fbpx

ضمنی انتخابات، ن لیگی کارکنان کو گرفتار کیا جا رہا ہے، ن لیگ کا دعویٰ

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق ن لیگ نے الزام عائد کیا ہے کہ ضمنی الیکشن کے دوران ہمارے کارکنان کو گرفتار کیا جا رہا ہے

ن لیگی رہنما سائرہ افضل تارڑ کا کہنا ہے کہ پی پی 51الیکشن میں حکومت بوکھلاہٹ کا شکار ہو گئی ہے پولیس ہمارے کارکنوں کو گرفتار کر رہی ہے، شکست کو دیکھ کر پی ٹی آئی اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر چکی ہے،

عطاء اللہ تارڑ کا کہنا ہے کہ وزیرآباد میں ن لیگی کارکنوں اور رہنماؤں کے گھروں پر چھاپے مارے گئے ہیں متعدد کو گرفتارکر لیا گیا ہے میاں مدثر نذیر،رانا ناصر ، رضا راٹھ ، جاوید مہر کو گرفتار کیا گیا ،الیکشن سے توجہ ہٹانے کےلیے کارکن گرفتار کئے جا رہے ہیں ہمارا الیکشن پولیس کے نہیں پی ٹی آئی کے خلاف ہے،

عطاتارڑ اور سائرہ افضل تارڑ کارکنوں کے رہائی کے لیے آر او دفتر وزیر آباد پہنچ گئے

ڈسکہ میں لیگی امیدوار نوشین افتخار نےپولنگ اسٹیشن گورنمنٹ ڈگری کالج کا دورہ کیا،نوشین افتخار نےبیلٹ بکس کھلے ہونے اور دھاندلی کا الزام لگایا اس دوران امیدوار اور عملے میں تلخ کلامی بھی ہوئی

دوسری جانب چیف الیکشن کمشنرنے صوبائی الیکشن کمشنرز پنجاب اور خیبر پختونخوا کو ہدایات جاری کی ہیں کہ انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر بلا تفریق کارروائی کی جائے، انتخابات کے آزادانہ منصفانہ اور غیر جانبدارانہ انعقاد کویقینی بنا یا جائے،

قومی اور صوبائی اسمبلی کے دو دو حلقوں پر ضمنی انتخابات کے لیے پولنگ  جاری ہے این اے 75 ڈسکہ اور پی پی 51 گوجرانوالا میں مسلم لیگ ن اور تحریک انصاف کے درمیان کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے پنجاب اسمبلی کی نشست پی پی 51 مسلم لیگ ن کے ایم پی اے شوکت منظور چیمہ کے انتقال کے باعث خالی ہوئی تھی اور ن لیگ نے شوکت منظور چیمہ کی بیوہ بیگم طلعت منظور چیمہ کو اس پر امیدوار نامزد کیا ہے جب کہ تحریک انصاف نے چوہدری محمد یوسف کو میدان میں اتارا ہے، جماعت اسلامی کے امیدوار ناصرمحمود ہیں (ن) لیگ نے عام انتخابات کے دوران یہ نشست 31 ہزار سے زائد ووٹوں کی برتری سے جیتی تھی۔

قومی و صوبائی اسمبلی کے حلقوں میں پولنگ جاری، ن لیگ کا پولنگ کے‌ آغاز سے ہی دھاندلی کا الزام

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.