کرونا میں ہوا بازی کی صنعت زوال کا شکار،کمپنی کا 15 ہزار ملازمتوں میں کمی کا اعلان

0
38

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق چین سے پھیلنے والے خطرناک کرونا وائرس سے بچاؤ کے لئے پروازوں پر کئی ممالک نے پابندی عائد کی اور پروازیں معطل کیں، اس وجہ سے عالمی ہوا بازی کی صنعت کافی متاثر ہوئی ہے،

ایرواسپیس دیو ایئربس نے منگل کے روز اعلان کیا ہے کہ وہ اپنی عالمی ورک فورس میں تقریبا 15،000 ملازمتوں میں کمی کرے گی جو کمپنی کی تاریخ میں سب سے زیادہ ملازمتوں کی کمی ہو گی

تجارتی طیاروں کی کاروباری سرگرمیوں میں 40 فیصد کمی اور ایئر لائن کی صنعت کو درپیش "غیر معمولی بحران” کا حوالہ دیتے ہوئے ، ایئربس نے کہا کہ وہ دنیا بھر میں اپنی نوکریوں کو 10 فیصد کم کردے گی ، فرانس ، جرمنی ، اسپین اور برطانیہ میں کمپنی ملازمین کو چھٹیاں دی گئی ہیں

کمپنی کے چیف ایگزیکٹو ، گیلوم فیوری نے ملازمین کو متنبہ کیا ہے کہ انہیں خود کو اب سخت اوقات میں کام کرنا ہو گا، اس کی توقع نہیں ہے کہ ہوائی سفر 2023 سے قبل وائرس سے پہلے کی سطح پر واپس آجائے گا اور ممکنہ طور پر 2025 تک بھی ایسا نہیں ہوگا۔

نیو یارک ٹائمز کے مطابق مسٹر فیوری نے کہا کہ ایئر بس کی صنعت نے کبھی بھی اتنے بڑے بحران کا سامنا نہیں کیا،۔ ہمیں اس بات کو یقینی بنانا چاہئے کہ ہم اپنے کاروبار کو برقرار رکھ سکیں اور بحران سے نمٹنے کے لئے کام کریں

کورونا وائرس نے بہت سارے عالمی ہوائی سفر کو روک رکھا ہے ، ایئر لائنز میں اب مسافر کم سفر کریں گے اور اس کا مطلب ہے کہ نئے طیاروں کی کم ضرورت ہے۔

یہ کمپنی فرانس میں اپنے 49،000 ملازمین میں سے 5000 ، جرمنی میں 45،500 عہدوں میں سے 5،100 ، اسپین میں 12،500 کارکنوں میں سے 900 اور برطانیہ میں 11،000 میں سے 1،700 کو نوکریوں سے فارغ کر رہی ہے۔ دنیا بھر میں ائیر بس کے دیگر مقامات پر مزید 1،300 افراد کو بھی نوکریوں سے نکالا جائے گا

فرانسیسی حکومت ، جو کاروباری اداروں کی حمایت کررہی ہے۔ وزارت خزانہ کے ایک ترجمان نے کہا ، "ہم توقع کرتے ہیں کہ ایئربس ملازمت میں کٹوتیوں کی تعداد کو کم کرنے کے لئے حکومت کی پالیسی کے مطابق کام کرے گی

انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن کے ذریعہ گذشتہ ہفتے شائع ہونے والی تحقیق میں متنبہ کیا گیا تھا کہ یورپ میں ہوائی کمپنیوں کو 2020 میں 21.5 بلین ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑا تھا کیونکہ مسلسل عالمی سفر پر پابندیوں کی وجہ سے مسافروں کی طلب آدھے سے کم ہوگئی تھی۔

Leave a reply