ورلڈ ہیڈر ایڈ

پہلے حافظ سعید اب ذاکر نائیک بھارت کے گلی کی ہڈی بن گئے – – – سعید جعفر

حافظ سعید کی طرح ڈاکٹر ذاکر نائیک بھی انڈین حکومت کیلئے گلے کی ہڈی بنا ہوا ہے
کچھ دن پہلے ایک بار پھرانٹرپول نے انڈیا سے فرار ذاکر نائیک کی حوالگی عدم ثبوت کی بنا پر عمل میں نہیں لائی
میں ہمیشہ سے ذاکر نائیک سے اس کے لباس کی وجہ سے نفرت کرتا چلا آیا
کیونکہ بچپن سے ہمیں اس لباس سے نفرت سکھائی گئی
آج سے 15,20سال پہلے تک ہمارے ان دیسی علاقوں میں پینٹ شرٹ کو ایک معیوب لباس سمجھا جاتا تھا
ہمارے قاری صاحب نے ایک بار پینٹ شرٹ میں آئے معصوم بچوں کو واپس گھر بھیج دیا تھا کہ پہلے انسانوں جیسا لباس پہن کر آؤ
مگر کچھ بڑے ہوئے تو معلوم ہوا
کہ ذاکٹر نائیک ایک فزیشن ڈاکٹر ہے
اس نے جہاں تعلیم حاصل کی وہاں اس طرح کا لباس عام بات تھی
ڈاکٹر بننے کے بعد ذاکر نائیک میں اسلام کی تڑپ اٹھی
بے شمار غیر مسلم اس کی دعوت کی وجہ سے اسلام قبول کر چکے ہیں
ایک عیسائی کی پوسٹ میں نے خود پڑھی تھی کہ اسلام پر ہونے والے جو اعتراضات میرے ذہن میں تھے
ذاکر نائیک سے مجھے ان سب کے جوابات انتہائی تسلی بخش ملے
اور وہ مسلمان ہو گیا
بدقسمتی سے بنگلہ دیش میں ایک بارہونے والے دھماکوں میں ملوث افراد نے خود کو ذاکر نائیک کا پرستار ظاہر کیا
جس کے بعد ذاکر نائیک پر دہشت گردی کا الزام لگادیا گیا
حالانکہ وہ داعی مزاج بندے ہیں
آج کافی عرصے بعد انکا تازہ بیان براہ راست سنا تو دل سے دعا نکلی
یا اللہ اسے سلامت رکھنا
پرائیویٹ سکول چلانے والے جو لوگ اسلامی ذہن رکھتے ہیں
انہیں میں ذاکر نائیک کا ایک بیان جس کا عنوان ہے
"تعلیم دونوں جہان کیلئے ”
تجویز کرتا رہتا ہوں
تین گھنٹے کا بیان ہے
میں نے پورا سنا ہوا ہے
پرائیویٹ سکولوں کے مالکان ایک بار تین گھنٹے نکال کر وہ بیان ضرور سنیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.