کشمیریوں نے 27 اکتوبر کو یوم سیاہ کے طورپر منایا

0
63
kashmir un

اسلام آباد میں کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد جموں و کشمیراور جموں وکشمیر لبریشن سیل کے زیراہتمام 27 اکتوبر یوم سیاہ کے موقع پر اقوام متحدہ کے ملٹری آبزرور گروپ کے باہر احتجاجی مظاہرہ

کنٹرول لائن کے دونوں اطراف اور دنیا بھرمیں مقیم کشمیریوں نے 27 اکتوبر کو یوم سیاہ کے طورپر منایا ۔ اسلام آباد میں کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد جموں و کشمیراور جموں وکشمیر لبریشن سیل کے زیراہتمام یوم سیاہ کے موقع پر اقوام متحدہ کے ملٹری آبزرور گروپ کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا ۔ مظاہرے کی قیادت کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد کشمیر شاخ کے سینئر رہنما غلام محمد صفی نے کی جبکہ وزیر حکومت احمد رضا قادری نے آزاد حکومت ریاست جموں و کشمیر کی نمائندگی کرتے ہوئے خصوصی طور پر شرکت کی۔ مظاہرے سے آل پارٹیز حریت کانفرنس کے سیکرٹری جنرل شیخ عبد المتین، سینئر حریت رہنما سید یوسف نسیم ،داود خان یوسفزئی ، راجہ شاہین ، سید گلشن اقبال ،شوکت بٹ ،انجینئر حمزہ محبوب ، زاہد اشرف ، مہتاب اشرف ،ڈائریکٹر لبریشن سیل سرور حسین گلگتی، راجہ خان افسر خان ، پاکستان مسلم لیگ ن کے سنئیر رہنما سردار محمد صدیق ،نثار مرزا، سردار عبد الماجد ، سردار ساجد محمود ، سردار عظیم سرور،انچارج ڈیجیٹل میڈیا لبریشن سیل سردار نجیب الغفور خان، انعام الحسن کاشمیری، راجہ راشد رضا ، حکیم ندیم قادری ،سمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد کی بڑی تعداد شریک ہوئی۔

وزیر حکومت احمد رضا قادری نے کہا کہ 27 اکتوبر1947 کو بھارت نے کشمیری عوام کی خواہشات کے برخلاف اپنی فوج سرینگر کے ہوائی اڈے پر اتار کر جموں وکشمیر پرغیر قانونی اور غیر اخلاقی طورپر قبضہ کر لیاتھا۔ بھارتی حکومت کا یہ اقدام قانون تقسیم ہندوستان ، دو قومی نظریہ ، تمام ملکی اور بین الاقوامی قوانین اور اصولوں کی خلا ف ورزی اور کشمیری قوم کی خواہشات کے خلاف تھا ۔ہندوتوا کی پالیسی کا سب سے بڑا مظہر 27 اکتوبر کو ریاست پر ظالمانہ و غاصبانہ قبضہ تھا۔ مہاراجہ ہری سنگھ کے بیٹے نے بھارت سے الحاق کی دستاویزات پر اپنے والد کے دستخطوں سے انکار کیا ہے۔بھارت نے کل ورکنگ بائونڈری پر پاکستانی علاقے میں اپنا ڈرون بھیج کر ہمیں اشتعال دلانے کی بھونڈی کوشش کی ہے جس کی سخت مذمت کرتے ہیں۔مسئلہ کشمیر اور فلسطین کا ایشو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر مساوات کے عظیم جذبے کے تحت جلد حل کیا جانا چاہیے تاکہ دنیا میں امن قائم ہوسکے۔

سینئر حریت رہنما غلام محمد صفی نے کہا کہ مقبوضہ جموں وکشمیرمیں کشمیریوں کا قتل عام بھارتی ریاستی دہشت گردی کی بدترین مثال ہے اور کشمیرمیں بھارتی قابض فوج کی بڑھتی ہوئی پر تشدد کارروائیاں فورسز کو حاصل غیر ضروری اختیارات کا نتیجہ ہیں۔مقررین نے 27اکتوبر1947 کوجموں وکشمیر کی تاریخ کا سیاہ ترین دن قراردیا جب بھارتی افواج نے زبردستی کشمیر میں داخل ہوکر کشمیریوں کی آزادی اور تمام جمہوری حقوق کو سلب کر کے اس سرزمین پر زبردستی قبضہ کرلیا تھا اور تب سے آج تک کشمیری عوام پر مظالم ڈھائے جارہے ہیں اورکشمیریوں کی حق پر مبنی جدوجہد آزادی کو دبانے کیلئے ہرقسم کے ظالمانہ ہتھکنڈے استعمال کئے جارہے ہیں۔ حریت قائدین نے کہا کہ بھارت مقبوضہ جموں وکشمیر میں مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کی سازش کرر ہا ہے اور مقبوضہ علاقے میں غیر کشمیریوں کو ڈومیسائل جاری کر کے آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنا چاہتا ہے تاہم کشمیری عوام بھارت کو اسکے ناپاک عزائم میں ہرگز کامیاب نہیں ہونے دیں گے ۔ حریت قائدین نے بھارتی ریاستی دہشت گردی کی پر زور مذمت کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیرمیں حالیہ دنوں میں کشمیری نوجوانوں کے ماورائے عدالت قتل پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ بھارت کشمیریوں نوجوانوں کی نسل کشیُ جاری رکھے ہوئے ہے ۔ انھوں ٠نے اس عہد کا اعادہ کیا کہ کشمیری ہر قیمت پر اپنے حق خودارادیت کے حصول کے لئے اپنی مبنی بر انصاف جدوجہد جاری رکھیں گے۔ انہوں نے اقوام متحدہ اور عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے بھارتی مظالم کا نوٹس لیں اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کو حل کرنے میں مدد کریں۔احتجاجی مظاہرہ کے اختتام پر اقوام متحدہ کے فوجی مبصر کو بھارتی مظالم ، انسانی حقوق کی بدترین پامالیوں، اور ریاست میں ڈیموگریفک تبدیلیوں کی مذمت اور حق خودارادیت کے حصول اور اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل درآمد کے مطالبے پر مبنی یادداشت پیش کی گئی۔ پروگرام کی نظامت کے فرائض سردار نجیب الغفور خان نے ادا کئے ۔

Leave a reply