ماہرہ خان سے متعلق بیان، سونیا حسین اور شرمین عبید چنائے میں لفظی جنگ

0
49
ماہرہ خان سے متعلق بیان، سونیا حسین اور شرمین عبید چنائے میں لفظی جنگ #Baaghi

پاکستان کی معروف فلمساز شرمین عبید چنائے نے اداکارہ سونیا حسین شاہ رخ خان کے ساتھ بطور معاون اداکارہ کام نہ کرنے کے حوالے سے دیئے گئے بیان پر آڑے ہاتھوں لے لیا جس پر سونیا حسین نے بھی شدید ردعمل دیا-

باغی ٹی وی :سونیا حسین نے 2018 میں ایک شو میں شرکت کی تھی جس کا ویڈیو کلپ سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہا ہے جس میں ان سے پوچھا گیا تھا کہ اگر وہ ماہرہ ہوتی تو کس فلم میں کام نہ کرتیں ، جس پر ماہرہ کی تین فلموں ورنہ، رئیس، ہو من جہاں کا نام لیا گیا تھا۔

سونیا حسین نے کہا تھا کہ وہ ماہرہ ہوتیں تو کبھی بھی رئیس میں کام نہ کرتیں کیونکہ انہیں شاہ رخ خان کے ساتھ کام کرنے کا کوئی شوق نہیں۔

تاہم اس پر آسکر ایوارڈ یافتہ پاکستانی فلم ساز شرمین عبید چنائے نے سونیا حسین کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ آپ کبھی ماہرہ خان جیسی بن ہی نہیں سکتیں، کبھی بھی ایسا سوچیے گا ہی نہیں کہ آپ کو نہ کہنے کی ضرورت پڑے گی۔

فلم ساز نے اپنے کمنٹ میں اداکارہ کیلئے سخت الفاظ کا استعمال کیا اورسونیا حسین کی پرورش پر بھی سوال اٹھایا، انہوں نے لکھا کہ آپ کی بات آپ کی پرورش کی عکاسی کررہی ہے۔

تاہم اب شرمین عبید کے بیان پر سونیا حسین نے بھی ایک انسٹاگرام اسٹوری شیئر کرتے ہوئے ردعمل دیا ہے۔

شرمین عبید کے بیان پر ردعمل میں سونیا نے لکھا کہ آپ کسی ایک اداکارہ کی حوصلہ افزائی کر کے اور دوسرے کو نیچا دکھا کر میری پرورش پر سوال کر رہی ہیں۔

اداکارہ نے لکھا کہ عالمی وبا نے لوگوں کو اتنا فالتو وقت دے دیا ہے کہ وہ باتوں کا غلط مطلب لے کر آپ پر ہی تنقید شروع کردیتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر مجھ سے ماہرہ کی کسی فلم کے انتخاب کا سوال کیا جاتا تو میں یقیناً ’ورنہ‘ کا انتخاب کرتی کیونکہ کام میں میں آزادی اظہار کو کبھی بھی کسی کی توہین نہیں سمجھا جاسکتا۔

سونیا حسین نے لکھا کہ مس چنائے آپ کے الفاظ، لہجہ کسی صورت ایک ایسی خاتون کو نہیں پیش کررہے تھے جو کوئی عالمی اعزاز اپنے پاس رکھتی ہوں۔

سونیا نے لکھا کہ میں نے کبھی ماہرہ بننے کی کوشش نہیں کی، ماہرہ ایک بہترین اور باصلاحیت اداکارہ ہیں لیکن میرے راستے اور منزل کچھ اور ہیں –

شرمین عبید چنائے کی صنفی بنیادی حقوق پر بنائی گئی دستاویزی فلم "ڈے ٹائم ایمی ایوارڈز”…

Leave a reply