خدیجہ شاہ ؛ ضمانتیں منظور کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا گیا

خدیجہ شاہ نے متنازع ٹویٹ کیا تھا
0
86
Khadija Shah

لاہور ہائیکورٹ نے معروف ڈیزائنر خدیجہ شاہ کی دو مقدمات میں ضمانتیں منظور کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا ہے جبکہ اس فیصلے میں کہا گیا ہے کہ جناح ہاؤس کے اندر ملزمہ کے آگ لگانے کے کوئی ثبوت موجود نہیں ہیں اور جسٹس عالیہ نیلم کی سربراہی میں لاہور ہائیکورٹ کے دو رکنی بینچ نے خدیجہ شاہ کی جناح ہاؤس اور عسکری ٹاور جلاؤ گھیراؤ کے مقدمات میں ضمانتیں منظور کرنے کا تحریری فیصلہ جاری کردیا ہے.

جبکہ اس تحریری فیصلے میں کہا گیا ہے کہ خدیجہ شاہ نے متنازع ٹویٹ کیا تھا اور بعد میں ڈیلیٹ کردیا، خدیجہ شاہ نے متنازع ٹویٹ پر معافی بھی مانگی، ریاست ماں جیسی ہوتی ہے، معافی مانگنے پر شہری کو موقع دینا چاہیئے جبکہ عدالتی فیصلے میں کہا گیا کہ پراسکیوشن کے مطابق خدیجہ شاہ جناح ہاؤس کے باہر نعرے لگاتی پائی گئی تھی اور جناح ہاؤس کے اندر ملزمہ کے آگ لگانے کے کوئی ثبوت موجود نہیں اور ملزمہ 25 مئی سے گرفتار ہے تاحال ٹرائل شروع نہیں ہوا اور عدالت جناح ہاؤس مقدمے میں ضمانتیں منظور کرنے کا حکم دیتی ہے، عدالت عسکری ٹاور مقدمے میں ضمانت منظور کرنے کا حکم دیتی ہے۔
مزید یہ بھی پڑھیں:
کسان، مزدور اور قوم پیپلزپارٹی سے امیدیں لگائے بیٹھی ہے۔ بلاول بھٹو زرداری
جناح ہائوس حملہ کیس، خدیجہ شاہ سمیت 6 ملزمان کی ضمانت منظور
انٹر بینک؛ روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قدر میں پھر اضافہ

واضح رہے کہ فیصلے کے مطابق عسکری ٹاور میں خدیجہ شاہ کے اندر داخل ہونے سے متعلق گواہوں کے بیانات میں تضاد ہے، عسکری ٹاور کے مقدمے میں مزید انکوائری درکار ہے، عدالت خدیجہ شاہ کی 5 لاکھ روپے مچلکوں کے عوض عسکری ٹاور مقدمے میں ضمانت منظور کرنے کا حکم دیتی ہے، عدالت عالیہ نے فیصلے میں مزید لکھا ہے کہ درخواست گزار نے عسکری ٹاور کے مقدمے میں بھی متنازع ٹویٹ کو ڈیلیٹ کیا اور معافی مانگی یاد رہے کہ خدیجہ شاہ سابق آرمی چیف آصف نواز جنجوعہ کی نواسی اور سابق وزیر خزانہ سلمان شاہ کی بیٹی ہیں۔ اور وہ مشہور فیشن برانڈ ایلان کی کریٹو ڈائریکٹر بھی ہیں۔

Leave a reply