fbpx

اقوام متحدہ میں پاکستان کے سفیر منیر اکرم نے ایک بار پھر کشمیر کا مقدمہ پیش کر دیا

اقوام متحدہ میں پاکستان کے سفیر منیر اکرم نے ایک بار پھر کشمیر کا مقدمہ پیش کر دیا
اقوام متحدہ میں پاکستان کے سفیر منیر اکرم نے اقوام متحدہ نیویارک میں چوتھی کمیٹی میں مشترکہ جنرل ڈیبیٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ جموں و کشمیر پر بھارتی قبضہ جدید دور کی نوآبادیات کا بدترین مظہر ہے،

منیر اکرم کا کہنا تھا کہ ہزاروں کشمیری نوجوانوں کی غیرقانونی حراست جن میں خواتین اور بچے بھی شامل تھے، بھارت نے احتجاج کو پرتشدد طریقے سے ختم کرتے ہوئے پورے محلے اور دیہاتوں کو اجتماعی سزا کے طور پر تباہ کر دیا، اقوام متحدہ کے بانیوں نے اقوام متحدہ کے چارٹر کے پہلے آرٹیکل میں اس حق خود ارادیت کی اہمیت کو واضح طور پر تسلیم کیا ہے، اقوام متحدہ کے شہری اور سیاسی حقوق اور معاشی اور سماجی حقوق کے مشترکہ آرٹیکل II میں شامل بنیادی حق ہے، یہ حق اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی متعدد قراردادوں میں پر زور طریقے سے پیش کیا گیا ہے کہ ریاست کے حتمی اختیار کا فیصلہ اس کی عوام آزادانہ اور منصفانہ رائے شماری کے ذریعے کریں، مڈیکولونائزیشن کا اعلامیہ یہ حکم دیتا ہے کہ لوگوں کو محکومیت، تسلط اور استحصال کے تابع کرنا اقوام متحدہ کے چارٹر کے خلاف ہے،مشہور کشمیری رہنما سید علی شاہ گیلانی گذشتہ مہینے بھارتی نظربندی کے بعد انتقال کر گئے تھے، کشمیری رہنما سید علی شاہ گیلانی آن کے جسد خاکی کو ان کے خاندان سے چھین لیا گیا،کشمیری رہنما سید علی شاہ گیلانی کے اہل خانہ کو اسلامی تدفین کی رسم کے حق سے انکار کیا گیا، یہ نہ صرف بھارتی ظلم کا ایک پیمانہ ہے بلکہ اس سے کشمیری عوام کی آزاد آواز کے مخالف بھی ہے، کشمیر میں آباد ہونے کے لیے 3.4 ملین سے زائد جعلی ڈومیسائل سرٹیفکیٹ جاری کیے گئے ہیں ،

سفیر منیر اکرم کا مزید کہنا تھا کہ دنیا بھر میں کئی پرانے اور نئے تنازعات بشمول جموں و کشمیر کے تنازعات جہاں اقوام متحدہ کے پرانے مشنوں میں سے ایک اقوام متحدہ کے فوجی مبصر گروپ بھارت اور پاکستان (UNMOGIP) تعینات ہے، استعمار کا خاتمہ اقوام متحدہ کے نامکمل ایجنڈے کا حصہ ہے، 1946 کے بعد سے 80 سابقہ کالونیوں نے آزادی حاصل کی ہے لیکن اب بھی ایسے لوگ موجود ہیں جو حق خود ارادیت سے محروم ہیں،مشرق وسطیٰ میں پائیدار امن صرف دو ریاستی حل اور فلسطین کی ایک قابل عمل ، آزاد اور متنازعہ ریاست کے قیام کے ذریعے حاصل کیا جا سکتا ہے ، دنیا کو فلسطینیوں کے لیے ہر ممکن سماجی ، اقتصادی اور انسانی امداد جاری رکھنی چاہیے ، امن قائم کرنا چارٹر کے اجتماعی سلامتی کے تصور کا سب سے واضح مظہر ہے، گزشتہ 6 دہائیوں کے دوران پاکستانی امن دستوں نے بلند حوصلے ، نظم و ضبط ، بھرپور تجربے کی وجہ سے کچھ مشکل ترین ماحول میں مؤثر طریقے سے کام کیا، پاکستان انفینٹری ، ایوی ایشن ، فورس پروٹیکشن ، انجینئرنگ یونٹس ، سگنل کمپنیاں ، ایف پی یو اور کمیونٹی انگیجمنٹ پلاٹونز کی پیشکش کرنے کے علاوہ امن کی ٹیکنالوجی اور طبی صلاحیت میں ٹھوس وعدے کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، امن فوج کے اہلکاروں کا تحفظ ایک ترجیح ہے۔ اس کے لیے فیلڈ آپریشن کے لیے مناسب وسائل ، اچھی تربیت یافتہ امن فوج کی ضرورت ہے، نیدرلینڈ کے ساتھ مل کر پاکستان امن و سلامتی اور تحفظ کے بارے میں ایک امن وزارتی اجلاس کی میزبانی کرے گا، پاکستان نے ٹیکنالوجی پر بڑھتی ہوئی توجہ کا خیرمقدم کیا ہے تاکہ امن کی حفاظت کو بہتر بنایا جا سکے، کیمپ سیکورٹی ، قافلے کی نقل و حرکت ، ٹیلی میڈیسن ، انٹیلی جنس اور فیلڈ کمیونیکیشن کو مضبوط بنانے کے لیے جدید ٹیکنالوجی کا استعمال امن کی کارکردگی کو بھی بڑھا سکتا ہے، افریقی یونین کے ساتھ ہماری مسلسل مصروفیت اس کوشش کا مرکزی حصہ رہے گی، پاکستان نے فورم پر زور دیا جس پر کالونائزیشن ختم کرنے اور 1960 کے ڈیکولائزیشن کے اعلامیے پر عمل درآمد کا مطالبہ کیا گیا ہے،

دوسری جانب اقوام متحدہ میں پاکستان مشن کے قونصلر بلال چوہدری نے چوتھی کمیٹی میں بھارت کو کرارا جواب دیا ہے پاکستانی نمائندہ نے پاکستان کی جانب سے جواب کا حق استعمال کیا،بلال چوہدری کا کہنا تھا کہ سال بہ سال بھارت اس فورم پر غلط موقف پیش کرتا رہتا ہے، جموں و کشمیر بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ متنازعہ علاقہ ہے اور بھارت کا اٹوٹ انگ نہیں، بار بار غلط دعویٰ کرنا ، قانونی حقیقت کو تبدیل نہیں کرتا، سلامتی کونسل نے اپنی قراردادوں کے ذریعے جموں و کشمیر کو تسلیم کیا ہے کہ وہ ایک متنازعہ علاقہ ہے، ریاست جموں و کشمیر کا حتمی تصفیہ اقوام متحدہ کے زیراہتمام منعقد ہونے والی آزادانہ اور غیر جانبدارانہ رائے شماری کے جمہوری طریقے سے لوگوں کی مرضی کے مطابق کیا جائے، یہ قراردادیں بھارت اور پاکستان دونوں نے قبول کی ہیں، طویل عرصے سے بھارت نے جموں و کشمیر کے لوگوں کی جھوٹی داستان بیچنے کی کوشش کی ہے، اس دہشت گردی کا خود جائزہ لینے کی ضرورت ہے تاکہ مقبوضہ علاقے میں بڑے پیمانے پر مزاحمت کے پیچھے اصل وجوہات کو تلاش کیا جاسکے، بھارت کی بے رحمی، معصوم کشمیریوں کے خلاف بڑے پیمانے پر مظالم، قتل عام، عصمت دری، اندھا کرنا، جبری گمشدگیوں کا نشانہ بنانا، ہندوستانی مقبوضہ کشمیر میں آزادی کی تحریک کی اصل وجوہات ہیں، کشمیر میں بھارتی جرائم کی فہرست طویل ہے،

پاکستانی قونصلر بلال چوہدری کا مزید کہنا تھا کہ سلامتی کونسل کی قراردادیں بھارت اور پاکستان دونوں قبول کرتے ہیں، وہ 21 اپریل 1948 کی سلامتی کونسل کی قرارداد پر پابند ہیں جو اقوام متحدہ کے اصولوں میں سے ایک ہے، کشمیر پر قراردادوں میں کہا گیا ہے کہ بھارت اور پاکستان دونوں چاہتے ہیں کہ جموں و کشمیر کے بھارت یا پاکستان میں الحاق کے سوال کا فیصلہ آزادانہ اور غیر جانبدارانہ رائے شماری کے جمہوری طریقے سے کیا جائے، اقوام متحدہ کے کمیشن برائے بھارت اور پاکستان نے 13 اگست 1948 اور 5 جنوری 1949 کو منظور کی گئی، قراردادوں کو تقویت دی جن میں جموں و کشمیر میں بلا تفریق رائے شماری کا مطالبہ کیا گیا، اقوام متحدہ کے پختہ وعدوں کے پس منظر میں جموں و کشمیر کے عوام کو 74 سالوں سے حق خود ارادیت سے انکار ، اس کمیٹی میں ہماری بحث کے لیے سب سے زیادہ اہم مسئلہ ہے ، یہ قابل مذمت ہے کہ اس تنگ سیاسی وجوہات کی وجہ سے بھارت کشمیر میں تحریک آزادی کو دہشت گردی کے مترادف قرار دیتا ہے، یہ ایک جھوٹ ہے جو کہ انسداد دہشت گردی کی بین الاقوامی کوششوں کو بری طرح کمزور کرتا ہے،اس طرح کے پروپیگنڈے کا مقصد صرف یہ ہے کہ آپ عالمی برادری کو دھوکہ دے کر دہشت گردی کو بڑھاوا دے کر کشمیریوں کی حق خود ارادیت کی جدوجہد کو بدنام کرنا چاہتے ہیں،‎اقوام کے حق خود ارادیت کا ادراک انفرادی حقوق کے موثر اندوز ہونے کی شرط ہے، بھارت الفاظ کے پیچھے نہیں چھپ سکتا،آباد کار نوآبادیاتی منصوبے کے ساتھ بھارت مقامی لوگوں کے مکمل خاتمے کو یقینی بنانا چاہتا ہے، کشمیری موومنٹ ڈیموگرافک انجینئرنگ کو ریگولیٹ کرنے سے لے کر لینڈ ہولڈنگ اور وسائل نکالنے تک بھارت کشمیری عوام کے حقوق کو سلب کرتا رہا ہے،اقوام متحدہ کے پاس نہ صرف حق ہے بلکہ مسئلہ کشمیر پر بات چیت کرنے کی ذمہ داری بھی ہے،

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!