fbpx

جنوبی سمندری چین میں کشیدگی،تائیوان امریکہ نےباہمی تجارتی مذاکرات کا اعلان کردیا

واشنگٹن:جنوبی سمندری چین میں کشیدگی،تائیوان امریکہ نےکیا باہمی تجارتی مذاکرات کااعلان،اطلاعات کے مطابق چین امریکہ معاملات میں کشیدگی کےچلتے تائیوان اورامریکہ نے باہمی تجارتی تعلقات کےفروغ کےلئےمذاکرات کا اعلان کردیا۔

جنوبی چین کےسمندری علاقے میں کشیدگی کے باوجود تائیوان اورامریکہ نےدوطرفہ تعلقات بڑھانےکااعلان کیا ہے۔

یہ تجارتی مذاکرات اس سال موسم سرما کے آغاز میں ہوں گے جن میں زراعت، ڈیجیٹل تجارتی امور، مارکیٹ ریگولیشن اور تجارتی راہ میں حائل موانع کو دور کرنے جیسے امور پر مذاکرات ہوں گے۔ ان مذاکرات کا اعلان امریکی تجارتی نمائندے کیتھرین تائی نے کیا ہے۔

اگرچہ یہ مذاکرات جون میں ہونے تھے لیکن اب باضابطہ طور پر موسم سرما کے آغاز میں ان مذاکرات کے منعقد ہونے کا اعلان کیا گیا ہے۔

یہ خبر نینسی پلوسی کے ااُس دورۂ تائیوان کے دو ہفتے بعد آئی ہے جو گزشتہ پچیس سالوں میں کسی اعلی امریکی عہدیدار کا پہلا دورۂ تائیوان سمجھا جاتا ہے۔ چین نے اس دورے کو کشیدگی کو ہوا دینے کا معاملہ قرار دیا تھا اور تائیوان کے نزدیک ایک بڑی فوجی مشق سے تائیوان اور امریکہ کو اپنی ناراضگی کا پیغام دیا تھا۔

دوسری طرف چین نے بھی خطے میں امریکی بالادستی کا مقابلہ کرنے کے لیے جنگی بنیادوں پر حکمت عملی شروع کردی ہے اور امید کی جارہی ہے کہ بہت جلد چین جنوبی چین کے سمندروں میں بہت بڑے پیمانے پر فوجی مشقیں شروع کردے گا اور امریکہ کو باز رہنے کا ایک واضح پیغام دے گا