fbpx

وزیراعظم نے کہا کہ آپ بہت بولتے ہیں، خاموشی سے میری بات سنیں، وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ

وزیراعظم نے کہا کہ آپ بہت بولتے ہیں، خاموشی سے میری بات سنیں، میں نے بھی اپنے دو ٹوک موقف سے آگاہ کر دیا کہ سندھ میں کسی صورت گورنر راج نہیں لگنے دیں گے، وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے لے آئے- تفصیلات کے مطابق وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ سندھ کے ساتھ نا انصافی ہو رہی ہے اور پہلے سے بھی کم بجٹ سندھ کو دیا جا رہا ہے۔
انہوں ںے کڑی نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نے مجھے بات کرنے سے بھی روکا اور کہا کہ آپ بہت بولتے ہیں، میری بات سنیں تاہم انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کے سامنے احتجاج کیا اور کہا کہ گورنر رول اور الگ صوبے کے خواب کبھی پورے نہیں ہوں گے- انہوں نے یہ بات وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں ذرائع ابلاغ سے بات چیت کرتے ہوئے کہی۔
سید مراد علی شاہ نے کہا کہ ایک سال میں ایک ہی این ای سی کی میٹنگ ہوئی ہے۔ انہوں ںے کہا کہ وزیراعظم نے چار میٹنگز بلانے کا وعدہ کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ فنانس ڈویژن صوبوں کو ترقیاتی بجٹ کے لیے فنڈز دیتی ہے اور چار سال پرانی اسکیموں کے لیے وہی بجٹ ہے۔ انہوں نے کہا کہ سندھ کے 7 ارب سے بڑھا کر 15 ارب کردیے گئے ہیں۔ وزیراعلیٰ سندھ نے ذرائع ابلاغ سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ 9.7 ارب کی اسکیموں پرصرف 500 ملین خرچ ہوئے۔
انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کی واضح ہدایت ہے کہ ایم این اے و ایم پی اے کے کہنے پراسکیموں کو شامل نہ کیا جائے لیکن حکومت کے بجائے ایم این اے اور ایم پی اے کی اسکیموں کو شامل کیا گیا ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ وزیراعظم نے باتیں کی ہیں لیکن ہمارے ساتھ وعدہ نہیں کیا۔ ایک سوال کے جواب میں وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ کل کراچی میں احتجاج کی ویڈیوز موجود ہیں۔ انہوں ںے کہا کہ احتجاج کا حق ہرکسی کو ہے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے بھی ہم نے دیگرجماعتوں کو احتجاج کی اجازت دی لیکن کنٹرول بھی کیا ہے۔