امریکی جیل میں قیدیوں نے محافظ کو یرغمال بنالیا

پولیس نے عمارت کو گھیرے میں لینے کے بعد بغاوت پر قابو پالیا
0
35
US Jail

امریکہ کی ایک جیل میں قیدیوں نے بڑے پیمانے پر بغاوت کی اور جیل کے ایک محافظ کو یرغمال بنالیا ہے جبکہ امریکہ کے شہر سینٹ لوئس میں ایک حراستی مرکز میں قیدیوں نے جیل کے ایک 70 سالہ محافظ کو حراست میں لے لیا اور جیل انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ کھانے کے مینو میں گرم پیزا اور تازہ چکن شامل کیا جائے۔

واضح رہے کہ برطانوی اخبار ڈیلی مرر کے مطابق گارڈ کو کوئی نقصان نہیں پہنچا اور اسے حراست میں لیے جانے کے کچھ دیر بعد رہا کر دیا گیا تاہم حکام نے بتایا کہ پولیس نے عمارت کو گھیرے میں لینے کے بعد بغاوت پر قابو پالیا ہے اور رپورٹ کے مطابق کوئی ہنگامہ نہیں ہوا اور دیگر ملازمین کو بھی فوری طور پر خطرہ نہیں تھا۔

پولیس نے حراستی مرکز کی چوتھی منزل پر صبح 6 بجے کے بعد گارڈ کے اغوا کی اطلاع دی جبکہ حراست میں لیے گئے افراد نے گارڈ کی واپسی کے بدلے پیزا اور چکن پائی کا مطالبہ کیا، اس کے علاوہ ان کی شکایات تھیں کہ انہیں مناسب گرم کھانا نہیں ملتا۔

تفتیش کاروں نے میڈیا کو بتایا کہ محافظ ایک 70 سالہ شخص تھا جس کے پاس بندوق نہیں تھی جب اسے یرغمال بنایا گیا تھا تاہم ذرائع کے مطابق پیرامیڈیکس صبح 8:30 بجے کے قریب گارڈ کے لباس میں ملبوس ایک شخص کو اسٹریچر پر لائے تاہم اخبار نے بتایا کہ وہ ہوش میں تھا لیکن تھکا ہوا دکھائی دے رہا تھا۔

علاوہ ازیں جیل کے اندر تشدد کی کئی کارروائیوں کا تازہ ترین واقعہ ہے، جس میں تقریباً 700 قیدی ہیں جبکہ فروری 2021 میں، قیدیوں نے اس جیل کو آگ لگا دی، چوتھی منزل کی کھڑکیوں کو توڑ دیا، اور ٹوٹے ہوئے شیشوں سے کرسیاں اور دیگر چیزیں باہر پھینکیں۔ ایک گارڈ پر حملہ کیا گیا اور قیدیوں نے اپریل 2021 میں ایک اور ہنگامے کے دوران جیل کو آگ لگا دی تھی۔

Leave a reply