fbpx

اردو ہماری قومی زبان تحریر :اویس گیلانی

"اردو ہماری قومی زبان”

زبان زندگی کا ایک ضروری عنصر ہے زبان کے بغیر ابلاغ کی کوئ شکل نہیں ہوتی۔ انسانوں نے الفاظ کی مدد سے زبان تشکیل دی اور آج دنیا میں تقریبا 6500 طرح کی زبانیں بولی جاتی ہیں۔ جو اپنے ممالک اور قوم کی ترجمان اور ثقافت کی نمائندگی کرتی ہے۔

کوئ بھی زبان چھوٹی یا بڑی نہیں ہوتی یہ اس قوم پر منحصر ہوتا ہے کہ وہ اپنی قومی زبان کو کتنا اہمیت دیتے ہیں۔ آج دنیا میں کچھ ممالک ایسے ہیں جنہوں نے اپنی زبان کو دنیا میں اہمیت کا حامل بنوایا۔ آج پوری دنیا میں سب سے زیادہ بولی جانے والی زبانوں میں انگریزی اول درجے پر ہے۔

مگر آپ یہ بھی جانتے ہیں کہ اس کے باوجود چائنہ اور ترکی نے آج تک انگریزی کو یہ اہمیت نہیں دی اور اپنی قومی زبان کو انگریزی پر اہمیت دی۔ آج چاہے دنیا کا سب سے بڑا ایوان جنرل اسمبلی ہو یا کسی ملک کا ایوان میں خطاب ہو یہ دونوں ممالک انگریزی کی بجائے اپنی قومی زبان کو ترجیح دیتے ہیں ۔

اسی طرح اردو زبان جسے پاکستان کی قومی زبان کا درجہ دیا گیا۔ اردو زبان کے فروغ کے لیے 1857 سے ہی اردو ہندی تنازہ کھڑا ہوگیا جہاں ہندی کو اول درجے کی زبان اور اردو کو دوئم درجہ دیا گیا۔ بات یہیں تک نا رکی یہاں تک کہ پاکستان بننے کے بعد اردو اور بنگالی زبان میں کھینچا تانی شروع ہو گئ۔ اور پاکستان کے پہلے دونوں آئین میں اردو اور بنگالی کو قومی زبان کا درجہ ملا۔ جبکہ مشرقی پاکستان الگ ہونے کے بعد 73 کے آئین کی شق 251 میں اردو کو حقیقی معنی میں قومی زبان کا درجہ ملا.

اردو زبان کو موجودہ دور میں مزید اہمیت تب ملی جب چیف جسٹس جواد ایس خواجہ نے 2015 میں اردو کو سرکاری زبان کا درجہ دینے کے لیے حکومت کو ہدایات دیں ۔ مگر افسوس آج پانچ سال بعد بھی ہم اس پر عمل درامد کروانے میں کامیاب نہ ہو سکے۔

حال ہی میں موجودہ حکومت کو بھی شائد اردو کی اہمیت کا اندازہ ہوا اور سرکاری پروانہ جاری کیا گیا کہ اب سے وزیراعظم، وزراء کی تقریر/بیانات انگریزی کی بجائے اردو میں عوام تک پہنچائیں مگر یہ بات بتانے کے لیے بھی حکمران جماعت کو انگریزی میں ہدایت نامہ جاری کرنا پڑا۔

خدارا اس سوچ سے باہر آئیں کہ انگریزی کے بغیر کوئ ملک ترقی نہیں کر سکتا۔ آج ترکی اور چائنہ انگریزی زبان کے بغیر بھی دنیا میں ترقی کر رہے ہیں۔ امید ہے کہ موجودہ حکومت کا اردو زبان کے لیے یہ اقدام محض بیان تک ہی محدود نہیں ہو گا۔

اویس گیلانی
https://mobile.twitter.com/GillaniAwais

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.