افسانہ نویس و ناول نگار اور مترجم قیصر نذیر خاورانتقال کرگئے.

0
75

قیصر نذیر خاورؔ یکم اگست 1953ء کو لاہور میں پیدا ہوئے۔ رہائش انارکلی میں تھی. 1976ء میں پنجاب یونیورسٹی سے جیالوجی اور 1983ء میں پبلک ایڈمنسٹریٹریشن میں ڈگریاں حاصل کیں. اوورسیز پاکستانیز فاؤنڈیشن میں ملازم ہوئے اور بطور ڈائریکٹر جنرل (ایجوکیشن) ، او پی ایف ریٹائر ہوئے ۔
ترقی پسند لٹریچر کی اشاعت کیلئے دوستوں نے مل کر جو ادارہ مکتبہ فکر و دانش قائم کیا تھا، اس کے شرکاء نے اگرچہ الگ الگ کئی ادارے قائم کرلئے لیکن مکتبہ فکرودانش کا نام قیصر نذیر خاور نے زندہ رکھا. اپنی تمام کتابیں اسی ادارے کے نام سے شائع کیں.

قیصر نذیر خاور کی تخلیقات و تراجم :

انگولا سے زائر تک ، 1976
یک سِنگھے ‘ ( بارہ افسانے )، جاپان کے مشہور ادیب ہاروکی موراکامی کے منتخب افسانوں کے اردو تراجم 2012
حکایات ِ عالم‘ ( 101 حکایات کا انتخاب اور اردو ترجمہ، 2018ء،
۔جولیٹ اور دیگر کہانیاں، (نوبل انعام یافتہ ادیبہ ایلس منرو کے دس منتخب افسانوں کا ترجمہ، 2018ء،

۔عالمی ادب سے ایک انتخاب ، ( دنیا بھر سے 25 منتخب ادیبوں کے تعارف کے ساتھ ان کے منتخب افسانوں کا اردو ترجمہ 2018ء،

۔عالمی ادب اور افسانچہ، (196 افسانچے)، 2018ء،

۔”دوسری نسل کا المیہ”، برناڈ شیلنک (Bernhard Schlink) کے جرمن ناول Der Vorlese اور پر مبنی فلم The readerکے اسکرپٹ کا ترجمہ 2019ء

۔”وارفکشن: سرحد کے آس پاس کہیں اور دیگر افسانے”، (منتخب افسانوں کےاردو تراجم اور طبع زاد تحریریں) ، 2019ء،
۔”اپنی محفل سے مت نکال ہمیں”، کازُوا اِشیگورو کے ناول Never Let Me Go کا اردو ترجمہ اور مضامین، 2020ء،

"جھوٹ کی سرزمین اور دیگر افسانے” (عالمی ادب سے منتخب 28 افسانوں کا اردو ترجمہ) ، 2020ء

"انجان نگر میں کھلی کھڑکی اور دیگر افسانے” (عالمی ادب سے منتخب افسانوں کا اردو ترجمہ) ، 2020ء

"مچھلیوں کی خودکشی اور دیگر افسانے” (عالمی ادب سے منتخب افسانوں کا اردو ترجمہ)، 2020ء

"کیوں ھوئے خوار و زبوں”، جے ایشر (Jay Asher) کے ناول THIRTEEN REASONS WHY کا اردو ترجمہ، 2020ء،
کلب نا آفریدہ ( کامریڈ کلب علی شیخ کے مضامین )، 2021ء

"انُوکل اور دیگر کہانیاں”، مصنف: ستیہ جِت رے، قیصر نذیر خاور، 2021ء
"دی فادر ، دی سَن اینڈ دی ہولی گھوسٹ”، (طبع زاد ناولٹ) 2022ء

"ادھ کھلے دریچے”، (طبع زاد ناولٹ)، 2022ء
"فائٹ کلب ” ، فینش ادب: افسانے، شاعری، بچوں کی کہانیاں ، (Finland Literature) ، قیصر نذیر خاور، غلام حسین غازی 2022ء

Leave a reply