fbpx

نورمقدم کوقتل کرنے والا ملزم اب کس حالت میں ہےاورپولیس کیا کہہ رہی ہے؟رپورٹ آگئی

اسلام آباد:نورمقدم کوقتل کرنے والا ملزم اب کس حالت میں ہےاورپولیس کیا کہہ رہی ہے؟رپورٹ آگئی ،اطلاعات کے مطابق نورمقدم کا قتل اس وقت ہائی پروفائل کیس بن گیا ہے اوراس وقت اسلام آباد کی پولیس کے لیے ایک امتحان سے بھی کم نہیں‌،

 

ادھر اس حوالے سے بہت اہم خبریں منظرعام پرآنا شروع ہوگئی ہیں‌، اس وقت ظاہرجعفر کی کچھ تصاویرسوشل میڈیا پروائرل ہوئی ہیں‌،ان تصاویر میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ظاہرجعفرکو باندھا ہوا ہے ،ایک اورتصویرمیں ظاہرجعفرکواپنے دوستوں کے ہمراہ دکھایا گیا ہے

 

اس کے علاوہ ایک تصویرپر کیپشن لکھا گیا ہےجس میں انکشاف کیا گیا ہےکہ قاتل کے والدین یہ چاہتے ہیں کہ ان کے بیٹے کوکچھ نہ کہا جائے بلکہ چھوڑدیا جائے

 

اس حوالے سے سوشل میڈیا صارفین کہتے ہیں‌ کہ ظاہرجعفرکے والدین اوردیگردوست احباب اوررشتہ داروں کے لیے شرم کا مقام ہے کہ وہ ایک قاتل کوبچا رہے ہیں

 

 

دوسری طرف ایس ایس پی انوسٹی گیشن عطا الرحمن نے کہا کہ نور مقدم کو بیہمانہ تشدد سے قتل کیا۔

تفصیلات کے مطابق ایس ایس پی انوسٹی گیشن عطا الرحمن نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ یہ کیس بہت اہمیت کا حامل ہے۔

انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا پر اس کیس کے حوالے سے کچھ غلظ معلومات پھیلائی گئیں ، ہم اس کیس میں متاثرہ خاندان کو انصاف دلائیں گے، آئی جی اسلام آباد نے متاثرہ خاندان کا دورہ کیا اور ان کو تعاون کی یقین دہانی کرائی۔

ایس ایس پی انوسٹی گیشن نے کہا کہ رہائشی نے پولیس کو فون کر کے اطلاع دی، یہ تحقیقات ہونا باقی ہیں نور مقدم اس گھر میں کب سے موجود تھیں، واقعے کا کوئی عینی شاہد نہیں ہے، ملزم گرفتاری کے وقت اپنے ہوش حواس میں تھا، ملزم کو باندھا گیا پولیس بھی موقع پر پہنچی۔

عطا الرحمن نے کہا کہ موقع واردات سے پستول برآمد ہوا لیکن مقتولہ کو گولی نہیں ماری گئی، واردات کے وقت گولی پستول میں پھنس گئی، ملزم نے زیادتی کی، واقعے کے وقت ذہنی کیفیت درست تھی ، ملزم کے برطانیہ میں کرمنل ریکارڈ کی کوئی تفصیلات ہمارے پاس نہیں ہیں، پولیس ملزم کا کرائم ریکارڈ بھی چیک کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ جو بھی وجہ ہو کسی کو کسی کا قتل کرنے کا کوئی حق نہیں ہے، گھر میں موجود ملازمین سے بھی تحقیقات کی جارہی ہیں، پولیس ریمانڈ میں ملزم سے تحقیقات کر رہی ہے، ملزم اپنے جرم کا اعتراف نہیں کرتا،اعتراف جرم کرنے کی صورت میں بھی ریلیف نہیں مل سکتا۔

عطا الرحمن نے کہا کہ افغان سفیر کی بیٹی کی گمشدگی سے متعلق کیس کی تحقیقات جاری ہیں، نور مقدم کیس میں ملزم کی ذہنی ہسٹری سے ہماری تفتیش کا کوئی تعلق نہیں، خنجر سے لڑکی کا قتل کیا گیا،پستول بھی موقع واردات سے برآمد ہوا، اسلام آباد پولیس انسانیت کے ناتے بیہمانہ قتل کے ملزم کو کیفر کردار تک پہنچائے گی۔

ایس ایس پی انوسٹی گیشن عطا الرحمن نے کہا کہ پوسٹ مارٹم کی ابتدائی رپورٹ آگئی ہے ، پوسٹ مارٹم کی مکمل رپورٹ کچھ دن تک موصول ہوجائے گی، نور مقدم قتل میں کوئی اور شخص ملوث پایا گیا تو اس کے خلاف بھی کارروائی کریں گے۔