وکلا کی جعلی ڈگریوں کے حوالے سے کیس،عدالت نے اہم شخصیت کو کیا طلب

وکلا کی جعلی ڈگریوں کے حوالے سے کیس،عدالت نے اہم شخصیت کو کیا طلب

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں وکلا کی جعلی ڈگریوں کے حوالے سے کیس کی سماعت ہوئی،

عدالت نے درخواست پر سماعت دس مارچ تک ملتوی کر دی ۔عدالت نے رپورٹ غیر تسلی بخش قرار دے دی۔عدالت نے آئندہ سماعت پر وی سی پنجاب یونیورسٹی کو طلب کر لیا عدالت کے روبرو رجسٹرار پنجاب یونیورسٹی نے اپنے وکیل اویس خالد کے ذریعے وکلا کی چیک کی گئی ڈگریوں کا ریکارڈ پیش کر دیا

عدالت نے نومنتخب ممبران پنجاب بار کونسل کی ڈگریوں کی بابت پراگرس رپورت طلب کر رکھی تھی،دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ سول ججوں کی ڈگریوں کی تصدیق کروانے کے لیے تیار ہیں ۔عدالت نے پنجاب بار میں بوگس ڈگری ہولڈرز کامیاب امیدواروں کا نوٹیفیکشن معطل کر دیا تھا عدالت نے بوگس ڈگری ہولڈر امیدواروں کے لائیسنس بھی معطل کر دیے تھے

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ محمد قاسم خان نے مس گلزار بٹ ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی،درخواست گزار نے کہا کہ اگر تمام وکلاء کی ساری ڈگریوں کی تصدیق ممکن نہیں تو امیدواروں کی ساری ڈگریاں تصدیق کرالے، گزشتہ سماعت پر چیف جسٹس نے وکلا کی ڈگریوں کی تصدیق تک بار کونسل کے نتائج روکنے کی استدعا مسترد کر دی تھی

چیف جسٹس نے قرار دیا تھا کہ میں جمہوری نظام کے چلتے رہنے کا قائل ہوں،چیف جسٹس نے وکلا کی ڈگریوں کی تصدیق کے حوالے سے رجسٹرار ہائی کورٹ کی سربراہی میں کمیشن قائم کر دیا تھا چیف جسٹس نے کہا تھا کہ جن امیدواروں کیخلاف رپورٹ آئیگی تو ریٹرننگ آفیسر دربارہ نوٹیفکیشن جاری کرے گا چیف جسٹس نے تمام امیدوارپنجاب با کونسل کو اپنی ساری اسناد ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کو ایک ہفتے میں جمع کروانےکی ہدایت کی تھی چیف جسٹس نے کہا کہ رجسٹرار ہائی کورٹ ڈگریاں یونیورسٹی کو بھیجے گا،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.