمل پیرا ہے۔ چین اور پاکستان ہمہ موسمی تزویراتی تعاون پر مبنی شراکت دار ہیں تاریخ نے بار بار یہ ثابت کیا ہے کہ چین اور پاکستان کے تعلقات ہمیشہ اٹوٹ اور مضبوط رہے ہیں، چاہے بین الاقوامی منظر نامے اور ان کے متعلقہ ملکی حالات کیسے ہی بدل جائیں۔

ژاؤ نے مزید کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ چین پاکستان تعاون کی مجموعی صورت حال اور چین پاکستان اقتصادی راہداری کی تعمیر پاکستان کی سیاسی صورتحال سے متاثر نہیں ہوگی۔ پاکستان کے فولادی دوست کی حیثیت سے ہم پوری امید رکھتے ہیں کہ تمام فریق پاکستان متحد رہے گا اور ملکی ترقی اور استحکام کے لیے مل کر کام کرے گا۔


یکجہتی اور دوستی

سنگھوا یونیورسٹی کے نیشنل اسٹریٹجی انسٹی ٹیوٹ کے ریسرچ ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر کیان فینگ نے کہا کہ پاکستان میں تازہ ترین سیاسی تبدیلی بنیادی طور پر سیاسی جماعتوں کی جدوجہد اور معیشت اور لوگوں کے ذریعہ معاش کے مسائل کی وجہ سے ہے۔ کیان نے مزید کہا کہ کوویڈ وبائی امراض کے اثرات کی وجہ سے ملک میں بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ خان کی انتظامیہ معاشی صورتحال کو خراب ہونے سے روکنے میں ناکام رہی ہے،

عام طور پر، پاکستان کے موجودہ اندرونی مسائل کا چین کے ساتھ اس کے ٹھوس تعلقات سے کوئی تعلق نہیں، اس لیے چین پاکستان تعاون پر کوئی خاص اثر نہیں پڑے گا۔ خان کا تعلق ایک نئی ابھرتی ہوئی سیاسی جماعت سے ہے – پاکستان تحریک انصاف، اور جب پاکستان مسلم لیگ (نواز) یا پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) جیسی روایتی بڑی سیاسی جماعتیں اقتدار میں واپس آتی ہیں تو چین پاکستان تعاون اور بھی بہتر ہو سکتا ہے کیونکہ کیان نے نوٹ کیا کہ ان روایتی بڑی جماعتوں کے چین کے ساتھ بہت قریبی اور گہرے تعلقات ہیں۔

جب شریف مشرقی صوبہ پنجاب کے علاقائی رہنما تھے، تو انہوں نے مقامی انفراسٹرکچر اور اقتصادی ترقی کو بہتر بنانے کے لیے براہ راست چین کے ساتھ بی آر آئی تعاون کے بہت سے معاہدے کیے، اور ان کے خاندان نے چین کے ساتھ دیرینہ تعلقات برقرار رکھے ہیں اہرین نے کہا کہ وقت کے سابق وزیر اعظم اور رہنما جنہوں نے سی پیک منصوبے کو شروع کیا۔

نیشنل پارٹی آف پاکستان کی سنٹرل سٹینڈنگ کمیٹی کے ایگزیکٹو ممبر اور چین پاکستان تعلقات کے ماہر رانا علی قیصر خان نے گلوبل ٹائمز کو بتایا کہ "چین پاکستان کا ہمہ موسمی دوست ہے، لہٰذا اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ حکومت کی قیادت کوئی بھی کرے۔ چین کے ساتھ تعلقات کو متاثر نہیں کر سکتے۔

Leave a reply