fbpx

ویکسین درآمد کرنے جیسے معاملات وزیراعظم خود دیکھتے ہیں شہزاد اکبر

مشیر داخلہ و احتساب شہزاد اکبر کا کہنا ہے کہ ویکسین درآمد کرنے جیسے معاملات وزیراعظم خود دیکھتے ہیں۔

باغی ٹی وی : نجی ٹی وی چینل جیو نیوز کے پروگرام میں معروف اینکر شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ گفتگو کے دوران شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ مجھ سے کسی نے رابطہ نہیں کیا کہ ویکسین منگوانی ہے اور اِس میں نیب رکاوٹ بن رہا ہے۔

شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ اگر رولز، قاعدے اور قانون کے مطابق چلیں گے تو نیب سے مسئلہ نہیں ہوگا۔اس بات سے اتفاق نہیں کرتا کہ نیب کی وجہ سے کوئی بہت بڑا کام رکا ہوا ہوگا۔

خیال رہے کہ اسد عمر نے ویکسین درآمد کرنے کے حوالےسے کہا تھا کہ اگر ہم ویکسین کی پہلے سے ہی بکنگ کرالیتے تو ابھی نیب کی تحویل میں بیٹھے ہوتے۔

دوسری جانب پاکستان میں کورونا نے پھر زور پکر لیا ہے اس حوالے سے 7 جولائی کو وفاقی وزیربرائے منصوبہ بندی ترقی وخصوصی اقدامات اسدعمر کی زیرصدارت این سی او سی کا اجلاس ہوا تھا تمام صوبائی چیف سکریٹریزنے بھی ویڈیولنک کے ذریعے اجلاس میں شرکت کیتھی ، فورم نے کووڈ کیسزمیں اضافے پہ تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مختلف سیکٹرزمیں ایس اوپیزکی خلاف ورزیوں کا نوٹس لیا تھا-

تمام صوبوں کوایس او پیز پرعمل درآمد اور ویکسینیشن کے عمل کو تیزکرنے کے لئیے خصوصی اقدامات اٹھانے کی ہدایات کی گئی تھیں، عید الاضحی کے سلسلے میں جاری کی گئی ایس او پیز پرخصوصی عمل درآمد کے احکامات دئیے گئے-

ادھر عالمی ادارہ صحت(ڈبلیو ایچ او) نے خبردار کرتے ہوئے کہا تھا کہ شہری کورونا کی ایک سے زائد قسم کی ویکسین نہ لگوائیں مختلف کمپنیوں کی ویکسینز لگوانا خطرناک ہے لوگ خود فیصلہ کرنے لگیں کہ انہیں مزید ویکسین لگوانی ہے تو اس سے افراتفری پیدا ہوگی۔