fbpx

"ملّامنان نیازی”کون:امریکہ اوربھارت کےلیےکیاخفیہ مشن سرانجام دیئے:اشرف غنی کوکیسےبچایا؟اوراب کیامنصوبے؟ اہم انکشافات آگئے

لاہور:”ملّا منان نیازی”کون:امریکہ اوربھارت کےلیے کیاخفیہ مشن سرانجام دیئے:اشرف غنی کوکیسے بچایا؟اوراب کیامنصوبے ہیں؟اہم انکشافات آگئے،باغی ٹی وی کی تحقیقات کے مطابق پاکستان کے خلاف افغانستان میں امریکہ اوربھارت کے ہاتھوں‌ کٹھ پتلی بننے والی خفیہ طاقتوں اورسازشوں کا ظہورہونا شروع ہوگیا ہے

 

اس وقت جب امریکہ افغانستان سے نکل رہا ہے ، امریکہ نے نکلنے سے پہلے پیچھے افغانستان میں اپنے خاص بندوں کوبہت حساس ذمہ داریاں بھی سونپ دی ہیں‌، ویسے تواطلاعات کے مطابق اس وقت افغانستان میں ایک درجن سے زائد گروہوں کے درمیان نیٹ ورکنگ کی ہے اورپھران کو اپنے اپنے علاقے اورافرادی قوت کے اعتبار سے مختلف قسم کے اہداف دیئے ہیں‌

 

یہ بھی یاد رہےکہ اہداف مختلف ہیں مگران کا مقصد صرف ایک ہی ہےکہ پاکستان اورافغانستان کے درمیان تعلقات کومعمول پرنہ آنے دینا اورپاکستان کوافغانستان میں اپنا اثرورسوخ قائم کرنے سے روکنے کےلیے پاکستان کوعدم اسحتکام جیسے معاملے میں مصروف رکھنا سمیت دیگراہم مقاصد ہیں

یہ بھی اطلاعات ہیں کہ اس حوالے سے بھارت ، امریکہ اور ایران نیٹو فورسز کی مدد سے ان درجن سے زائد گروہوں کی سرپرستی کررہے ہیں‌،

 

ان میں سب سے زیادہ معروف اورخطرناک گروہ "ملامنان نیازی” کا ہے جوافغان طالبان کونقصان پہنچانے میں کوئی موقع بھی ضائع جانے نہیں دیتے ، ملامنان نیازی اس وقت امریکی خفیہ اداروں ، بھارتی خفیہ ایجنسی را اورایسے ہی شمالی اتحاد کی مدد کرنے والے ایک ہمسائے ملک سے مدد ملنے کی بھی اطلاعات ہیں ، ملامنان نیازی جہاں ایک طرف افغانیوں کوایک مخلص اورطالبان لیڈرکے طورپرباورکرانے میں مختلف ہتھکنڈے استعمال کررہے ہیں‌وہاں ملا منان نیازی کوامریکہ اوربھارت کے مفادات کے لیے کام کرنے والے عالمی میڈیا کی درپردہ حمایت بھی حاصل ہے

ملامنان نیازی بھی جب روس نے افغانستان پرحملہ کیا تواس وقت بچے کھچے اپنے خاندان کے ہمراہ پاکستان پہنچ گئے تھے اورپھرپاکستان اورپاکستانیوں نے اپنے ان افغان بے گھرمہاجرین کواپنا بناکران کی خدمت بھی کی ، ان کورہنے سہنے کےلیے بہترین مقامات بھی فراہم کیئے اورپھران کے بچوں کی تعلیم وتربیت کےلیے پاکستانی تعلیمی اداروں کےدروازے بھی کھول دیئے ،

پھر جب افغانستان سے روسی فوجوں‌ کا انخلا ہوا توپھراس کے بعد افغانستان میں افغان طالبان کی حکومت آئی توپھرملامحمد عمرنے ملامنان نیازی کوہرات صوبے کی اہم ذمہ داری سونپ دی

 

اس دوران ملامنان نیازی نے ہرات میں اپنا اثرورسوخ قائم کرنے اوراس عہدے پرہمیشہ کےلیے براجمان رہنے کےلیے مقامی لوگوں کی حمایت لینے کےلیے کابل میں قائم افغان طالبان کی حکومت کے خلاف سازشیں کرنے لگے

افغان امورکے ان دنوں کا جائزہ لیں‌تویہ بات بھی سامنے آتی ہے کہ ملامنان نیازی نے اس دوران افغآن طالبان کے خلاف بغاوت کا سماں پیدا کیا اورپھردرپردہ ہرات کے صوبے کے چیف کے طورپرقائم رہنے کےلیے افغآن طالبان کے مخالف دھڑوں اوردوستم ملیشیا سے مدد لینا شروع کردی

دوسری طرف دوستم ملیشیا کے اہلکاروں افغان طالبان کے خلاف موقع غنیمت جانتے ہوئے ملامنان نیازی کی نہ صرف مدد کی بلکہ ہرات اورگردونواح سے افغان طالبان کااثرورسوخ ختم کرنے کے لیے ملامنان نیازی کومہرے کےطورپراستعمال کیا

 

https://newlinesmag.com/photo-essays/afghanistans-post-nato-battle-lines/

اس کےبعد جب امریکہ نے افغانستان میں افغآن طالبان کی حکومت ختم کی توملامنان نیازی چونکہ پہلے ہی افغان طالبان کے مخالف جانے جاتےتھے اس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے امریکہ سے حملے سے پہلے ہی مضبوط روابط قائم کرلیے اوربظاہرافغان طالبان کے ہمدرد بنتے ہوئے جہاد کا اعلان کیا لیکن درپردہ امریکہ کی طرف سے وفاداری کےبدلے تحفظ کی بھیک بھی مانگی

افغانستان کے ان کٹھن حالات کے متعلق ہرات کی کچھ اہم ذمہ دار شخصیات نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ ملامنان نیازی کوان دنوں ہی امریکہ کے ساتھ ساتھ بھارت کی مدد بھی حاصل ہوگئی ، بعض ذرائع نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ جب امریکی مشاورت سے بڑی تعداد میں افغان کمانڈروں کوٹریننگ اوردیگرمعاملات طئے کرنے کے لیے بھارت بھیجا جاتا تھا توملامنان نیازی بھی ایک مرتبہ بھارت کا دورہ کرچکے ہیں

 

ادھر ملامنان نیازی کےمتعلق مزید انکشافات بھی سامنے آئے ہیں ، ملامنان نیازی چونکہ ملامحمد عمرکے ساتھ پاکستان میں زیرتعلیم رہے اورملامحمد عمر نے ملامنان نیازی کی پرورش اپنے بچوں کی طرح کی اورپھران کی خاطربڑی بڑی مشکلات بھی برداشت کیں اسی وجہ سے ملامنان نیازی ملامحمد عمر کی وفات تک ان کے قریب رہے اور ان کے خلاف زیادہ کھل سامنے نہیں آئے

 

لیکن جب ملامحمد عمر کی وفات کی خبرجاری ہوئی توسب سے پہلے بغاوت کرنے والوں میں ملامنان نیازی ہی تھی جنہوں نے ہرات میں باقاعدہ اپنے الگ طالبان گروپ کا اعلان کرکے افغان طالبان کی اجتماعییت کوپارہ پارہ کرنے کی خطرناک کوشش کی

اس کےبعد ملامنان نیازی نے ہرات اورگردونواح کے علاقوں میں اپنے سابقہ تعلقات اورجدوجہد کے پس منظرمیں اپنا الگ دھڑا بناتے ہوئے افغان طالبان کے خلاف باقاعدہ اعلان جنگ کردیا اوردوستم ملیشیا کے وفاداروں کی مدد سے علاقے سے افغان طالبان کونکالنے کے ان پربڑے خطرناک حملے بھی کیئے

 

اس دوران جب ملامحمد عمر کی وفات کی خبرجاری ہوچکی تھی اورملامنصورافغان طالبان کے نئے امیر کے طورپرسامنے آچکے تھے توملامنان نیازی نے ملامنصورکی امارت کوقبول کرنے کے انکارکردیاتھا ، ویسے بھی اس سے پہلے ملامنان نیازی امریکہ اوربھارت کے لیے وفاداری کا حلف اٹھا چکے تھے توملامحمد عمرکی وفات اورملامنصور کی امارت کے اعلان کے بعد یہ کھل کرسامنے آگئے تھے

یہ بھی معلوم ہوا ہےکہ اس وقت سے لیکراب تک ملامنان نیازی افغانستان میں افغان طالبان کے خلاف درپردہ بھی اوراعلانیہ جنگ بھی کررہےہیں ،ملامنان نیازی کے نظریات کوافغان عوام تک پہنچانے کے لیے مغربی اوربھارتی میڈیا کی ذریعے بہت زیادہ مدد کی گئی اورپھرایک وقت وہ بھی آیا کہ ہرات اوردیگرعلاقوں میں وائس آف امریکہ،وائس آف جرمنی ، ہندوستان ٹائمز،دی ہندو اورایسے ہے دیگرانڈین میڈیا چینلز نے اپنے افغآن بلٹن میں افغان طالبان کے مخالفین کوسہارا دینے میں بہت زیادہ کردار ادا کیا ، ملامنان نیازی بھی ان میں سے ایک ہیں جن کو خصوصی حیثیت حاصل تھی

یہی ملامنان نیازی ہرات میں بیٹھ کرایک طرف امریکہ ،بھارت ، نیٹو سے مدد لے رہے تھے تواس کے بدلے میں وہ اشرف غنی کی حکومت کوسہارا دینے کےلیے پیادے کے طورپراستعمال بھی ہورہے تھے

یوں یہ سلسلہ آگے بڑھتا رہا ، چلتا رہا ، لیکن منان نیازی ہرات کے علاوہ دیگرعلاقوں مین اپنا اثرورسوخ قائم کرنے میں ناکام رہے ، یہی وجہ ہے کہ وہ اپنی ناکامی کا ذمہ دارافغان طابان اورپاکستان کوالزام دیتے رہے ، اورپھران کے الزامات کا سلسلہ اس حد تک دراز ہوگیا کہ وہ اپنے گناہوں اورغلطیوں کوپاکستان کے کھاتے میں ڈال کربھارت اورپاکستان کے دیگرمخالفین سے اس آڑ میں مزید مدد لیتےرہے ہیں

یہ بھی انکشافات سامنے آرہےہیں کہ ملامنان نیازی کے حمایت یافتہ ممالک میں کچھ بینک اکاونٹس بھی ہیں جہاں ان کے اکاونٹس میں ان کی تحریک اوران کی ذمہ داریوں کے لیے جو رقم تحفے کے طورپرآتی ہے وہ ان اکاونٹس میں جمع ہوجاتی ہے ، ان اکاونٹس کے بینکس اکاونٹ نمبرفی الحال نہیں بتائے گئے

اب جبکہ امریکہ سخت ہزیمت اورشکست کے بعد افغانستان چھوڑنے پرمجبورہے تواس دوران سب سے زیادہ پریشانی بھارت اوران افغان طالبان مخالف گروہوں کو لاحق ہے جو یہ سمجھ رہےہیں‌کہ امریکہ کے جانے کے بعد افغان طالبان کے غیض وغضب سے وہ کیسے بچ پائیں گے

ان پریشانیوں نے ملامنان نیازی کواورپریشان کردیا ہے اب وہ اپنے آپ کوبچانے اورمقامی لوگوں کی حمایت حاصل کرنے کےلیے پاکستان اورافغآن طالبان پرالزامات لگانے میں کوئی لمحہ بھی ضائع نہیں کررہے ،

ملان منان نیازی کوہرات میں بھی بہت سی مشکلات کا سامنا ہے ، میری اطلاعات کے مطابق ہلمند میں لوگ سنگوریانو ملیشیا سے بہت تنگ آگئے ہیں۔ لوگوں کے مطابق یہ ملیشیا لوگوں کے اغواء ، چوری ، قتل اور دیگر جرائم میں ملوث ہے۔ یہ ملیشیا سابقہ کمیونسٹ جنرل جبار کے ہاتھ میں ہے۔ خبر کے مطابق اس ملیشیا میں ملا منان نیازی کے مسلح افراد بھی شامل ہیں۔ یہ لوگ مل کر طالبان کے خلاف لڑ رہے ہیں۔ مگر یہ ملیشیا جہاں بھی طالبان کے خلاف لڑنے نکلے ہیں عوام کے ساتھ انہوں نے انتہائی برا سلوک کیاہے۔

یہ بھی خبردی گئی ہے کہ ملامنان نیازی پاکستان سے محبت کرنے والے افغانوں کے قتل اوران کے گھروں‌ کوتباہ کرنے میں بھی ملوث ہے ، یہ وہی ملامنان ہے جب روس نےافغانستان پرحملہ کیاتواپنے بچے کھچے خاندان کے ساتھ پاکستان پہنچےتوسب سے پہلے پاکستانیوں نے انصارکی طرح اپنے گھربارپیش کیے ، اپنی جائیدادیں پیش کیں ، تعلیم اورصحت کےلیے تمام وسائل فراہم کیے لیکن آج وہی ملامنان نیازی پاکستانیوں‌ کو نہیں بلکہ پاکستان کے بارے میں اچھے خیالات رکھنے والے افغانیوں کوماررہا ہے ، ان کے گھرگرا رہا ہے اور ان کوبے گھرکررہا ہے

 

ملامنان نیازی پچھلے 5 سالوں سے ہرات ، ہلمند اوردیگرعلاقوں میں ان جرائم پیشہ وارداتوں میں ملوث پایا گیا ہے جن میں لوگوں‌ کولوٹ مارکے دوران قتل بھی کردیا جاتا ہے اوراس کے لیے یہ کام اتنا آسان ہےکہ ایک ایک واقعہ میں 30 ،30 افراد بھی جان سے ماردیئے

بات ہورہی تھی کہ اب ملامنان نیازی پاکستان کے خلاف اتنا کھل کرکیوں آگیا ہے پہلے توملامنان نیازی کی دشمنی کے احساسات دیکھیں اورپھراگلی صورت حال سے آگاہ کرتا ہوں

ملامنان نیازی کس طرح ہرات اوردیگر علاقوں میں دوستم ملییشیا اورشمالی اتحاد کے لوگوں کوپاکستان کے خلاف اکسارہے ہیں ذرا ملاحظہ کریں‌

اے افغان اے مسلمان!
امریکہ اور طالبان دونوں غیر ملکی مداخلت کرنے والے ہیں شکر ہے ، ناپاک امریکی جارہے ہیں وہ رضاکارانہ طور پر آئے اور اپنی مرضی سے چلے گئے

لیکن خداوند پاک کے نام پر یقین رکھیں کسی بھی افغان کو یہ برداشت نہیں کہ وہ اس ملک کو پنجابی کرنلوں اور بڑی کمپنیوں پر چھوڑ دے۔

ملامنان نیازی مزید زہراگلتے ہوئے کہتے ہیں کہ

طالبان پنجاب کے غلام ہے اور ان کے ساتھ لڑنا ہی اصل جہاد ہے

اس کے بعد ملامنان ان لوگوں‌کوجوافغآن طالبان سے محبت رکھتے ہیں کس طرح ان کواپنی وفاداری کا یقین دلاکران کے غضب سے بچنے کی کوشش کرتے ہیں ،

ذرا ملاحظہ کریں‌
میں طالبان ہوں .. میں اس طالبان کی طاقت جانتا ہوں .. پنجاب فوج کی مدد کے بغیر ، طالبان دو مہینے نہیں چل پائیں گے۔ یہ طالبان اور افغانوں کے مابین جنگ نہیں بلیک پنجاب اور افغانوں کے مابین جنگ ہے طالبان پنجاب کا خادم ہے ۔پنجاب اور مسلم قوم کے مابین جنگ ہے۔

غلام ابن غلام سراج حقانی ، حمزہ حقانی ، انس حقانی سب پنجاب کے انتہائی قابل فخر غلام ہیں اللہ کی قسم ، انہوں نے پنجاب کے لئے اپنے والد کو بھی مار ڈالا
نصیر حقانی کو اسلام آباد میں قتل کیا۔

ملامنان نیازی جس نے پاکستان میں‌پرورش پائی ، پاکستانیوں کی محبت اوروفاداری کا کس طرح قتل کرتے ہیں یہ بھی ذراملاحظہ فرمائیں‌

پاکستان کے اقدامات اور الفاظ منافقت سے بھرے ہیں

منان نیازی کہتےہیں کہ :خلیل زاد آپ کیوں نہیں سوچ رہے ؟ کل ، پنجابیوں نے ملا کبیر اور پنجاب کے چھوٹے بیٹے غازی سراج حقانی کو اسلام آباد طلب کیا اور کہا کہ وہ اپنی جنگ جاری رکھیں۔

طالبان کو کہا جا رہا ہے کہ اپنے ایران اور پاکستان کے ساتھ دوستیاں کی ہیں، جو کوئی کفار کے ساتھ دوستی کرے گا وہ کافر ہے تو لہذا آپ لوگ بھی کافر ہو گئے آپ لوگوں نے پاکستان جانےکے لئے داڑھیاں چھوڑی ہوئی ہیں۔ اس سے پہلے آپ اپنی داڑھیاں چھوٹی کرتے تھے، اب بڑھانے لگے ہیں۔

ملامنان نیازی کے فرمودات سن لیے ، خود بھارت کی گود میں‌ پل رہا ہے اوربھارت اورایران میں بینک اکاونٹس ہیں اورثابت یہ کرنے کی کوشش کررہا ہے کہ اس کا اورافغانوں کا اصل دشمن بھارت اورعالم کفرنہیں بلکہ پاکستان ہے

اب ملامنان نیازی نے ایک اورکہانی سنادی ہے اورکہتے ہیں کہ انہوں نے اشرف غنی کی حکومت کوبچایا تویہ تو میں پہلے ہی واضح کرچکا ہے کہ درپردہ ملامنان نیازی یہ کھیل کھیلتے رہے ہیں اورامریکہ اوربھارت کے ہاتھوں استعمال ہوکرافغان طالبان کوکابل سے دوررکھنے کے لیے وہ ملامنان نیازی کواشرف غنی کوتحفظ دینے کا خفیہ مشن سرا نجام دیتے رہے ہیں

ملامنان نیازی یہ بھی کہہ رہے ہیں‌کہ وہ انہوں نے نیٹو کے خلاف جہاد کیا تویہ وہ کیوں نہیں بتاتے کہ جب نیٹو ،امریکہ اوردیگرقوتیں افغستان کے چپے چپےسے افغان طالبان کوتلاش کرکے ان کے خلاف کارروائیاں کررہے تھے توہرات میں وہ کیوں محفوظ رہے ، ہرات میں ملامنان نیازی کولاجسٹک سپورٹ کس نے دی ، اگروہ خود نہیں بتائیں گے تواگلی باریہ بھی بتادوں‌گا کہ ملامنان نیازی کو لمحہ بہ لمحہ حالات سے باخبرکون رکھ رہا تھا اوران کے خلاف کیوں نہ کارروائی کی گئی جبکہ وہ خود اپنے آپ کوطالبان کمانڈربھی کہتے ہیں‌

ملامنان نیازی یہ کیوں نہ بتارہےکہ ان کے پاکستان اورطالبان مخالف غیرملکی قوتوں سے کیا معاملات چل رہے ہیں‌، ان کے گروہ کو ماہانہ تنخواہیں کون ادا کررہاہے ، ان کے گھروں کے چولہے کون جلا رہے ہے جبکہ بقول ملامنان نیازی کے کہ وہ توپہاڑوں میں‌لڑرہے ہیں ، وہ یہ کیوں نہیں بتاتے کہ ہرات میں ملامنان نیازی کی سینکڑوں گاڑیوں کا فیول کون فراہم کررہا ہے،

آخرکوئی توقوت ہے ناں‌ جو اس گروہ کی تمام مالی ضروریات پوری کررہا ہے اورپھریہ حقائق سے ثابت بھی ہوگیا ہے کہ ملامنان نیازی بھارت اورایران کی ہمدردیاں رکھتے ہیں‌

اصل بات یہ ہےکہ عین اس و قت جب امریکہ افغانستان سے نکل رہا ہے ،سب سے زیادہ پریشانی بھارت اورامریکہ کےساتھ ساتھ ان قوتوں کوہے جویہ سمجھتے ہیں کہ امریکہ کےجانے بعد افغان طالبان ان کا کیا حشر کریں گے وہ اپنی بوئی فصل کواپنی آنکھوں‌کے سامنے کاشت ہوتے ہوئے دیکھ رہے ہیں‌

یہی وہ قوتیں ہیں‌جو سخت پریشان ہیں کہ اگراس موقع پر پاکستان اورافغان طالبان کے اثرورسوخ کونہ روکا گیا توپھرافغانستان میں بھارتی مفادات کا تحفظ کون کرے گا، بھارتی سرمایہ کاری کو کون بچائے گا ، امریکہ کے خفیہ مشن کوکون جاری رکھے گا ، یقینا دشمن اتنا توبے وقوف نہیں کہ وہ میدان خالی کرکے بھاگ جائے گا اور پکی پکائی کھیر پاکستان کےلیے چھوڑ دیے گا ایسا نہیں ہے

میری اطلاعات کے مطابق پاکستان اورافغان طالبان کی مخالف قوتوں نے اپنا سارا بندوبست کیا ہوا ہے ، درجس سے زائد گروہوں کوباقاعدہ تربیت دی گئی ہے اورملامنان نیازی جیسے افراد کے ذریعے اس مشن کومکمل کرنے یا یوں بھی کہہ سکتے ہیں کہ بھارتیوں ، امریکیوں اوران کے وفاداروں کوافغآن طالبان کےغیض وغضب سے بچانے کے لیے یہ مہرے تیارکیے گئے ہیں

لیکن یاد رکھیں اب بھارت اورامریکہ کا دورگزرچکا جوکرنا تھا انہوں نے کرلیا اگراتنے ہی طاقتورہوتے توپھرپاکستان کی منتیں کرکے افغانستان سے واپسی کا محفوظ راستہ نہ مانگتے ، بھارت کی بھی چیخیں نکلیں گی ، اورپھرجوبھی ان کا وفادار ہوگا وہ بھی افغان قوم کے سامنے ننگا ہوگا ، کوئی ان کونہیں بچا سکے گا ،

پاکستان کودھمکیاں دینے والے بھی سن لیں پاکستان ایک بہت بڑی طاقت بن کرابھررہا ہے ،پاکستان نے تمام بیرونی سازشوں اورپراکسیوں کا بھرپورجواب دیا ہے ، مسئلہ بیرونی نہیں ، مسئلہ اندورنی ہے ،

پاکستان کو”ملامنان نیازی ” کی دھمکیوں‌ کا ڈرنہیں ، ملامنان نیازی کوبھی پتہ ہے کہ وہ کن ہاتھوں‌ میں کھیل رہے ہیں‌

بیرونی سازشوں سے توپاکستان احسن انداز سے نمٹ رہا ہے مگروہ عناصرجوبیرونی قوتوں کے آلہ کاراوران کے نظریات کوپروان چڑھانے کے لیے مختلف ہتھکنڈے استعمال کررہےہیں ، ریاست ان کو بھی جانتی ہے ، اللہ اس ملک کوہمیشہ ہمیشہ سلامت رکھیں گے اورپاکستان سے مختلف معاملات کی آڑ میں دشمنی کرنے والے نیست ونابود ہوں گے ، ذلیل ورسوا ہوں گے یہ ملک قیامت تک قائم رہے گا