fbpx

طالبان نے خواتین پر پارکوں کے بعد جم میں جانے پر بھی پابندی عائد کر دی

کابل: افغانستان میں طالبان نے خواتین پر جم میں جانے پر بھی پابندی لگادی جہاں کا عملہ مکمل طور پر خواتین پر ہی مشتمل تھا۔

باغی ٹی وی : طالبان نے گزشتہ سال اگست 2021 میں ملک پر قبضہ کر لیا تھا انہوں نے وعدوں کے برعکس لڑکیوں کو مڈل سکول اور ہائی سکول میں داخلے پر پابندی عائد کر دی ہے، خواتین کو ملازمت کے زیادہ تر شعبوں سے روک دیا ہے-

انڈونیشین خاتون اول طیارے سے اترتے ہوئے پھسل کر گر گئیں،صدر کا اٹھنے میں مدد کرنے سے گریز

وائس آف امریکا کی رپورٹ کے مطابق افغانستان میں طالبان کے محکمے ’’نیکی کے فروغ اور بدی کی روک تھام‘‘ کی پولیس نے ابھی چند روز قبل ہی خواتین کے پارکوں اور تفریحی مقامات میں جانے پر بھی پابندی عائد کی تھی-

طالبان نے پابندیوں کو مزید سخت کرتے ہوئے اب خواتین کے ورزش کے لیے جم جانے پر بھی پابندی عائد کردی ہے جب کہ حمام خانوں میں خواتین کے جانے پر پہلے ہی پابندی عائد تھی-

وزارتِ فضیلت اور نائب کے ایک ترجمان نے کہا کہ یہ پابندی اس لیے لگائی گئی ہے کیونکہ لوگ صنفی علیحدگی کے احکامات کو نظر انداز کر رہے تھے اور خواتین مطلوبہ اسکارف یا حجاب نہیں پہن رہی تھیں۔ خواتین کے پارکوں میں جانے پر بھی پابندی ہے۔

امر بالمعروف و نہی عن المنکر کی وزارت کے ترجمان محمد عاکف صادق مہاجر نے اے ایف پی کو بتایا کہ جم جانے کی پابندی وہاں مرد ٹرینر یا پھر مخلوط عملے کی وجہ سے لگائی ہے۔

18 سال تک ائیر پورٹ پر رہنے والا شخص انتقال کر گیا

تاہم ایک خاتون کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہیں جس میں وہ روتے ہوئے بتارہی ہیں کہ طالبان نے اُن جمز میں بھی جانے پر پابندی عائد کردی جہاں ٹرینر اور دیگر عملہ خواتین پر ہی مشتمل تھا۔

وزارتِ فضیلت اور نائب کے لیے طالبان کے مقرر کردہ ترجمان محمد عاکف مہاجر کے مطابق، خواتین کے جموں اور پارکوں کے استعمال پر پابندی اس ہفتے نافذ ہو گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ گروپ نے گزشتہ 15 مہینوں میں خواتین کے لیے پارکس اور جم بند کرنے، مرد اور خواتین تک رسائی کے لیے ہفتے کے الگ الگ دنوں کا حکم دینے یا صنفی علیحدگی مسلط کرنے سے بچنے کے لیے "اپنی پوری کوشش” کی ہے لیکن، بدقسمتی سے، احکامات کی تعمیل نہیں کی گئی اور قوانین کی خلاف ورزی کی گئی، اور ہمیں خواتین کے لیے پارکس اور جم بند کرنے پڑے

مہاجر نے کہا کہ زیادہ تر معاملات میں، ہم نے پارکوں میں مرد اور خواتین دونوں کو اکٹھے دیکھا ہے اور بدقسمتی سے حجاب نہیں دیکھا گیا۔ اس لیے ہمیں ایک اور فیصلہ کرنا پڑا اور فی الحال ہم نے تمام پارکوں اور جموں کو خواتین کے لیے بند کرنے کا حکم دیا۔

انہوں نے کہا کہ طالبان کی ٹیمیں اداروں کی نگرانی شروع کر دیں گی تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ آیا خواتین اب بھی انہیں استعمال کر رہی ہیں۔


ایک خاتون پرسنل ٹرینر نے دی ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ کابل کے جم میں جہاں وہ کام کرتی ہے اس سے پہلے خواتین اور مرد ایک ساتھ ورزش یا تربیت نہیں کر رہے تھے اس نے کہا کہ دو آدمی جو دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ وزارتِ فضیلت اور نائب سے ہیں، اس کے جم میں داخل ہوئے اور تمام خواتین کو وہاں سے چلے گئے-

امریکہ کو چین کے ساتھ تنازع میں نہیں گھسیٹا جائے گا. امریکن صدر جوبائیڈن

طالبان کی طرف سے مقرر کیے گئے کابل پولیس چیف کے ترجمان خالد زدران نے کہا کہ انہیں جموں کی بندش یا گرفتاریوں پر احتجاج کرنے والی خواتین کے بارے میں فوری طور پر کوئی اطلاع نہیں ہے۔


افغانستان میں اقوام متحدہ کی خصوصی نمائندہ برائے خواتین ایلیسن ڈیوڈیان نے اس پابندی کی مذمت کی انہوں نے کہا کہ یہ طالبان کی جانب سے خواتین کو عوامی زندگی سے مسلسل اور منظم طریقے سے مٹانے کی ایک اور مثال ہے ہم طالبان سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ خواتین اور لڑکیوں کے تمام حقوق اور آزادیوں کو بحال کریں۔

کابل میں مقیم خواتین کے حقوق کی کارکن سودابہ نازہند نے کہا کہ جموں، پارکوں، کام اور اسکول پر پابندی سے بہت سی خواتین یہ سوچتی رہیں گی کہ افغانستان میں ان کے لیے کیا بچا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ صرف خواتین کے لیے نہیں بلکہ بچوں کے لیے بھی پابندی ہے بچے اپنی ماؤں کے ساتھ پارک جاتے ہیں، اب بچوں کو بھی پارک جانے سے روک دیا جاتا ہے، یہ بہت افسوسناک اور ناانصافی ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ برس اگست میں طالبان کے اقتدار میں آنے کے بعد سے افغانستان میں تاحال خواتین کی ملازمتوں، لڑکیوں کے سیکنڈری اسکول جانے، محرم کے بغیر سفر کرنے اور خواتین کے عوامی مقامات پر جانے پر پابندی ہے۔

مغربی ملک ایران میں میں عدم استحکام پیدا کر رہے ہیں،ایرانی وزیر خارجہ