fbpx

عثمان بزدار کے عشایئے میں پنجاب کے 30 اراکین اسمبلی غیرحاضر،فہرست وزیراعظم کو بھجوا دی

لاہور: وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار کی جانب سےاراکین قومی اسمبلی پنجاب کے اعزاز میں عشائیہ دیا گیا جس میں پنجاب سے تعلق رکھنے والے 30 سے زائد اراکین نے شرکت نہ کی۔

باغی ٹی وی : تفصیلات کے مطابق عشائیے کے موقع پر اراکین کی شرکت کی حاضری بھی لگائی گئی،عشائیے میں نہ آنے والے ارکان کی فہرست مرتب کر لی گئی،فہرست مرتب کر کے وزیراعظم کو بھجوا دی گئی ہے ۔

پاکستان چوتھا مہنگا ترین ملک بن گیا،پی پی کا حکومت کیخلاف وائٹ پیپر جاری

ذرائع کے مطابق وزیراعلی پنجاب نے ارکان کی وائٹ مٹن قورمہ، چکن قورمہ، فش، بریانی سے تواضع کی، ارکان کی تواضع کے لیے باربی کیو بھی لگایا گیا تھا، وزیراعلی پنجاب ارکان سے فرداً فرداً ملے، وزیراعلی نے قومی اسمبلی اجلاس میں منی بجٹ کی منظوری سے متعلق کوئی بات نہ کی۔

ذرائع کا دعوٰی ہے کہ وزیراعلی پنجاب ڈنر کی دعوت کے دوران سخت پریشان نظر آئے، تمام اراکین اسمبلی اپنے اپنے ڈنر میں مصروف رہے، کھانے کی تقریب میں عجیب سی خاموشی چھائی رہی۔

دوسری جانب حکومت کومنی نجٹ پر اپوزیشن کی طرف شیدی تنقید کا سامنا ہے پاکستان پیپلز پارٹی نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) حکومت کے خلاف وائٹ پیپر جاری کر دیا ہے جس کے مطابق پاکستان دنیا کا چوتھا مہنگا ترین ملک بن گیا ہے۔

بلاول بھٹو کس منہ سے قومی اسمبلی میں تقریر کررہے تھے؟ خرم شیر زمان

وائٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ ملک دو ہندسوں کی اونچائی کے ساتھ سست اقتصادی ترقی کا شکار ہے۔اس دوران پی ٹی آئی کی حکومت نے معیشت کی ایک مایوس کن تصویر بنائی ہے۔اس کے ساتھ ساتھ اس دہائی کی بلند شرح سود، بجلی کی قیمتوں میں پچاس فیصد اضافہ، زراعت میں گراوٹ اور اس کے ساتھ ساتھ ایک بے مثال درآمدی بل اور پیداوار کی بڑھتی ہوئی لاگت دونوں صنعت اور زراعت میں پی ٹی آئی نے نقصان ہی پہنچایا ہے پاکستان ایک زرعی ملک ہونے کے ناطے گندم اور چینی کی قلت کا سامنا ہے۔3 سالوں میں قیمتوں میں دوگنا ہونے کا نتیجہ ہے۔ پاکستان کی کپاس کی پیداوار14 ملین گانٹھوں سے گر کر صرف 7 رہ گئی ہے اس کے ساتھ ضرورت سے زیادہ معیشت کو سست کیا اور نتیجہ نکلا۔مالی سال 20 میں صرف 0.5 فیصد نمو میں اضافہ ہوا

پی پی پی کی جانب سے جاری کردہ وائٹ پیپر کے مطابق افراط زر ، پٹرول اور ڈالر کی قیمتوں میں غیر معمولی اضافہ مہنگائی کا باعث بنا ، افراط زر ملک کی 70 سالہ تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا ، پی ٹی آئی کےدورحکومت میں بجلی کی قیمتوں میں 87 فیصد اور پٹرول کی قیمتوں میں 73 فیصد اضافہ ہوا سٹیٹ بینک کے مطابق پاکستان میں گزشتہ ایک سال میں چینی سرمایہ میں 85 فیصد کمی آئی ،پی ٹی آئی دورحکومت میں ملکی قرضوں میں 60فیصداضافہ ہوا،کورونا کے دوران 50 لاکھ لوگوں کو نوکریوں سے ہاتھ دھونا پڑا جبکہ 3 سالوں میں زرعی پیداوار میں 4 فیصد کمی ہوئی۔

شہبازشریف نے منی لانڈرنگ تحقیقات لاہورہائی کورٹ میں چیلنج کردیں

پاکستان پیپلز پارٹی کے جاری کردہ وائٹ پیپر کے مطابق پی ٹی آئی دور حکومت میں ایک بھی ہسپتال نہیں بنایا گیا ، خواتین کے حقوق کی خلاف ورزی کے حوالے سے پاکستان کا نمبر 167 میں سے 164 پر ہےپی ٹی آئی حکومت کو اقتدار سنبھالے ہوئے 40 ماہ اور 1232 دن ہو گئے ہیں،پاکستان مہنگائی کے لحاظ سے دنیا میں چوتھے نمبر پر ہے۔ اس وقت پاکستان میں مہنگائی کی شرح 11.5 فیصد سے زائد ہے اور پاکستان جنوبی ایشیا میں سب سیزیادہ مہنگا ترین ملک ہے۔پاکستان میں اس وقت 66 لاکھ سے زائد افراد بے روزگار ہیں۔سندھ میں پیپلز پارٹی کی حکومت ہے اور یہاں بیروزگاری کی شرح 4 فیصد ہے جبکہ نو سال سے خیبر پختونخوا میں پی ٹی آئی کی حکومت ہے وہاں پر اس وقت ملک میں سب سے زیادہ بے روزگاری 10.3 فیصد تک جا پہنچی ہے

ہر صدی میں ایک بحران آتا ہے اور اس صدی کا بحران عمران خان ہے ،اپوزیشن

آج ہر پاکستانی پر تقریبا دو لاکھ روپے کا قرض چڑھ چکا ہے اورگردشی قرضے تقریبا 2.3 ٹریلین ڈالرز ہو چکے ہیں۔ انہوں نے مزید بتایاکہ ملک کا تجارتی خسارہ 30.7 تک پہنچ چکا ہے جبکہ منی بجٹ میں دودھ ، جولیری، الکٹرک گاڑیوں، سولر پینل سمیت دیگر اشیا پر 17 فیصد کے ٹیکس لگائے گئے ہیں۔

وفاق نے پنجاب حکومت سےنوازشریف کی میڈیکل رپورٹس پر ماہرانہ رائے مانگ لی